Jawab-e-Khizar – Part 2- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry |  جواب خضر – حصہ دوم


جواب خضر – حصہ دوم


Jawab-e-Khizar – Part 2

صحرا نوردی

Sehra Nawardi

کيوں تعجب ہے مري صحرا نوردی پر تجھے
يہ تگا پوئے دمادم زندگی کی ہے دليل

Kyun Taajub Hai Meri Sehra Nawardi Par Tujhe
Ye Taga Pooye Dama Dam Zindagi Ki Hai Daleel

 

اے رہين خانہ تو نے وہ سماں ديکھا نہيں
گونجتی ہے جب فضائے دشت ميں بانگ رحيل

Ae Raheen-E-Khana Tu Ne Woh Saman Dekha Nahin
Goonjti Hai Jab Faza’ay  Dasht Mein Bang-E-Raheel

 

ريت کے ٹيلے پہ وہ آہو کا بے پروا خرام
وہ حضر بے برگ و ساماں، وہ سفر بے سنگ و ميل

Rait Ke Teele Pe Woh Aaho Ka Be Parwa Kharaam
Woh Hazar Be Barg-O-Saman, Woh Safar Be Sang-O-Meel

 

وہ نمود اختر سيماب پا ہنگام صبح
يا نماياں بام گردوں سے جبين جبرئيل

Woh Namood-E-Akhtar-E-Simab Pa Hangam-E-Subah
Ya Numayan Baam-E-Gardoon Se Jibeen-E-Jibraeel (A.S.)

 

وہ سکوت شام صحرا ميں غروب آفتاب
جس سے روشن تر ہوئی چشم جہاں بين خليل

Woh Sakoot-E-Sham-E-Sehra Mein Gharoob-E-Aftab
Jis Se Roshan Tar Huwi Chashm-E-Jahan Been-E-Khalil (A.S.)

 

اور وہ پانی کے چشمے پر مقام کارواں
اہل ايماں جس طرح جنت ميں گرد سلسبيل

Aur Woh Pani Ke Chashme Par Maqam-E-Karwan
Ahl-E-Aeeman  Jis Tarah Jannat Mein Gird-E-Salsabeel

 

تازہ ويرانے کی سودائے محبت کو تلاش
اور آبادی ميں تو زنجيری کشت و نخيل

Taza Weerane Ki Soda’ay Mohabbat Ko Talash
Aur  Abadi Mein Tu Zanjeeri Kisht-O-Nakheel

 

پختہ تر ہے گردش پہيم سے جام زندگی
ہے يہی اے بے خبر راز دوام زندگی

Pukhta Tar Hai Gardish-E-Peham Se Jaam-E-Zindagi
Hai Yehi Ae Be-Khabar Raaz-E-Dawam-E-Zindagi

زندگی

Zindagi

برتر از انديشۂ سود و زياں ہے زندگی
ہے کبھی جاں اور کبھی تسليم جاں ہے زندگی

Bartar Az Andesha’ay Sood-O-Ziyan Hai Zindagi
Hai Kabhi Jaan Aur Kabhi Tasleem-E-Jaan Hai Zindagi

 

تو اسے پيمانہ امروز و فردا سے نہ ناپ
جاوداں پيہم دواں، ہر دم جواں ہے زندگی

Tu Isse Pemana’ay Amroz-O-Farda Se Na Naap
Javidan, Peham Dawan, Har Dam Jawan Hai Zindagi

 

اپنی دنيا آپ پيدا کر اگر زندوں ميں ہے
سر آدم ہے، ضمير کن فکاں ہے زندگی

Apni Dunya Ap Paida Kar Agar Zindon Mein Hai
Sirr-E-Adam Hai, Zameer-E-Kun Fikan Hai Zindagi

 

زندگانی کی حقيقت کوہکن کے دل سے پوچھ
جوئے شير و تيشہ و سنگ گراں ہے زندگی

Zindagani Ki Haqiqat Kohkan Ke Dil Se Pooch
Jooye Sheer-O-Teesha-O-Sang-E-Garan Hai Zindagi

 

بندگی ميں گھٹ کے رہ جاتی ہے اک جوئے کم آب
اور آزادی ميں بحر بے کراں ہے زندگی

andagi Mein Ghat Ke Reh Jati Hai Ek Jooay Kam Aab
Aur Azadi Mein Beher-E-Bekaran Hai Zindagi

 

آشکارا ہے يہ اپنی قوت تسخير سے
گرچہ اک مٹی کے پيکر ميں نہاں ہے زندگی

Ashkara Hai Ye Apni Quwwat-E-Taskheer Se
Gharche Ek Mitti Ke Paikar Mein Nihan Hai Zindagi

 

قلزم ہستی سے تو ابھرا ہے مانند حباب
اس زياں خانے ميں تيرا امتحاں ہے زندگی

Qulzam-E-Hasti Se Tu Ubhra Hai Manind-E-Habab
Iss Ziyan Khane Mein Tera Imtihan Hai Zindagi

 

خام ہے جب تک تو ہے مٹی کا اک انبار تو
پختہ ہو جائے تو ہے شمشير بے زنہار تو

Kham Hai Jab Tak To Hai Mitti Ka Ek Anbar Tu
Pukhta Ho Jaye To Hai Shamsheer-E-Bezanhar Tu

 

ہو صداقت کے ليے جس دل ميں مرنے کی تڑپ
پہلے اپنے پيکر خاکی ميں جاں پيدا کرے

Ho Sadaqat Ke Liye Jis Dil Mein Marne Ki Tarap
Pehle Apne Paikar-E-Khaki Mein Jaan Paida Kare

 

پھونک ڈالے يہ زمين و آسمان مستعار
اور خاکستر سے آپ اپنا جہاں پيدا کرے

Phoonk Dale Ye Zameen-O-Asman-E-Mastaar
Aur Khakstar Se Ap Apna Jahan Paida Kare

 

زندگی کی قوت پنہاں کو کر دے آشکار
تا يہ چنگاری فروغ جاوداں پيدا کرے

Zindagi Ki Quwwat-E-Pinhan Ko Kar De Ashakar
Ta Ye Chingari Furogh-E-Javidan Paida Kare

 

خاک مشرق پر چمک جائے مثال آفتاب
تا بدخشاں پھر وہی لعل گراں پيدا کرے

Khak-E-Mashriq Par Chamak Jaye Misal-E-Aftab
Ta Badkhishan Phir Wohi Laal-E-Giran Paida Kare

 

سوئے گردوں نالہ شب گير کا بھيجے سفير
رات کے تارں ميں اپنے رازداں پيدا کرے

Suay Gardoon Nala-E-Shabgeer Ka Bheje Safeer
Raat Ke Taron Mein Apne Raazdan Paida Kare

 

يہ گھڑی محشر کی ہے ، تو عرصۂ محشر ميں ہے
پيش کر غافل ، عمل کوئی اگر دفتر ميں ہے

Ye Ghari Mehshar Ki Hai, Tu Arsa’ay Mehshar Mein Hai
Paish Kar Ghafil, Amal Koi Agar Daftar Mein Hai 

سلطنت

Saltanat

آبتائوں تجھ کو رمز آيۂ ان الملوک
سلطنت اقوام غالب کی ہے اک جادوگری

Aa Bataon Tujh Ko Ramz-E-Aaya-E-Innal Mulook
Saltanat Aqwam-E-Ghalib Ki Hai Ek Jadoogari

 

خواب سے بيدار ہوتا ہے ذرا محکوم اگر
پھر سلا ديتی ہے اس کو حکمراں کی ساحری

Khawab Se Baidar Hota Hai Zara Mehkoom Agar
Phir Sula Deti Hai Uss Ko Hukamran Ki Sahiri

 

جادوئے محمود کی تاثير سے چشم اياز
ديکھتی ہے حلقۂ گردن ميں ساز دلبری

Jadoo-E-Mehmood Ki Taseer Se Chashm-E-Ayaz
Dekhti Hai Halqa-E-Gardan Mein Saaz-E-Dilbari

 

خون اسرائيل آجاتا ہے آخر جوش ميں
توڑ ديتا ہے کوئی موسی طلسم سامری

Khoon-E-Israel Aa Jata Hai Akhir Josh Mein
Torh Deta Hai Koi Musa (A.S.) Tilism-E-Samri

 

سروری زيبا فقط اس ذات بے ہمتا کو ہے
حکمراں ہے اک وہی، باقی بتان آزری

Sarwari Zaiba Faqat Uss Zaat-E-Be Hamta Ko Hai
Hukamran Hai Ek Wohi, Baqi Bootan-E-Azri

 

از غلامی فطرت آزاد را رسوا مکن
تا تراشی خواجہ ے از برہمن کافر تری

Az Ghulami Fitrat-E-Azad Ra Ruswa Makun
Ta Tarashi Khawajah Ae Az Barhaman Kafir Teri

 

ہے وہی ساز کہن مغرب کا جمہوری نظام
جس کے پردوں ميں نہيں غير از نوائے قيصری

Hai Wohi Saaz-E-Kuhan Maghrib Ka Jamhoori Nazam
Jis Ke Pardon Mein Nahin Ghair Az Nawa’ay Qaisari

 

ديو استبداد جمہوری قبا ميں پاے کوب
تو سمجھتا ہے يہ آزادی کی ہے نيلم پری

Deo Istabdad Jamhoori Qba Mein Paye Koob
Tu Samjhta Hai Ye Azadi Ki Hai Neelam Pari

 

مجلس آئين و اصلاح و رعايات و حقوق
طب مغرب ميں مزے ميٹھے، اثر خواب آوری

Majlis-E-Aaeen-O-Islah-O-Ra’ayaat-O-Haqooq
Tib-E-Maghrib Mein Maze Mithe, Asar Khawab Awri

 

گرمی گفتار اعضائے مجالس، الاماں
يہ بھی اک سرمايہ داروں کی ہے جنگ زرگری

Garmi-E-Ghuftar-E-Aza’ay Majaalis, Al-Aman 
Ye Bhi Ek Sarmaya Daron Ki Hai Jang-E-Zargari

 

اس سراب رنگ و بو کو گلستاں سمجھا ہے تو
آہ اے ناداں! قفس کو آشياں سمجھا ہے تو

Iss Sarab-E-Rang-O-Bu Ko Gulistan Samjha Hai Tu
Aah Ae Nadad! Qafas Ko Ashiyan Samjha Hai Tu

سرمايہ ومحنت

Sarmaya-O-Mehnat


بندۂ مزدور کو جا کر مرا پيغام دے
خضر کا پيغام کيا، ہے يہ پيام کائنات

Banda’ay Mazdoor Ko Ja Kar Mera Pegham De
Khizar Ka Pegham Kya, Hai Ye Peyam-E-Kainat

 

اے کہ تجھ کو کھا گيا سرمايہ دار حيلہ گر
شاخ آہو پر رہی صديوں تلک تيری برات

Ae Ke Tujh Ko Kha Gya Sarmayadar-E-Heela Gar
Shakh-E-Aahu Par Rahi Sadiyon Talak Teri Barat

 

دست دولت آفريں کو مزد يوں ملتی رہی
اہل ثروت جيسے ديتے ہيں غريبوں کو زکات

Dast-E-Doulat Afreen Ko Muzd Yun Milti Rahi
Ehl-E-Sarwat Jaise Dete Hain Gharibon Ko Zakat

 

ساحر الموط نے تجھ کو ديا برگ حشيش
اور تو اے بے خبر سمجھا اسے شاخ نبات

Sahir-E-Muut Ne Tujh Ko Diya Barg-E-Hasheesh
Aur Tu Ae Bekhabar Samjha Isse Shakh-E-Nabat

 

نسل، قوميت، کليسا، سلطنت، تہذيب، رنگ
خواجگی نے خوب چن چن کے بنائے مسکرات

Nasal, Qoumiat, Kalisa, Saltanat, Tehzeeb, Rang
Khawajgi Ne Khoob Chun Chun Ke Banaye Muskirat

 

کٹ مرا ناداں خيالی ديوتائوں کے ليے
سکرکی لذت ميں تو لٹوا گيا نقد حيات

Kat Mara Nadan Khiyali Deota’on Ke Liye
Sukr Ki Lazzat Mein Tu Lutwa Gya Naqd-E-Hayat

 

مکر کی چالوں سے بازی لے گيا سرمايہ دار
انتہائے سادگی سے کھا گيا مزدور مات

Makr Ki Chalon Se Bazi Le Gya Sarmayadar
Intaha’ay Sadgi Se Kha Gya Mazdoor Maat

 

اٹھ کہ اب بزم جہاں کا اور ہی اندازہے
مشرق و مغرب ميں تيرے دور کا آغاز ہے

Uth Ke Ab Bazm-E-Jahan Ka Aur Hi Andaz Hai
Mashriq-O-Maghrib Mein Tere Dour Ka Aghaz Hai

 

ہمت عالی تو دريا بھی نہيں کرتی قبول
غنچہ ساں غافل ترے دامن ميں شبنم کب تلک

Himat-E-Aali To Darya Bhi Nahin Karti Qabool
Ghuncha Saan Ghafil Tere Daman Mein Shabnam Kab Talak

 

نغمہ بيداری جمہور ہے سامان عيش
قصہ خواب آور اسکندر و جم کب تلک

Naghma’ay Baidari-E-Jamhoor Hai Saman-E-Aysh
Qissa’ay Khawab Awar-E-Iskandar-O-Jim Kab Talak

 

آفتاب تازہ پيدا بطن گيتی سے ہوا
آسمان! ڈوبے ہوئے تاروں کا ماتم کب تلک

Aftab-E-Taza Paida Batan-E-Geeti Se Huwa
Asman! Doobe Huay Taron Ka Matam Kab Talak

 

توڑ ڈاليں فطرت انساں نے زنجيريں تمام
دوری جنت سے روتی چشم آدم کب تلک

Torh Dalain Fitrat-E-Insan Ne Zanjeerain Tamam
Doori Jannat Se Roti Chasm-E-Adam Kab Talak

 

باغبان چارہ فرما سے يہ کہتی ہے بہار
زخم گل کے واسطے تدبير مرہم کب تلک

Baghban-E-Chara Farma Se Ye Kehti Hai Bahar
Zakhm-E-Gul Ke Waste Tadbeer-E-Marham Kab Talak

 

کرمک ناداں! طواف شمع سے آزاد ہو
اپنی فطرت کے تجلی زار ميں آباد ہو

Karmak-E-Nadan! Tawaf-E-Shama Se Azad Ho
Apni Fitrat Ke Tajalli Zaar Mein Abad Ho

دنيائے اسلام

Dunya-e-Islam

کيا سناتا ہے مجھے ترک و عرب کی داستاں
مجھ سے کچھ پنہاں نہيں اسلاميوں کا سوز و ساز

Kya Sunata Hai Mujhe Turk-O-Arabki Dastan
Mujh Se Kuch Pinhan Nahin Islamiyon Ka Souz-O-Saaz

 

لے گئے تثليث کے فرزند ميراث خليل
خشت بنياد کليسا بن گئی خاک حجاز

Le Gye Taslees Ke Farzand Meeras-E-Khalil (A.S.)
Khisht-E-Bunyad-E-Kalisa Ban Gyi Khak-E-Hijaz

 

ہوگئی رسوا زمانے ميں کلاہ لالہ رنگ
جو سراپا ناز تھے، ہيں آج مجبور نياز

Ho Gyi Ruswa Zamane Mein Kulah-E-Lala Rang
Jo Sarapa Naz The, Hain Aaj Majboor-E-Niaz

 

لے رہا ہے مے فروشان فرنگستاں سے پارس
وہ مۓ سرکش حرارت جس کی ہے مينا گداز

Le Raha Hai Mai Faroshaan-E-Farangistan Se Paras
Woh Mai’ay Sarkash Hararat Jis Ki Hai Meena Gudaz

 

حکمت مغرب سے ملت کی يہ کيفيت ہوئی
ٹکڑے ٹکڑے جس طرح سونے کو کر ديتا ہے گاز

Hikmat-E-Maghrib Se Millat Ki Ye Kaifiyat Huwi
Tukre Tukre Jis Tarah Sone Ko Kar Deta Hai Gaaz

 

ہوگيا مانند آب ارزاں مسلماں کا لہو
مضطرب ہے تو کہ تيرا دل نہيں دانائے راز

Ho Gya Manind-E-Aab Arzaan Musalman Ka Lahoo
Muztarib Hai Tu Ke Tera Dil Nahin Dana’ay Raaz

 

گفت رومی ہر بناے کہنہ کآباداں کنند
می ندانی اول آں بنياد را ويراں کنند

Guft Rumi Har Banaye Kuhna Ka Badaan Kunand
Mee Nadani Awal Aan Bunyad Ra Weeran Kunand

 

ملک ہاتھوں سے گيا ملت کی آنکھيں کھل گئيں
حق ترا چشمے عطا کردست غافل در نگر

Mulk Haathon Se Gya Millat Ki Aankhain Khul Gayin
Haq Tera Chashme Atta Kar Dast Ghafil Dar Nagar

 

موميائی کی گدائی سے تو بہتر ہے شکست
مور بے پر! حاجتے پيش سليمانے مبر

Moumiyai Ki Gadai Se To Behter Hai Shikast
Moor-e-Be Par! Hajatay Paish-e-Sulimanay Mabar

 

ربط و ضبط ملت بيضا ہے مشرق کی نجات
ايشيا والے ہيں اس نکتے سے اب تک بے خبر

Rabt-o-Zabt-e-Millat-e-Baiza Hai Mashriq Ki Nijaat
Asia Wale Hain Iss Nukte Se Ab Tak Be-Khabar

 

پھر سياست چھوڑ کر داخل حصار ديں ميں ہو
ملک و دولت ہے فقط حفظ حرم کا اک ثمر

Phir Siasat Chorh Kar Dakhil Hisar-e-Deen Mein Ho
Mulk-o-Doulat Hai Faqat Hifz-e-Haram Ka Ek Samar

 

ايک ہوں مسلم حرم کی پاسبانی کے ليے
نيل کے ساحل سے لے کر تا بخاک کاشغر

Aik Hon Muslim Haram Ki Pasbani Ke Liye
Neel Ke Sahil Se Le Kar Ta Bakhak-e-Kashghar

 

جو کرے گا امتياز رنگ و خوں ، مٹ جائے گا
ترک خرگاہی ہو يا اعرابی والا گہر

Jo Kare Ga Imtiaz-e-Rang-o-Khoon, Mit Jaye Ga
Turk-e-Khargahi Ho Ya Araabi Wala Guhar

 

نسل اگر مسلم کی مذہب پر مقدم ہوگئی
اڑ گيا دنيا سے تو مانند خاک رہ گزر

Nasal Agar Muslim Ki Mazhab Par Muqadam Ho Gyi
Urh Gya Dunya Se Tu Manind-E-Khak-E-Reh Guzar

 

تا خلافت کی بنا دنيا ميں ہو پھر استور
لا کہيں سے ڈھونڈ کر اسلاف کا قلب و جگر

Ta Khilafat Ki Bina Dunya Mein Ho Phir Ustawar
La Kahin Se Dhoond Kar Aslaaf Ka Qalb-O-Jigar

 

اے کہ نشناسی خفی را از جلی ہشيار باش
اے گرفتار ابوبکر و علی ہشيار باش

Ae Ke Nashna See Khafi Ra Az Jali Hushyar Bash
Ae Giraftar-E-Abubakr (R.A.)-O-Ali (R.A.)  Hushyar Bash

 

عشق کو فرياد لازم تھی سو وہ بھی ہو چکی
اب ذرا دل تھام کر فرياد کی تاثير ديکھ

Ishq Ko Faryad Lazim Thi So Woh Bhi Ho Chuki
Ab Zara Dil Thaam Kar Faryad Ki Taseer Dekh

 

تو نے ديکھا سطوت رفتار دريا کا عروج
موج مضطر کس طرح بنتی ہے اب زنجير ديکھ

Tu Ne Dekha Satwat-E-Raftar-E-Darya Ka Urooj
Mouj-E-Muztar Kis Tarah Banti Hai Ab Zanjeer Dekh

 

عام حريت کا جو ديکھا تھا خواب اسلام نے
اے مسلماں آج تو اس خواب کی تعبير ديکھ

Aam Huriyat Ka Jo Dekha Tha Khawab Islam Ne
Ae Musalman Aaj Tu Uss Khawab Ki Tabeer Dekh

 

اپنی خاکستر سمندر کو ہے سامان وجود
مر کے پھر ہوتا ہے پيدا يہ جہان پير، ديکھ

Apni Khakstar Samundar Ko Hai Saman-E-Wujood
Mar Ke Phir Hota Hai Ye Jahan-E-Peer, Dekh

 

کھول کر آنکھيں مرے آئينۂ گفتار ميں
آنے والے دور کی دھندلی سی اک تصوير ديکھ

Khol Kar Ankhain Mere Ayna-E-Guftar Mein
Ane Wale Dour Ki Dhundli Si Ek Tasveer Dekh

 

آزمودہ فتنہ ہے اک اور بھی گردوں کے پاس
سامنے تقدير کے رسوائی تدبير ديکھ

Azmudah Fitna Hai Ek Aur Bhi Gardoon Ke Pas
Samne Taqdeer Ke Ruswayi-E-Tadbeer Dekh

 

مسلم استی سينہ را از آرزو آباد دار
ہر زماں پيش نظر، لايخلف الميعاد دار

Muslim Asti Seena Ra Az Arzoo Abad Dar
Har Zaman Paish-E-Nazar ‘La Yukhalif Ul Meead’ Dar

 

 

 

 

Khizar-e-Rah Part 1- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry |  خضرراہ حصہ اول

Humayun- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | ہمايوں

Daryooza-e-Khilafat- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | دريوزہ خلافت

2 thoughts on “Jawab-e-Khizar – Part 2- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry |  جواب خضر – حصہ دوم

  1. Pingback: play go88

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *