Goristan-e-Shahi- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | گورستان شاہی

Goristan-e-Shahi- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | گورستان شاہی

گورستان شاہی

Goristan-e-Shahi

 

 

آسماں ، بادل کا پہنے خرقۂ ديرينہ ہے
کچھ مکدر سا جبين ماہ کا آئينہ ہے

Asman, Badal Ka Pehne Kharqa-e-Dairina Hai
Kuch Mukddar Sa Jabeen-e-Mah Ka Aaeena Hai

 

چاندنی پھيکی ہے اس نظارۂ خاموش ميں
صبح صادق سو رہی ہے رات کی آغوش ميں

Chandni Pheeki Hai Iss Nazara-e-Khamosh Mein
Subah-e-Sadiq So Rahi Hai Raat Ki Aghosh Mein

 

کس قدر اشجار کی حيرت فزا ہے خامشی
بربط قدرت کی دھيمی سی نوا ہے خامشی

Kis Qadar Ashjaar Ki Hairat Faza Hai Khamashi
Barbat-e-Qudrat Ki Dheemi Si Nawa Hai Khamashi

 

باطن ہر ذرۂ عالم سراپا درد ہے
اور خاموشی لب ہستی پہ آہ سرد ہے

Batin-e-Har Zarra-e-Alam Sarapa Dard Hai
Aur Khamoshi Lab-e-Hasti Pe Aah-e-Sard Hai

 

آہ! جولاں گاہ عالم گير يعنی وہ حصار
دوش پر اپنے اٹھائے سيکڑوں صديوں کا بار

Aah! Joulan-Gah Alamgeer Yani Woh Hisar
Dosh Par Apne Uthaye Saikron Sadiyon Ka Bar

 

زندگی سے تھا کبھی معمور ، اب سنسان ہے
يہ خموشی اس کے ہنگاموں کا گورستاں ہے

Zindagi Se Tha Kabhi Maamoor, Ab Sunsaan Hai
Ye Khamoshi Iss Ke Hangamon Ka Goristan Hai

 

اپنے سکان کہن کی خاک کا دلدادہ ہے
کوہ کے سر پر مثال پاسباں استادہ ہے

Apne Sukkaan-e-Kuhan Ki Khak Ka Dildah Hai
Koh Ke Sar Par Missal-e-Pasban Istada Hai

 

ابر کے روزن سے وہ بالائے بام آسماں
ناظر عالم ہے نجم سبز فام آسماں

Abar Ke Rozan Se Woh Balaye Baam-e-Asman
Naazar-e-Alam Hai Najam-e-Sabz Faam-e-Asman

 

خاک بازی وسعت دنيا کا ہے منظر اسے
داستاں ناکامی انساں کی ہے ازبر اسے

Khak Bazi Wussat-e-Dunya Ka Hai Manzar Isse
Dastan Nakami-e-Insan Ki Hai Azbar Isse

 

ہے ازل سے يہ مسافر سوئے منزل جا رہا
آسماں سے انقلابوں کا تماشا ديکھتا

Hai Azal Se Ye Musafir Sooye Manzil Ja Raha
Asman Se Inqalabon Ka Tamasha Dekhta

 

گو سکوں ممکن نہيں عالم ميں اختر کے ليے
فاتحہ خوانی کو يہ ٹھہرا ہے دم بھر کے ليے

Go Sukoon Mumkin Nahin Alam Mein Akhtar Ke Liye
Fateha Khawani Ko Ye Thehra Hai Dam Bhar Ke Liye

 

رنگ و آب زندگی سے گل بدامن ہے زميں
سينکڑوں خوں گشتہ تہذيبوں کا مدفن ہے زميں

Rang-o-Aab-e-Zindagi Se Gul Ba-Daman Hai Zameen
Saikron Khoon Gashta Tehzeebon Ka Madfan Hai Zameen

 

خواب گہ شاہوں کی ہے يہ منزل حسرت فزا
ديدۂ عبرت! خراج اشک گلگوں کر ادا

Khawab Gah Shahon Ki Hai Ye Manzil-e-Hasrat Fiza
Dida-e-Ibrat! Kharaaj-e-Ashak-e-Gulgoon Kar Ada

 

ہے تو گورستاں مگر يہ خاک گردوں پايہ ہے
آہ! اک برگشتہ قسمت قوم کا سرمايہ ہے

Hai Tu Goristan Magar Ye Khak Gardoon Paya Hai
Aah! Ek Bargashta Qismat Qoum Ka Sarmaya Hai

 

مقبروں کی شان حيرت آفريں ہے اس قدر
جنبش مژگاں سے ہے چشم تماشا کو حذر

Maqbaron Ki Shan Hairat Afreen Hai Iss Qadr
Junbish-e-Mazgan Se Hai Chashm-e-Tamasha Ko Hazr

 

کيفيت ايسی ہے ناکامی کی اس تصوير ميں
جو اتر سکتی نہيں آئينۂ تحرير ميں

Kaifiat Aesi Hai Nakami Ki Iss Tasveer Mein
Jo Uter Sakti Nahin Aaeena-e-Tehreer Mein

 

سوتے ہيں خاموش ، آبادی کے ہنگاموں سے دور
مضطرب رکھتی تھی جن کو آرزوئے ناصبور

Sote Hain Khamosh, Abadi Ke Hangamon Se Door
Muztarib Rakhti Thi Jin Ko Arzu-e-Na-Saboor

 

قبر کی ظلمت ميں ہے ان آفتابوں کی چمک
جن کے دروازوں پہ رہتا تھا جبيں گستر فلک

 

Qabr Ki Zulmat Mein Hai Un Aftabon Ki Chamak
Jin Ke Darwazon Pe Rehta Tha Jabeen-Gastar Falak

 

کيا يہی ہے ان شہنشاہوں کی عظمت کا مآل
جن کی تدبير جہاں بانی سے ڈرتا تھا زوال

Kya Yehi Hai Un Shehenshahon Ki Azmat Ka Ma’al
Jin Ki Tadbeer-e-Jahan Bani Se Darta Tha Zawal

 

رعب فغفوری ہو دنيا ميں کہ شان قيصری
ٹل نہيں سکتی غنيم موت کی يورش کبھی

Roab-e-Faghfoori Ho Dunya Mein Ke Shan-e-Qaisari
Tal Nahin Sakti Ghaneem-e-Mout Ki Yorish Kabhi

 

بادشاہوں کی بھی کشت عمر کا حاصل ہے گور
جادہ عظمت کی گويا آخری منزل ہے گور

Badshahon Ki Bhi Kisht-e-Umar Ka Hasil Hai Gaur
Jadah-e-Azmat Ki Goya Akhri Manzil Hai Gaur

 

شورش بزم طرب کيا ، عود کی تقرير کيا
درد مندان جہاں کا نالۂ شب گير کيا

Sourish-e-Bazm-e-Tarab Kya, Uood Ki Taqdeer Kya
Dard Mandan-e-Jahan Ka Nala-e-Shabgeer Kya

 

عرصۂ پيکار ميں ہنگامۂ شمشير کيا
خون کو گرمانے والا نعرۂ تکبير کيا

Arsa-e-Paikar Mein Hangama-e-Shamsheer Kya
Khoon Ko Garmane Wala Nara-e-Takbeer Kya

 

اب کوئی آواز سوتوں کو جگا سکتی نہيں
سينہ ويراں ميں جان رفتہ آ سکتی نہيں

Ab Koi Awaz Soton Ko Jaga Sakti Nahin
Seena-e-Weeran Mein Jaan-e-Rafta Aa Sakti Nahin

 

روح ، مشت خاک ميں زحمت کش بيداد ہے
کوچہ گرد نے ہوا جس دم نفس ، فرياد ہے

Rooh, Musht-e-Khak Mein Zehmat Kash-e-Baidad Hai
Koocha Gard-e-Ne Huwa Jis Dam Nafas, Faryad Hai

 

زندگی انساں کی ہے مانند مرغ خوش نوا
شاخ پر بيٹھا ، کوئی دم چہچايا ، اڑ گيا

Zindagi Insan Ki Hai Manid-e-Murgh-e-Khush Nawa
Shakh Par Baitha, Koi Dam Chehchaya, Urh Gya

 

آہ! کيا آئے رياض دہر ميں ہم ، کيا گئے
زندگی کی شاخ سے پھوٹے ، کھلے ، مرجھا گئے

Aah! Kya Aye Riyaz-e-Dehr Mein Hum, Kya Gye!
Zindagi Ki Shakh Se Phoote, Khile, Murjha Gye

 

موت ہر شاہ و گدا کے خواب کی تعبير ہے
اس ستم گر کا ستم انصاف کی تصوير ہے

Mout Har Shah-o-Gada Ke Khawab Ki Tabeer Hai
Iss Sitam-Gar Ka Sitam Insaf Ki Tasveer Hai

 

سلسلہ ہستی کا ہے اک بحر نا پيدا کنار
اور اس دريائے بے پاياں کے موجيں ہيں مزار

Silsila Hasti Ka Hai Ek Behr-e-Na Paida Kinar
Aur Iss Darye Be Payan Ki Moujain Hain Mazar

 

اے ہوس! خوں رو کہ ہے يہ زندگی بے اعتبار
يہ شرارے کا تبسم ، يہ خس آتش سوار

Ae Hawas! Khoonro Ke Hai Ye Zindagi Be- Etibar
Ye Sharare Ka Tabassum, Ye Khs-e-Atish Sawar

 

چاند ، جو صورت گر ہستی کا اک اعجاز ہے
پہنے سيمابی قبا محو خرام ناز ہے

Chand, Jo Soorat Gar-e-Hasti Ka Ek Ejaz Hai
Pehnaye Seemabi Qaba Mehv-e-Kharaam-e-Naz Hai

 

چرخ بے انجم کی دہشت ناک وسعت ميں مگر
بے کسی اس کی کوئی ديکھے ذرا وقت سحر

Charkh-e-Be-Anjum Ki Dehshat-Naak Wussat Mein Magar
Bekasi Iss Ki Koi Dekhe Zara Waqt-e-Sehar

 

اک ذرا سا ابر کا ٹکڑا ہے ، جو مہتاب تھا
آخری آنسو ٹپک جانے ميں ہو جس کی فنا

Ek Zara Sa Abar Ka Tukra Hai, Jo Mehtab Tha
Akhri Ansu Tapak Jane Mein Hi Jis Ki Fana

 

زندگی اقوام کی بھی ہے يونہی بے اعتبار
رنگ ہائے رفتہ کی تصوير ہے ان کی بہار

Zindagi Aqwam Ki Bhi Hai Yunhi Be-Etibar
Ranghaye-e-Rafta Ki Tasveer Hai Un Ki Bahar

 

اس زياں خانے ميں کوئی ملت گردوں وقار
رہ نہيں سکتی ابد تک بار دوش روزگار

Iss Zayan Khane Mein Koi Millat-e-Gardoon Waqar
Reh Nahin Sakti Abad Tak Bar-e-Dosh-e-Rozgar

 

اس قدر قوموں کی بربادی سے ہے خوگر جہاں
ديکھتا بے اعتنائی سے ہے يہ منظر جہاں

Iss Qadar Qoumon Ki Barbadi Se Hai Khugar Jahan
Dekhta Be-Itnayi Se Hai Ye Manzar Jahan

 

ايک صورت پر نہيں رہتا کسی شے کو قرار
ذوق جدت سے ہے ترکيب مزاج روزگار

Aik Soorat Par Nahin Rehta Kisi Shay Ko Qarar
Zauq-e-Jiddat Se Hai Tarkeeb-e-Mazaj-e-Rozgar

 

ہے نگين دہر کي زينت ہميشہ نام نو
مادر گيتی رہی آبستن اقوام نو

Hai Nageen-e-Dehr Ki Zeenat Hamesha Naam-e-Nau
Madar-e-Geeti Rahi Aabastan-e-Aqwam-e-Nau

 

ہے ہزاروں قافلوں سے آشنا يہ رہ گزر
چشم کوہ نور نے ديکھے ہيں کتنے تاجور

Hai Hazaron Qaflon Se Ashna Ye Reh Guzr
Chashm-e-Koh-e-Noor Ne Dekhe Hain Kitne Tajwar

 

مصر و بابل مٹ گئے باقی نشاں تک بھی نہيں
دفتر ہستی ميں ان کی داستاں تک بھی نہيں

Misr-o-Babil Mit Gye, Baqi Nishan Tak Bhi Nahin
Daftar-e-Hasti Mein In Ki Dastan Takbhi Nahin

 

آ دبايا مہر ايراں کو اجل کی شام نے
عظمت يونان و روما لوٹ لی ايام نے

Adabaya Mehr-e-Iran Ko Ajal Ki Sham Ne
Azmat-e-Yunan-o-Ruma Loot Li Ayyam Ne

 

آہ! مسلم بھی زمانے سے يونہی رخصت ہوا
آسماں سے ابر آذاری اٹھا ، برسا ، گيا

Aah ! Muslim Bhi Zamane Se Yunhi Rukhsat Huwa
Asman Se Abar-e-Aazari Utha, Barsa, Gya

 

ہے رگ گل صبح کے اشکوں سے موتی کی لڑی
کوئی سورج کی کرن شبنم ميں ہے الجھی ہوئی

Hai Rag-e-Gul Subah Ke Ashakon Se Moti Ki Lari
Koi Suraj Ki Kiran Shabnam Mein Hai Uljhi Huwi

 

سينہ دريا شعاعوں کے ليے گہوارہ ہے
کس قدر پيارا لب جو مہر کا نظارہ ہے

Seena-e-Darya Shuaon Ke Liye Gehwara Hai
Kis Qadar Pyara Lab-e-Joo Mehr Ka Nazzara Hai

 

محو زينت ہے صنوبر ، جوئبار آئينہ ہے
غنچہ گل کے ليے باد بہار آئينہ ہے

Mehv-e-Zeenat Hai Sanobar, Juebar Aaeena Hai
Ghuncha-e-Gul Ke Liye Bad-e-Bahar Aaeena Hai

 

نعرہ زن رہتی ہے کوئل باغ کے کاشانے ميں
چشم انساں سے نہاں ، پتوں کے عزلت خانے ميں

Na’ara Zan Rehti Hai Koel Bagh Ke Kashane Mein
Chashm-e-Insan Se Nihan, Patton Ke Uzlat Khane Mein

 

اور بلبل ، مطرب رنگيں نوائے گلستاں
جس کے دم سے زندہ ہے گويا ہوائے گلستاں

Aur Bulbul, Mutrib Rangeen Nawaye Gulistan
Jis Ke Dam Se Zinda Hai Goya Hawaye Gulistan

 

عشق کے ہنگاموں کی اڑتی ہوئی تصوير ہے
خامہ قدرت کی کيسی شوخ يہ تحرير ہے

Ishq Ke Hangamon Ke Urti Huwi Tasveer Hai
Khama-e-Qudrat Ki Kaisi Shoukh Ye Tehreer Hai

 

باغ ميں خاموش جلسے گلستاں زادوں کے ہيں
وادی کہسار ميں نعرے شباں زادوں کے ہيں

Bagh Mein Khamosh Jalse Gulistan Zadon Ke Hain
Wadi-e-Kuhsar Mein Na’are Shaban Zadon Ke Hain

 

زندگی سے يہ پرانا خاک داں معمور ہے
موت ميں بھی زندگانی کی تڑپ مستور ہے

Zindagi Se Ye Purana Khakdan Maamoor Hai
Mout Mein Bhi Zindagaani Ki Tarap Mastoor Hai

 

پتےاں پھولوں کی گرتی ہيں خزاں ميں اس طرح
دست طفل خفتہ سے رنگيں کھلونے جس طرح

Patiyan Phoolon Ki Girti Hain Khazan Mein Iss Tarah
Dast-e-Tifl-e-Khufta Se Rangeen Khilone Jis Tarah

 

اس نشاط آباد ميں گو عيش بے اندازہ ہے
ايک غم ، يعنی غم ملت ہميشہ تازہ ہے

Iss  Nishat Abad Mein Go Aysh Be-Andaza Hai
Aik Gham, Yani Gham-e-Millat Hamesha Taza Hai

 

دل ہمارے ياد عہد رفتہ سے خالی نہيں
اپنے شاہوں کو يہ امت بھولنے والی نہيں

Dil Humare Yad-e-Ehd-e-Rafta Se Khali Nahin
Apne Shahon Ko Ye Ummat Bhoolne Wali Nahin

 

اشک باری کے بہانے ہيں يہ اجڑے بام و در
گريہ پيہم سے بينا ہے ہماری چشم تر

Ashak Bari Ke Bahane Hain Ye Ujre Baam-o-Dar
Girya-e-Peham Se Beena Hai Humari Chasm-e-Tar

 

دہر کو ديتے ہيں موتی ديدۂ گرياں کے ہم
آخری بادل ہيں اک گزرے ہوئے طوفاں کے ہم

Dehr Ko Dete Hain Moti Dida-e-Giryan Ke Hum
Akhri Badal Hain Ek Guzre Huwe Toofan Ke Hum

 

ہيں ابھی صد ہا گہر اس ابر کی آغوش ميں
برق ابھی باقی ہے اس کے سينۂ خاموش ميں

Hain Abhi Sad Ha Guhariss Abar Ki Aghosh Mein
Barq Abhi Baqi Hai Iss Ke Seena-e-Khamosh Mein

 

وادی گل ، خاک صحرا کو بنا سکتا ہے يہ
خواب سے اميد دہقاں کو جگا سکتا ہے يہ

Wadi-e-Gul, Khak-e-Sehra Ko Bana Sakta Hai Ye
Khawab Se Umeed-e-Dehqan Ko Jaga Sakta Hai Ye

 

ہو چکا گو قوم کی شان جلالی کا ظہور
ہے مگر باقی ابھی شان جمالی کا ظہو

Ho Chukka Go Qoum Ki Shan-e-Jalali Ka Zahoor
Hai Magar Baqi Abhi Shan-e-Jamali Ka Zahoor

2 thoughts on “Goristan-e-Shahi- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | گورستان شاہی

  1. Pingback: imp source

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *