Ashiq-e-Harjai- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | عاشق ہرجائی

عاشق ہرجائی

Ashiq-e-Harjai

 

حصہ اول

ہے عجب مجموعۂ اضداد اے اقبال تو
رونق ہنگامۂ محفل بھی ہے، تنہا بھی ہے

Hai Ajab Majmooa-e-Azdad Ae Iqbal To
Ronaq-e-Hangama Mehfil Bhi Hai, Tanha Bhi Hai

 

تيرے ہنگاموں سے اے ديوانہ رنگيں نوا!
زينت گلشن بھی ہے ، آرائش صحرا بھی ہے

Tere Hangamon Se Ae Diwana-e-Rangeen Nawa!
Zeenat-e-Gulshan Bhi Hai, Araish-e-Sehra Bhi Hai

 

ہم نشيں تاروں کا ہے تو رفعت پرواز سے
اے زميں فرسا ، قدم تيرا فلک پيما بھی ہے

Hum Nasheen Taron Ka Hai Tu Riffat-e-Parwaz Se
Ae Zameen Farsa, Qadam Tera Falak Pema Bhi Hai

 

عين شغل ميں پيشانی ہے تيری سجدہ ريز
کچھ ترے مسلک ميں رنگ مشرب مينا بھی ہے

Ayn Shugal-e-Mai Mein Preshani Teri Sajda Raiz
Kuch Tere Maslik Mein Rang-e-Mashrab-e-Meena Bhi Hai

 

مثل بوئے گل لباس رنگ سے عرياں ہے تو
ہے تو حکمت آفريں ، ليکن تجھے سودا بھی ہے

Misl-e-Boo-e-Gul Libas-e-Rang Se Uryan Hai Tu
Hai Tu Hikmat Afreen, Lekin Tujhe Soda Bhi Hai

 

جانب منزل رواں بے نقش پا مانند موج
اور پھر افتادہ مثل ساحل دريا بھی ہے

Janib-e-Manzil Rawan Be-Naqsh-e-Pa Manind-e-Mouj
Aur Phir Uftada Misl-e-Sahil-e-Darya Bhi Hai

 

حسن نسوانی ہے بجلی تيری فطرت کے ليے
پھر عجب يہ ہے کہ تيرا عشق بے پروا بھی ہے

Husn-e-Niswani Hai Bijli Teri Fitrat Ke Liye
Phir Ajab Ye Hai Ke Tera Ishq Be Parwa Bhi Hai

 

تيری ہستی کا ہے آئين تفنن پر مدار
تو کبھی ايک آستانے پر جبيں فرسا بھی ہے

Teri Hasti Ka Hai Aaeen-e-Taffanan Par Madar
Tu Kabhi Aik Astane Par Jabeen Farsa Bhi Hai

 

ہے حسينوں ميں وفا نا آشنا تيرا خطاب
اے تلون کيش! تو مشہور بھی ، رسوا بھی ہے

Hai Haseenon Mein Wafa Na-Ashna Tera Khitab
Ae Talawwun Kaesh! Tu Mashoor  Bhi, Ruswa Bhi Hai

 

لے کے آيا ہے جہاں ميں عادت سيماب تو
تيری بے تابی کے صدقے، ہے عجب بے تاب تو

Le Ke Aya Hai Jahan Mein Adat-e-Seemab Tu
Teri Betaabi Ke Sadqe, Hai Ajab Betaab Tu

 

 

حصہ دوم


عشق کی آشفتگی نے کر ديا صحرا جسے
مشت خاک ايسی نہاں زير قبا رکھتا ہوں ميں

Ishq Ki Ashuftagi  Ne Kar Diya Sehra Jise
Musht-e-Khak Aesi Nahan Zair-e-Qaba Rakhta Hun Main

 

ہيں ہزاروں اس کے پہلو ، رنگ ہر پہلو کا اور
سينے ميں ہيرا کوئی ترشا ہوا رکھتا ہوں ميں

Hain Hazaron Iss Ke Pehlu, Rang Har Pehlu Ka Aur
Seene Mein Heera Koi Tarsha Huwa Rakhta Hun Main

 

دل نہيں شاعر کا ، ہے کيفيتوں کی رستخيز
کيا خبر تجھ کو درون سينہ کيا رکھتا ہوں ميں

Dil Nahin Shayar Ka, Hai Kaifiyat Ki Rastkhair
Kya Khabar Tujh Ko, Durun-e-Seena Kya Rakhta Hun Main

 

آرزو ہر کيفيت ميں اک نئے جلوے کی ہے
مضطرب ہوں ، دل سکوں نا آشنا رکھتا ہوں ميں

Arzoo Har Kafiat Mein Ek Naye Jalwe Ke Hai
Muztarib Hun, Dil Sukoon Na-Ashna Rakhta Hun Main

 

گو حسين تازہ ہے ہر لحظہ مقصود نظر
حسن سے مضبوط پيمان وفا رکھتا ہوں ميں

Go Haseen-e-Taza Hai Har Lehza Maqsood-e-Nazar
Husn Se Mazboot Peman-e-Wafa Rakhta Hun Main

 

بے نيازی سے ہے پيدا ميری فطرت کا نياز
سوز و ساز جستجو مثل صبا رکھتا ہوں ميں

Be-Niazi Se Hai Paida Meri Fitrat Ka Niaz
Souz-o-Saaz-e-Justujoo Misl-e-Saba Rakhta Hun Main

 

موجب تسکيں تماشائے شرار جستہ اے
ہو نہيں سکتا کہ دل برق آشنا رکھتا ہوں ميں

Mujab-e-Taskeen Tamashaye Sharar-e-Jasta Ae
Ho Nahin Sakta Ke Dil Barq Ashna Rakhta Hun Main

 

ہر تقاضا عشق کی فطرت کا ہو جس سے خموش
آہ! وہ کامل تجلی مدعا رکھتا ہوں ميں

Har Taqaza Ishq Ki Fitrat Ka Ho Jis Se Khamosh
Aah! Woh Kamil Tajalli Mudda Rakhta Hun Main

 

جستجو کل کی ليے پھرتی ہے اجزا ميں مجھے
حسن بے پاياں ہے ، درد لادوا رکھتا ہوں ميں

Justujoo Kul Ki Liye Phirti Hai Ajza Mein Mujhe
Husn Be-Payan Hai, Dard-e-La-Dawa Rakhta Hun Main

 

زندگی الفت کی درد انجاميوں سے ہے مری
عشق کو آزاد دستور وفا رکھتا ہوں ميں

Zindagi Ulfat Ki Dard Anjamiyon Se Hai Meri
Ishq Ko Azad-e-Dastoor-e-Wafa Rakhta Hun Main

 

سچ اگر پوچھے تو افلاس تخيل ہے وفا
دل ميں ہر دم اک نيا محشر بپا رکھتا ہوں ميں

Such Agar Puche To Aflas-e-Takhiyul Hai Wafa
Dil Mein Har Dam Ek Naya Mehshar Bipa Rakhta Hun Main

 

فيض ساقی شبنم آسا ، ظرف دل دريا طلب
تشنۂ دائم ہوں آتش زير پا رکھتا ہوں ميں

Faiz-e-Saqi Shabnam Aasa, Zarf-e-Dil Darya Talab
Tashna-e-Dayem Hun Atish Zair-e-Pa Rakhta Hun Main

 

مجھ کو پيدا کر کے اپنا نکتہ چيں پيدا کيا
نقش ہوں ، اپنے مصور سے گلا رکھتا ہوں ميں

Mujh Ko Paida Kar Ke Apna Nukta-Cheen Paida Kiya
Naqsh Hun, Apne Musawwar Se Gila Rakhta Hun Main

 

محفل ہستی ميں جب ايسا تنک جلوہ تھا حسن
پھر تخيل کس ليے لا انتہا رکھتا ہوں ميں

Mehfil-e-Hasti Mein Jab Aesa Tunk Jalwa Tha Husn
Phir Takhiyyul Kis Liye La-Intiha Rakhta Hun Main

 

در بيابان طلب پيوستہ می کوشيم ما
موج بحريم و شکست خويش بر دوشيم ما
 

Dar Byanban-e-Talab Pewasta Mee Kosheeyam Ma
Mouj-e-Beheriyam-o-Shikast-e-Khowesh Bar Dosheyam Ma

 

 

Sulaima- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | سليمی

Wisal- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | وصال

Chand Aur Tare- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | چاند اور تارے

One thought on “Ashiq-e-Harjai- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | عاشق ہرجائی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *