Jugnoo - Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | جگنو

Jugnoo – Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | جگنو

جگنو

Jugnoo

جگنو کی روشنی ہے کاشانۂ چمن ميں
يا شمع جل رہی ہے پھولوں کی انجمن ميں

Jugnoo Ki Roshni Hai Kashana-e-Chaman Mein
Ya Shama Jal Rahi Hai Phoolon Ki Anjuman Mein

 

آيا ہے آسماں سے اڑ کر کوئی ستارہ
يا جان پڑ گئی ہے مہتاب کی کرن ميں

Aya Hai Asman Se Urh Kar Koi Sitara
Ya Jaan Parh Gyi Hai Mehtaab Ki Kiran Mein

 

يا شب کی سلطنت ميں دن کا سفير آيا
غربت ميں آ کے چمکا، گمنام تھا وطن ميں

Ya Shab Ki Saltanat Mein Din Ka Safeer Aya
Gharbat Mein Aa Ke Chamka, Ghumnaam Tha Watan Mein

 

تکمہ کوئی گرا ہے مہتاب کی قبا کا
ذرہ ہے يا نماياں سورج کے پيرہن ميں

Tukma Koi Gira Hai Mehtab Ki Qaba Ka
Zarra Hai Ya Numayan Suraj Ke Pairhan Mein

 

حسن قديم کی يہ پوشيدہ اک جھلک تھی
لے آئی جس کو قدرت خلوت سے انجمن ميں

Husn-e-Qadeem Ki Ye Poshida Ek Jhalak Thi
Le Ayi Jis Ko Qudrat Khalwat Se Anjuman

 

چھوٹے سے چاند ميں ہے ظلمت بھی روشنی بھی
نکلا کبھی گہن سے، آيا کبھی گہن ميں

Chote Se Chand Mein Hai Zulmat Bhi Roshni Bhi
Nikla Kabhi Gehn Se, Aya Kabhi Gehn Mein

 

پروانہ اک پتنگا، جگنو بھی اک پتنگا
وہ روشنی کا طالب، يہ روشنی سراپا

Parwana Ek Patanga, Jugnoo Bhi Ek Patanga
Woh Roshni Ka Talib, Ye Roshni Sarapa

 

ہر چيز کو جہاں ميں قدرت نے دلبری دی
پروانے کو تپش دی، جگنو کو روشنی دی

Har Cheez Ko Jahan Mein Qudrat Ne Dilbari Di
Parwane Ko Tapish Di, Jugnoo Ko Roshani Di

 

رنگيں نوا بنايا مرغان بے زباں کو
گل کو زبان دے کر تعليم خامشی دی

Rangeen Nawa Banaya Murghan-e-Bezuban Ko
Gul Ko Zuban De Kar Taleem-e-Khamashi Di

 

نظارئہ شفق کی خوبی زوال ميں تھی
چمکا کے اس پری کو تھوڑی سی زندگی دی

Nazara-e-Shafaq Ki Khoobi Zawal Mein Thi
Chamka Ke Iss Pari Ko Thori Si Zindagi Di

 

رنگيں کيا سحر کو، بانکی دلھن کی صورت
پہنا کے لال جوڑا شبنم کی آرسی دی

Rangeen Kiya Sehar Ko Banki Dulhan Ki Soorat
Pehna Ke Laal Jorha Shabnam Ki Aar Si Di

 

سايہ ديا شجر کو، پرواز دی ہوا کو
پانی کو دی روانی، موجوں کو بے کلی دی

Saya Diya Shajar Ko, Parwaz Di Hawa Ko
Pani Ko Di Rawani, Moujon Ko Be-Kali Di

 

يہ امتياز ليکن اک بات ہے ہماری
جگنو کا دن وہی ہے جو رات ہے ہماری

Ye Imtiaz Lekin Ek Baat Hai Humari
Jugnoo Ka Din Wohi Hai Jo Raat Hai Humari

 

حسن ازل کی پيدا ہر چيز ميں جھلک ہے
انساں ميں وہ سخن ہے، غنچے ميں وہ چٹک ہے

Husn-e-Azal Ki Paida Har Cheez Mein Jhalak Hai
Insan Mein Woh Sukhan Hai, Ghunche Mein Woh Chatak Hai

 

يہ چاند آسماں کا شاعر کا دل ہے گويا
واں چاندنی ہے جو کچھ، ياں درد کی کسک ہے

Ye Chand Asman Ka Shayar Ka Dil Hai Goya
Waan Chandani Hai Jo Kuch, Yaan Dard Kasak Hai

 

انداز گفتگو نے دھوکے ديے ہيں ورنہ
نغمہ ہے بوئے بلبل، بو پھول کی چہک ہے

Andaz-e-Guftugoo Ne Dhoke Diye Hain Warna
Naghma Hai Bu-e-Bulbul, Boo Phool Ki Chehak Hai

 

کثرت ميں ہو گيا ہے وحدت کا راز مخفی
جگنو ميں جو چمک ہے وہ پھول ميں مہک ہے

Kasrat Mein Ho Gya Hai Wahdat Ka Raaz Makhfi
Jugnoo Mein Jo Chamak Hai, Woh Phool Mein Mehak Hai

 

يہ اختلاف پھر کيوں ہنگاموں کا محل ہو
ہر شے ميں جبکہ پنہاں خاموشی ازل ہو

Ye Ikhtilaf Phir Kyun Hangamon Ka Mehal Ho
Har Shay Mein Jabke Pinhan Khamoshi-e-Azal Ho

 

Sargazisht-e-Adam – Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | سر گزشتِ آدم

Bilal – Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | بلال

Chand- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | چاند

2 thoughts on “Jugnoo – Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | جگنو

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *