Bacha Aur Shama- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | بچہ اور شمع

Bacha Aur Shama- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | بچہ اور شمع

بچہ اور شمع

Bacha Aur Shama


کيسی حيرانی ہے يہ اے طفلک پروانہ خو

شمع کے شعلوں کو گھڑيوں ديکھتا رہتا ہے تو

Kaisi Hairani Hai Ye Ae Tiflak-e-Parwana Khu!
Shama Ke Shaolon Ko Ghariyon Dekhta Rehta Hai Tu

 

يہ مری آغوش ميں بيٹھے ہوئے جنبش ہے کيا
روشنی سے کيا بغل گيری ہے تيرا مدعا

Ye Meri Aghosh Mein Baithe Huwe Junbish Hai Kya
Roshni Se Kya Baghal Geeri Hai Tera Mudda

 

اس نظارے سے ترا ننھا سا دل حيران ہے
يہ کسی ديکھی ہوئی شے کی مگر پہچان ہے

Iss Nazare Se Tera Nanha Sa Dil Heeran Hai
Ye Kisi Dekhi Huwi Shay Ki Magar Pehchan Hai

 

شمع اک شعلہ ہے ليکن تو سراپا نور ہے
آہ! اس محفل ميں يہ عرياں ہے تو مستور ہے

Shama Ek Shaola Hai Lekin Tu Sarapa Noor Hai
Ah! Iss Mehfil Mein Ye Uryan Hai Tu Mastoor Hai

 

دست قدرت نے اسے کيا جانے کيوں عرياں کيا!
تجھ کو خاک تيرہ کے فانوس ميں پنہاں کيا

Dast-e-Qudrat Ne Isse Kya Jane Kyun Uryan Kiya!
Tujh Ko Khak-e-Teera Ke Fanoos Mein Pinhan Kiya

 

نور تيرا چھپ گيا زير نقاب آگہی
ہے غبار ديدۂ بينا حجاب آگہی

Noor Tera Chup Gya Zair-e-Naqab-e-Aaghi
Hai Ghubar-e-Didah-e-Beena Hijab-e-Aaghi

 

زندگانی جس کو کہتے ہيں فراموشی ہے يہ
خواب ہے، غفلت ہے، سرمستی ہے، بے ہوشی ہے يہ

Zindagaani Jis Ko Kehte Hain Faramoshi Hai Ye
Khawab Hai, Ghaflat Hai, Sar Masti Hai, Behoshi Hai Ye

 

محفل قدرت ہے اک دريائے بے پايان حسن
آنکھ اگر ديکھے تو ہر قطرے ميں ہے طوفان حسن

Mehfil-e-Qudrat Hai Ek Darye Be-Payan-e-Husn
Ankh Agar Dekhe To Har Qatre Mein Hai Toofan-e-Husn

 

حسن ، کوہستاں کی ہيبت ناک خاموشی ميں ہے
مہر کی ضوگستری، شب کی سيہ پوشی ميں ہے

Husn, Kohistan Ki Haibatnaak Khamoshi  Mein Hai
Mehr Ki Zou Gastri, Shab Ji Siyah Poshi Mein Hai

 

آسمان صبح کی آئينہ پوشی ميں ہے يہ
شام کی ظلمت، شفق کی گل فرو شی ميں ہے يہ

Asman-e-Subah Ki Aaeena Poshi Mein Hai Ye
Sham Ki Zulmat, Shafaq Ki Gul Faroshi Mein Hai Ye

 

عظمت ديرينہ کے مٹتے ہوئے آثار ميں
طفلک ناآشنا کی کوشش گفتار ميں

Azmat-e-Dairina Ke Mitte Huwe Asaar Mein
Tiflak-e-Na Ashna Ki Koshish-e-Guftar Mein

 

ساکنان صحن گلشن کی ہم آوازی ميں ہے
ننھے ننھے طائروں کی آشياں سازی ميں ہے

Sakinan-e-Sehan-e-Gulshan Ki Hum Awazi Mein Hai
Nanhe Nanhe Taeeron Ki Ashiyan Saazi Mein Hai

 

چشمہ کہسار ميں ، دريا کی آزادی ميں حسن
شہر ميں، صحرا ميں، ويرانے ميں، آبادی ميں حسن

Chashma-e-Kuhsar Mein, Darya Ki Azadi Mein Husn
Shehr Mein, Sehra Mein, Weerane Mein, Abadi Mein Husn

 

روح کو ليکن کسی گم گشتہ شے کی ہے ہوس
ورنہ اس صحرا ميں کيوں نالاں ہے يہ مثل جرس

Rooh Ko Lekin Kisi Gum Gashta Shay Ki Hai Hawas
Warna Iss Sehra Mein Kyun Nalan Hai Ye Misl-e-Jaras

 

حسن کے اس عام جلوے ميں بھی يہ بے تاب ہے
زندگی اس کی مثال ماہی بے آب ہے

Husn Ke Iss Aam Jalwe Mein Bhiye Betaab Hai
Zindagi Iss Ki Misal-e-Maahi-e-Be Aab Hai

 

 

Aik Parinda Aur Jugnoo- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | ايک پرندہ اور جگنو

Abar – Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | ابر

Dagh – Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | داغ

One thought on “Bacha Aur Shama- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | بچہ اور شمع

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *