Aftab- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | آفتاب

Aftab- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | آفتاب

آفتاب

Aftab

اے آفتاب! روح و روان جہاں ہے تو
شيرازہ بند دفتر کون و مکاں ہے تو

Ae Aftab! Rooh-o-Rawan-e-Jahan Hai Tu
Shiraza Band-e-Daftar-e-Kaun-o-Makan Hai Tu

 

باعث ہے تو وجود و عدم کی نمود کا
ہے سبز تيرے دم سے چمن ہست و بود کا

Baees Hai Tu Wujood-o-Adam Ki Namood Ka
Hai Sabz Tere Dam Se Chaman Hast-o-Bood Ka

 

قائم يہ عنصروں کا تماشا تجھی سے ہے
ہر شے ميں زندگی کا تقاضا تجھی سے ہے

Qaeem Ye Unsaron Ka Tamasha Tujhi Se Hai
Har Shay Mein Zindagi Ka Taqaza Tujhi Se Hai

 

ہر شے کو تيری جلوہ گری سے ثبات ہے
تيرا يہ سوز و ساز سراپا حيات ہے

Har Shay Ko Teri Jalwagari Se Sabat Hai
Tera Ye Souz-o-Saaz Sarapa Hayat Hai

 

وہ آفتاب جس سے زمانے ميں نور ہے
دل ہے ، خرد ہے ، روح رواں ہے ، شعور ہے

Woh Aftab Jis Se Zamane Mein Noor Hai
Dil Hai, Khird Hai, Rooh-e-Rawan Hai, Shaur Hai

 

اے آفتاب ، ہم کو ضيائے شعور دے
چشم خرد کو اپنی تجلی سے نور دے

Ae Aftab! Hum Ko Zia-e-Shaur De
Chashm-e-Khird Ko Apni Tajalli Se Noor De

 

ہے محفل وجود کا ساماں طراز تو
يزدان ساکنان نشيب و فراز تو

Hai Mehfil-e-Wujood Ka Saman Taraz Tu
Yazdan-e-Sakinan-e-Nashaib-o-Faraz Tu

 

تيرا کمال ہستی ہر جاندار ميں
تيری نمود سلسلہ کوہسار ميں

Tera Kamal Hasti-e-Har Jandar Mein
Teri Namood Silsila-e-Kohsar Mein

 

ہر چيز کی حيات کا پروردگار تو
زائيدگان نور کا ہے تاجدار تو
Har Cheez Ki Hayat Ka Parwardigar Tu
Zaeedgan-e-Noor Ka Hai Tajdar Tu

 

نے ابتدا کوئی نہ کوئی انتہا تری
آزاد قيد اول و آخر ضيا تری

Ne Ibtida Koi Na Koi Intiha Teri
Azad-e-Qaid-e-Awwal-o-Akhir Zia Teri

 

Aftab- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | آفتاب

Sadaye Dard- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry |صدائے درد

Aqal-o-Dil- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry |عقل و دل

2 thoughts on “Aftab- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | آفتاب

  1. Pingback: bk8

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *