Gurrah-e-Shawwal Ya Hilal-e-Eid- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | غرۂٔ شوال يا ہلال عيد

Gurrah-e-Shawwal Ya Hilal-e-Eid- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | غرۂٔ شوال يا ہلال عيد

غرۂٔ شوال يا ہلال عيد

Gurrah-e-Shawwal Ya Hilal-e-Eid

 

 

غرۂ شوال! اے نور نگاہ روزہ دار
آ کہ تھے تيرے ليے مسلم سراپا انتظار

Gurrah-e-Shawwal! Ae Noor-e-Nigah-e-Rozadar
Aa Ke The Tere Liye Muslim Sarapa Intizar

 

تيری پيشانی پہ تحرير پيام عيد ہے
شام تيری کيا ہے ، صبح عيش کی تميد ہے

Teri Peshani Pe Tehreer-e-Payam-e-Eid Hai
Sham Teri Kya Hai, Subah-e-Aysh Ki Tamheed Hai

 

سرگزشت ملت بيضا کا تو آئينہ ہے
اے مہ نو! ہم کو تجھ سے الفت ديرينہ ہے

Sargazasht-e-Millat-e-Baiza Ka Tu Aaeena Hai
Ae Mah-e-Nau! Hum Ko Tujh Se Ulfat-e-Dairina Hai

 

جس علم کے سائے ميں تيغ آزما ہوتے تھے ہم
دشمنوں کے خون سے رنگيں قبا ہوتے تھے ہم

Jis Ilm Ke Saye Mein Taigh Azma Hote The Hum
Dushmanon Ke Khoon Se Rangeen Qaba Hote The Hum

 

تيری قسمت ميں ہم آغوشی اسی رايت کی ہے
حسن روز افزوں سے تيرے آبرو ملت کی ہے

Teri Qismat Mein Hum Aghoshi Ussu Raayat Ki Hai
Husn-e-Roz Afzoon Se Tere Aabru Millat Ki Hai

 

آشنا پرور ہے قوم اپنی ، وفا آئيں ترا
ہے محبت خيز يہ پيراہن سيميں ترا

Ashana Parwar Hai Qoum Apni, Wafa Aaeen Tera
Hai Muhabbat Khaiz Ye Pairhan-e-Seemeen Tera

 

اوج گردوں سے ذرا دنيا کی بستی ديکھ لے
اپنی رفعت سے ہمارے گھر کی پستی ديکھ لے

Auj-e-Gurdoon Se Zara Dunya Ki Basti Dekh Le
Apni Riffat Se Humare Ghar Ki Pasti Dekh Le!

 

قافلے ديکھ اور ان کی برق رفتاری بھی ديکھ
رہر و درماندہ کی منزل سے بيزاری بھی ديکھ

Qafle Dekh Aur Un Ki Barq Raftari Bhi Dekh
Rahru-e-Darmandah Ki Manzil Se Bezari Bhi Dekh

 

ديکھ کر تجھ کو افق پر ہم لٹاتے تھے گہر
اے تہی ساغر! ہماری آج ناداری بھی ديکھ

Dekh Kar Tujh Ko Ufaq Par Hum Lutate The Guhar
Ae Tehi Saghar! Humari Aaj Nadari Bhi Dekh

 

فرقہ آرائی کی زنجيروں ميں ہيں مسلم اسير
اپنی آزادی بھی ديکھ ، ان کی گرفتاری بھی ديکھ

Firqa Aarayi Ki Zanjeeron Mein Hain Muslim Aseer
Apni Azadi Bhi Dekh, Un Ki Giraftari Bhi Dekh

 

ديکھ مسجد ميں شکست رشتہ تسبيح شيخ
بت کدے ميں برہمن کی پختہ زناری بھی ديکھ

Dekh Masjid Mein Shikast-e-Rishta-e-Tasbeeh-e-Sheikh
But Kade Mein Barhaman Ki Pukhta Zunnari Bhi Dekh

 

کافروں کی مسلم آئينی کا بھی نظارہ کر
اور اپنے مسلموں کی مسلم آزاری بھی ديکھ

Kafiron Ki Muslim Aaeeni Ka Bhi Nazara Kar
Aur Apne Muslamon Ki Muslim Aazari Bhi Dekh

 

بارش سنگ حوادث کا تماشائی بھی ہو
امت مرحوم کی آئينہ ديواری بھی ديکھ

Barish-e-Sang-e-Hawadis Ka Tamashayi Bhi Ho
Ummat-e-Marhoom Ki Aaeena Deewari Bhi Dekh

 

ہاں ، تملق پيشگی ديکھ آبرو والوں کی تو
اور جو بے آبرو تھے ، ان کی خود داری بھی ديکھ

Haan, Tamlluq Paishgi Dekh Aabru Walon Ki Tu
Aur Jo Be-Aabu The, Un Ki Khuddari Bhi Dekh

 

جس کو ہم نے آشنا لطف تکلم سے کيا
اس حريف بے زباں کی گرم گفتاری بھی ديکھ

Jis Ko Hum Ne Ashna Lutf-e-Takallum Se Kiya
Uss Hareef-e-Bezuban Ki Garm Guftari Bhi Dekh

 

ساز عشرت کی صدا مغرب کے ايوانوں ميں سن
اور ايراں ميں ذرا ماتم کی تياری بھی ديکھ

Saaz-e-Ishrat Ki Sada Magrib Ke Aewanon Mein Sun
Aur Iran Mein Zara Matam Ki Tayyari Bhi Dekh

 

چاک کر دی ترک ناداں نے خلافت کی قبا
سادگی مسلم کی ديکھ ، اوروں کی عياری بھی ديکھ

Chaak Kar Di Turk-e-Nadan Ne Khilafat Ki Qaba
Sadgi Muslim Ki Dekh, Auron Ki Ayyari Bhi Dekh

 

صورت آئينہ سب کچھ ديکھ اور خاموش رہ
شورش امروز ميں محو سرود دوش رہ

Soorat-e-Aaeena Sub Kuch Dekh Aur Khamosh Reh
Sourish-e-Amroz Mein Mehw-e-Surood-e-Dosh Reh

 

 

 

Khatab Ba Jawanan-e-Islam- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | خطاب بہ جوانان اسلام

8 thoughts on “Gurrah-e-Shawwal Ya Hilal-e-Eid- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | غرۂٔ شوال يا ہلال عيد

  1. Pingback: 789club

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *