Chand- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | چاند

Chand- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | چاند

چاند

Chand

ميرے ويرانے سے کوسوں دور ہے تيرا وطن
ہے مگر دريائے دل تيری کشش سے موجزن

Mere Weerane Se Kouson Door  Hai Tera Watan
Hai Magar Darya’ay Dil Teri Kashish Se Moujzan

 

قصد کس محفل کا ہے آتا ہے کس محفل سے تو
زرد رو شايد ہوا رنج رہ منزل سے تو

Qasad Kis Mehfil Ka Hai Hai Ata Hai Kis Mehfil Se Tu
Zard Ru Shayad Huwa Ranj-e-Reh-e-Manzil Se Tu

 

آفرینش ميں سراپا نور ، ظلمت ہوں ميں
اس سيہ روزی پہ ليکن تيرا ہم قسمت ہوں ميں

Afreenish Mein Sarapa Noor Tu, Zulmat Hun Main
Iss Seh Rozi Pe Lekin Tera Hum Qismat Hun Main

 

آہ ، ميں جلتا ہوں سوز اشتياق ديد سے
تو سراپا سوز داغ منت خورشيد سے

Ah, Main Jalta Hun Souz-e-Ishtiaq-e-Deed Se
Tu Sarapa Souz Dagh-e-Minnat-e-Khursheed Se

 

ايک حلقے پر اگر قائم تری رفتار ہے
ميری گردش بھی مثال گردش پرکار ہے

Aik Halqe Par Agar Qaeem Teri Rafter Hai
Meri Gardish Bhi Misal-e-Gardish-e-Parkaar Hai

 

زندگی کی رہ ميں سرگرداں ہے تو، حيراں ہوں ميں
تو فروزاں محفل ہستی ميں ہے ، سوزاں ہوں ميں

Zindagi Ki Rah Mein Sargardan Hai Tu, Heeran Hun Main
Tu Farozan Mehfil-e-Hasti Mein Hai, Souzan Hun Main

 

ميں رہ منزل ميں ہوں، تو بھی رہ منزل ميں ہے
تيری محفل ميں جو خاموشی ہے ، ميرے دل ميں ہے

Main Rah-e-Manzil Mein Hun, Tu Bhi Rah-e-Manzil Mein Hai
Teri Mehfil Mein Jo Khamoshi Hai, Mere Dil Mein Hai

 

تو طلب خو ہے تو ميرا بھی يہی دستور ہے
چاندنی ہے نور تيرا، عشق ميرا نور ہے

Tu Talab Khu Hai To Mera Bhi Yehi Dastoor Hai
Chandani Hai Noor Tera, Ishq Mera Noor Hai

 

انجمن ہے ايک ميری بھی جہاں رہتا ہوں ميں
بزم ميں اپنی اگر يکتا ہے تو، تنہا ہوں ميں

Anjuman Hai Aik Meri Bhi Jahan Rehta Hun Main
Bazm Mein Apni Agar Yakta Hai Tu, Tanha Hun Main

 

مہر کا پرتو ترے حق ميں ہے پيغام اجل
محو کر ديتا ہے مجھ کو جلوئہ حسن ازل

Mehr Ka Partou Tere Haq Mein Hai Pegham-e-Ajal
Mehv Kar Deta Hai Mujh Ko Jalwa-e-Husn-e-Azal

 

پھر بھی اے ماہ مبيں! ميں اور ہوں تو اور ہے
درد جس پہلو ميں اٹھتا ہو وہ پہلو اور ہے

Phir Bhi Ae Mah-e-Mubeen! Main Aur Hun Tu Aur Hai
Dard Jis Pehlu Mein Uthta Ho, Woh Pehlu Aur Hai

 

گرچہ ميں ظلمت سراپا ہوں، سراپا نور تو
سينکڑوں منزل ہے ذوق آگہی سے دور تو

Garcha Main Zulmat Sarapa Hun, Sarapa Noor Tu
Saikron Manzil Hai Zauq-e-Aghi Se Door Tu

 

جو مری ہستی کا مقصد ہے ، مجھے معلوم ہے
يہ چمک وہ ہے، جبيں جس سے تری محروم ہے

Jo Meri Hasti Ka Maqsad Hai, Mujhe Maloom Hai
Ye Chamak Woh Hai,Jabeen Jis Se Teri Mehroom Hai

 

Nala-e-Firaq- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | نالہ فراق

Tasveer-e-Dard- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | تصوير درد

Tifl e Sheer Khawar- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | طفل شير خوار

2 thoughts on “Chand- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | چاند

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *