Dard-e-Ishq- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | درد عشق

Dard-e-Ishq- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | درد عشق

درد عشق

Dard-e-Ishq

 

اے درد عشق! ہے گہر آب دار تو
نا محرموں ميں ديکھ نہ ہو آشکار تو

Ae Dard-e-Ishq! Hai Guhr-e-Abdar Tu
Na-Mehramon Mein Dekh Na Ho Ashkara Tu!

 

پنہاں تہِ نقاب تری جلوہ گاہ ہے
ظاہر پرست محفل نو کی نگاہ ہے

Pinhan Teh-e-Niqab Teri Jalwagah Hai
Zahir Parast Mehfil-e-Nau Ki Nigah Hai

 

آئی نئی ہوا چمن ہست و بود ميں
اے درد عشق! اب نہيں لذت نمود ميں

Ayi Nayi Hawa Chaman-e-Hast-o-Bood Mein
Ae Dard-e-Ishq! Ab Nahin Lazzat Namood Mein

 

ہاں خود نمائيوں کی تجھے جستجو نہ ہو
منت پذير نالہء بلبل کا تو نہ ہو!

Haan, Khud Numaeeyon Ki Tujhe Justujoo Na Ho
Minnat Pazeer Nala-e-Bulbul Ka Tu Na Ho!

 

خالی شراب عشق سے لالے کا جام ہو
پانی کی بوند گريہء شبنم کا نام ہو

Khali Sharab-e-Ishq Se Lale Ka Jam Ho
Pani Ki Boond Girya-e-Shabnam Ka Naam Ho

 

پنہاں درون سينہ کہيں راز ہو ترا
اشک جگر گداز نہ غماز ہو ترا

Pinhan Duroon-e-Sina Kahin Raaz Ho Tera
Ashak-e-Jigar Gudaz Na Ghammaz Ho Tera

 

گويا زبان شاعر رنگيں بياں نہ ہو
آواز نے ميں شکوہ فرقت نہاں نہ ہو

Goya Zuban-e-Shayar-e-Rangeen Byan Na Ho
Awaz-e-Ne Mein Shikwa-e-Fursat Nihan Na Ho

 

يہ دور نکتہ چيں ہے ، کہيں چھپ کے بيٹھ رہ
جس دل ميں تو مکيں ہے، وہيں چھپ کے بيٹھ رہ

Ye Dour Nukta Cheen Hai, Kahin Chup Ke Baith Reh
Jis Dil Mein Tu Makeen Hai, Wahin Chup Ke Bath Reh

 

غافل ہے تجھ سے حيرت علم آفريدہ ديکھ!
جويا نہيں تری نگہ نارسيدہ ديکھ

Ghafil Hai Tujh Se Hairat-e-Ilm Afrida Dekh!
Joya Nahin Teri Nigah-e-Na Raseeda Dekh

 

رہنے دے جستجو ميں خيال بلند کو
حيرت ميں چھوڑ ديدہء حکمت پسند کو

Rehne De Justujoo Mein Khiyal-e-Buland Ko
Hairat Mein Chor Deedah-e-Hikmat Pasand Ko

 

جس کی بہار تو ہو يہ ايسا چمن نہيں
قابل تری نمود کے يہ انجمن نہيں

Jis Ki Bahar Tu Ho Ye Aesa Chaman Nahin
Qabil Teri Namood Ke Ye Anjuman Nahin

 

يہ انجمن ہے کشتۂ  نظارۂ  مجاز
مقصد تری نگاہ کا خلوت سرائے راز

Ye Anjuman Hai Kushta-e-Nazara-e-Majaz
Maqsad Teri Nigah Ka Khalwat Saraye Raaz

 

ہر دل مے خيال کی مستی سے چور ہے
کچھ اور آجکل کے کليموں کا طور ہے

Har Dil Mai-e-Khiyal Ki Masti Se Choor Hai
Kuch Aur Aaj Kal Ke Kaleemon Ka Toor Hai

 

Aftab-e-Subah- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | آفتاب صبح

Aik Arzoo- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | ايک آرزو

Shama- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | شمع

One thought on “Dard-e-Ishq- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | درد عشق

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *