Jalwa-e-Husn- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | جلوۂ حسن

Jalwa-e-Husn- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | جلوۂ حسن

جلوۂ حسن

Jalwa-e-Husn

 

جلوہ حسن کہ ہے جس سے تمنا بے تاب
پالتا ہے جسے آغوش تخيل ميں شباب

Jalwa-e-Husn Ke Hai Jis Se Tamanna Be-Taab
Palta Hai Jise Aghosh-e-Takhiyyul Mein Shabab


ابدی بنتا ہے يہ عالم فانی جس سے
ايک افسانہ رنگيں ہے جوانی جس سے

Abdi Banta Hai Ye Alam-e-Fani Jis Se
Aik Afsana-e-Rangeen Hai Jawani Jis Se


جو سکھاتا ہے ہميں سر بہ گريباں ہونا
منظر عالم حاضر سے گريزاں ہونا

Jo Sikhata Hai Humain Sar Ba Gireban Hona
Manzar-e-Alam-e-Hazir Se Gurezan Hona


دور ہو جاتی ہے ادراک کی خامی جس سے
عقل کرتی ہے تاثر کی غلامی جس سے

Door Ho Jati Hai Adraak Ki Khaami Jis Se
Aqal Karti Hai Taasar Ki Ghulami Jis Se


آہ! موجود بھی وہ حسن کہيں ہے کہ نہيں
خاتم دہر ميں يا رب وہ نگيں ہے کہ نہيں

 Aah! Moujood Bhi Woh Husn Kahin Hai Ke Nahin
Khatam-e-Dehr Mein Ya Rab Woh Nageen Hai Ke Nahin

 

 

Insan- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | انسان

Ishrat-e-Amroz- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | عشرت امروز

Nawa-e-Gham- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | نوائے غم

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *