Jinhain Mein Dhondta Tha Asmanon Mein Zameenon Mein- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | جنھيں ميں ڈھونڈتا تھا آسمانوں ميں زمينوں ميں

Jinhain Mein Dhondta Tha Asmanon Mein Zameenon Mein- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | جنھيں ميں ڈھونڈتا تھا آسمانوں ميں زمينوں ميں

جنھيں ميں ڈھونڈتا تھا آسمانوں ميں زمينوں ميں

Jinhain Mein Dhondta Tha Asmanon Mein Zameenon Mein

 

جنھيں ميں ڈھونڈتا تھا آسمانوں ميں زمينوں ميں
وہ نکلے ميرے ظلمت خانہ دل کے مکينوں ميں
Jinhain Mein Dhondta Tha Asmanon Mein Zameenon Mein
Woh Nikle Mere Zulmat Khana-e-Dil Ke Makeenon Mein
حقيقت اپنی آنکھوں پر نماياں جب ہوئی اپنی
مکاں نکلا ہمارے خانہ دل کے مکينوں ميں
Haqiqat Apni Ankhon Par Namayan Jab Huwi Apni
Makan Nikla Humare Khana-e-Dil Ke Makeenon Mein
اگر کچھ آشنا ہوتا مذاق جبہہ سائی سے
تو سنگ آستاں کعبہ جا ملتا جبينوں ميں
Agar Kuch Ashana Hota Mazaq-e-Jaba-Sayi Se
To Sang-e-Astan-e-Kaaba Ja Milta Jabeenon Mein
کبھی اپنا بھی نظارہ کيا ہے تو نے اے مجنوں
کہ ليلی کی طرح تو خود بھی ہے محمل نشينوں ميں
Kabhi Apna Bhi Nazara Kiya Hai Tu Ne Ae Majnoon
Ke Laila Ki Tarah Tu Bhi Hai Mehmil Nasheenon Mein
مہينے وصل کے گھڑيوں کی صورت اڑتے جاتے ہيں
مگر گھڑياں جدائی کی گزرتی ہيں مہينوں ميں
Mahine Wasl Ke Ghariyon Ki Soorat Urte Jate Hain
Magar Ghariyan Judai Ki Guzerti Hain Mahinon Mein
مجھے روکے گا تو اے ناخدا کيا غرق ہونے سے
کہ جن کو ڈوبنا ہو ، ڈوب جاتے ہيں سفينوں ميں
Mujhe Roke Ga Tu Ae Na-Khuda Kya Gharaq Hone Se
Ke Jin Ko Doobna Ho, Doob Jate Hain Safeenon Mein
چھپايا حسن کو اپنے کليم اللہ سے جس نے
وہی ناز آفريں ہے جلوہ پيرا نازنينوں ميں
Chupaya Husn Ko Apne Kaleem-Ullah Se Jis Ne
Wohi Naz Afreen Hai Jalwa Pera Naaz Neenon Mein
جلا سکتی ہے شمع کشتہ کو موج نفس ان کی
الہی! کيا چھپا ہوتا ہے اہل دل کے سينوں ميں
Jala Sakti Hai Shama-e-Kushta Ko Mouj-e-Nafas In Ki
Elahi! Kya Chupa Hota Hai Ahl-e-Dil Ke Seenon Mein
تمنا درد دل کی ہو تو کر خدمت فقيروں کی
نہيں ملتا يہ گوہر بادشاہوں کے خزينوں ميں
Tamanna Dard-e-Dil Ki Ho To Kar Khidmat Faqeeron Ki
Nahin Milta Ye Gohar Badshahon Ke Khazeenon Mein
نہ پوچھ ان خرقہ پوشوں کی ، ارادت ہو تو ديکھ ان کو
يد بيضا ليے بيٹھے ہيں اپنی آستينوں ميں
Na Puch In Kharqa Poshon Ki, Iradat Ho To Dekh In Ko
Yad-e-Baiza Liye Baithe Hain Apni Asteenon Mein
ترستی ہے نگاہ نا رسا جس کے نظارے کو
وہ رونق انجمن کی ہے انھی خلوت گزينوں ميں
Tarasti Hai Nigah-e-Narsa Jis Ke Nazare Ko
Woh Ronaq Anjuman Ki Hai Inhi Khalwat Guzinon Mein
کسی ايسے شرر سے پھونک اپنے خرمن دل کو
کہ خورشيد قيامت بھی ہو تيرے خوشہ چينوں ميں
Kisi Aese Sharar Se Phoonk Apne Kharman-e-Dil Ko
Ke Khursheed-e-Qayamat Bhi Ho Tere Khosha Cheenon Mein
محبت کے ليے دل ڈھونڈ کوئی ٹوٹنے والا
يہ وہ مے ہے جسے رکھتے ہيں نازک آبگينوں ميں
Mohabbat Ke Liye Dil Dhoond Koi Tootne Wala
Ye Woh Mai Hai Jise Rakhte Hain Nazuk Abgeenon Mein
سراپا حسن بن جاتا ہے جس کے حسن کا عاشق
بھلا اے دل حسيں ايسا بھی ہے کوئی حسينوں ميں
Sarapa Husn Ban Jata Hai Jis Ke Husn Ka Ashiq
Bhala Ae Dil Haseen Aesa Bhi Hai Koi Haseenon Mein
پھڑک اٹھا کوئی تيری ادائے ما عرفنا پر
ترا رتبہ رہا بڑھ چڑھ کے سب ناز آفرينوں ميں
Pharak Utha Koi Teri Adaye MA ARAFNA Par
Tera Rutba Raha Barh Charh Ke Sub Naaz Afreenon Mein
نماياں ہو کے دکھلا دے کبھی ان کو جمال اپنا
بہت مدت سے چرچے ہيں ترے باريک بينوں ميں
Namayan Ho Ke Dikhla De Kabhi In Ko Jamal Apna
Bohat Muddat Se Cherche Hain Tere Bareek Beenon Mein
خموش اے دل! ، بھری محفل ميں چلانا نہيں اچھا
ادب پہلا قرينہ ہے محبت کے قرينوں ميں
Khamosh Ae Dil! Bhari Mehfil Mein Chillana Nahin Acha
Adab Pehla Qareena Hai Mohabbat Ke Qareenon Mein
برا سمجھوں انھيں مجھ سے تو ايسا ہو نہيں سکتا
کہ ميں خود بھی تو ہوں اقبال اپنے نکتہ چينوں ميں
Bura Samajhun Inhain, Mujh Se To Aesa Ho Nahin Sakta
Ke Main Khud Bhi To Hun Iqbal Apne Nukta Cheenon Mein

One thought on “Jinhain Mein Dhondta Tha Asmanon Mein Zameenon Mein- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | جنھيں ميں ڈھونڈتا تھا آسمانوں ميں زمينوں ميں

  1. Pingback: fuckboy

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *