Iltijaye Musafir- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | التجائے مسافر

Iltijaye Musafir- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | التجائے مسافر

التجائے مسافر

Iltijaye Musafir

فرشتے پڑھتے ہيں جس کو وہ نام ہے تيرا
بڑی جناب تری، فيض عام ہے تيرا

Farishte Parhte Hain Jis Ko Woh Naam Hai Tera
Bari Janab Teri, Faiz Aam Hai Tera

 

ستارے عشق کے تيری کشش سے ہيں قائم
نظام مہر کی صورت نظام ہے تيرا

Sitare Ishq Ke Teri Kashish Se Hain Qaeem
Nizam-e-Mehr Ki Soorat Hai Tera

 

تری لحد کی زيارت ہے زندگی دل کی
مسيح و خضر سے اونچا مقام ہے تيرا

Teri Lehad Ki Ziarat Hai Zindagi Dil Ki
Maseeh-o-Khizar Se Uncha Maqam Hai Tera

 

نہاں ہے تيری محبت ميں رنگ محبوبی
بڑی ہے شان، بڑا احترام ہے تيرا

Nihan Hai Teri Mohabbat Mein Rang-e-Mehboobi
Bari Hai Shaan, Ehtaraam Hai Tera

 

اگر سياہ دلم، داغ لالہ زار توام
و گر کشادہ جبينم، گل بہار توام

Agar Siyah Dalam, Dagh-e-Lala Zaar-e-Touwaam
Wagar Kushadah Jabeeneam, Gul-e-Bahar-e-Tawaam

 

چمن کو چھوڑ کے نکلا ہوں مثل نکہت گل
ہوا ہے صبر کا منظور امتحاں مجھ کو

Chaman Ko Chor Ke Nikla Hun Misl-e-Nukhat-e-Gul
Huwa Hai Sabr Ka Manzoor Imtihaan Mujh Ko

 

چلی ہے لے کے وطن کے نگار خانے سے
شراب علم کی لذت کشاں کشاں مجھ کو

Chali Hai Le Ke Watan Ke Nigar Khane Se
Sharaab-e-Ilm Ki Lazzat Kushan Kushan Mujh Ko

 

نظر ہے ابر کرم پر ، درخت صحرا ہوں
کيا خدا نے نہ محتاج باغباں مجھ کو

 Nazar Hai Abar-e-Karam Par, Darkht-e-Sehra Hun
Kiya Khuda Ne Mohtaj-e-Baghban Mujh Ko

 

فلک نشيں صفت مہر ہوں زمانے ميں
تری دعا سے عطا ہو وہ نردباں مجھ کو

Falak Nasheen Sift-e-Mehr Hun Zamane Mein
Teri Dua Se Atta Ho Woh Nardbaan Mujh Ko

 

مقام ہم سفروں سے ہوا اس قدر آگے
کہ سمجھے منزل مقصود کارواں مجھ کو

Maqam Hum Safron Se Ho Iss Qadar Agay
Ke Samajhe Manzil-e-Maqsood Karwaan Mujh Ko

 

مری زبان قلم سے کسی کا دل نہ دکھے
کسی سے شکوہ نہ ہو زير آسماں مجھ کو

Meri Zuban Se Kisi Ka Dil Na Dukhe
Kisi Se Shikwah Na Ho Zair-e-Asman Mujh Ko

 

دلوں کو چاک کرے مثل شانہ جس کا اثر
تری جناب سے ايسی ملے فغاں مجھ کو

Dilon Ko Chaak Kare Misl-e-Shana Jis Ka Asar
Teri Janab Se Aesi Mile Afghan Mujh Ko

 

بنايا تھا جسے چن چن کے خار و خس ميں نے
چمن ميں پھر نظر آئے وہ آشياں مجھ کو

Banaya Tha Jise Chun Chun Ke Khar-o-Khs Main Ne
Chaman Mein Phir Nazar Aye Woh Asiyan Mujh Ko

 

پھر آ رکھوں قدم مادر و پدر پہ جبيں
کيا جنھوں نے محبت کا رازداں مجھ کو

Phir Aa Rakhun Qadam-e-Madar-o-Pidar Pe Jabeen
Kiya Jinhon Ne Mohabbat Ka Raazdaan Mujh Ko

 

وہ شمع بارگہ خاندان مرتضوی
رہے گا مثل حرم جس کا آستاں مجھ کو

Woh Shama-e-Bargah-e-Khandan-e-Murtazvi
Rahe Ga Misl-e-Haram Jis Ka Astan Mujh Ko

 

نفس سے جس کے کھلی ميری آرزو کی کلی
بنايا جس کی مروت نے نکتہ داں مجھ کو

Nafas Se Jis Ke Khuli Meri Arzoo Ki Kali
Banaya Jis Ki Marawwat Ne Nuktadan Mujh Ko

 

دعا يہ کر کہ خداوند آسمان و زميں
کرے پھر اس کی زيارت سے شادماں مجھ کو

Dua Ye Kar Ke Khudawand-e-Asman-o-Zameen
Kare Phir Iss Ki Ziarat Se Shadman Mujh Ko

 

وہ ميرا يوسف ثانی وہ شمع محفل عشق
ہوئی ہے جس کی اخوت قرار جاں مجھ کو

Woh Mera Yousaf-e-Sani, Woh Shama-e-Mehfil-e-Ishq
Huwi Hai Jis Ki Akhuwat Qarar-e-Jaan Mujh Ko

 

جلا کے جس کی محبت نے دفتر من و تو
ہوائے عيش ميں پالا، کيا جواں مجھ کو

Jala Ke Jis Ki Mohabbat Ne Daftar-e-Man-o-Tu
Hawaye Aysh Mein Pala, Kiya Jawan Mujh Ko

 

رياض دہر ميں مانند گل رہے خنداں
کہ ہے عزيز تر از جاں وہ جان جاں مجھ کو

Riyaz-e-Dehr Mein Manind-e-Gul Rahe Khandan
Ke Hai Aziz Tar Az Jaan Woh Jaan-e-Jaan Mujh Ko

 

شگفتہ ہو کے کلی دل کی پھول ہو جائے
يہ التجائے مسافر قبول ہو جائے

Shugufta Ho Ke Kali Dil Ki Phool Ho Jaye
Ye Iltijaye Musafir Qabool Ho Jaye

 

Kinar-e-Ravi- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | کنار راوی

Bacha Aur Shama- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | بچہ اور شمع

Aik Parinda Aur Jugnoo- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | ايک پرند

One thought on “Iltijaye Musafir- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | التجائے مسافر

  1. Pingback: grote blote tieten

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *