kare hai baada tire lab se kasb-e-rang-e-farogh

Kare hai baada tire lab se kasb-e-rang-e-farogh – Mirza Ghalib Poetry

Kare hai baada tire lab se kasb-e-rang-e-farogh

کرے ہے بادہ ترے لب سے کسب رنگ فروغ

 

kare hai baada tire lab se kasb-e-rang-e-farogh
ḳhat-e-piyāla sarāsar nigāh-e-gul-chīñ hai

کرے ہے بادہ ترے لب سے کسب رنگ فروغ
خط پیالہ سراسر نگاہ گل چیں ہے

 

kabhī to is dil-e-shorīda kī bhī daad mile
ki ek umr se hasrat-parast-e-bālīñ hai

کبھی تو اس دل شوریدہ کی بھی داد ملے
کہ ایک عمر سے حسرت پرست بالیں ہے

 

bajā hai gar na sune nāla-hā-e-bulbul-e-zār
ki gosh-e-gul nam-e-shabnam se pamba-āgīñ hai

بجا ہے گر نہ سنے نالہ ‌ہائے بلبل زار
کہ گوش گل نم شبنم سے پنبہ آگیں ہے

 

‘asad’ hai naza.a meñ chal bevafā barā-e-ḳhudā
maqām-e-tark-e-hijāb o vidā-e-tamkīñ hai

اسدؔ ہے نزع میں چل بے وفا برائے خدا
مقام ترک حجاب و وداع تمکیں ہے

 

 

koh ke hon bar-e-ḳhatir gar sada ho jaiye – Mirza Ghalib Poetry

nashsha-ha shadab-e-rang o saz-ha mast-e-tarab – Mirza Ghalib Poetry

2 thoughts on “Kare hai baada tire lab se kasb-e-rang-e-farogh – Mirza Ghalib Poetry

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *