Laon Woh Tinke Kahin Se Ashiyane Ke Liye- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | لاؤں وہ تنکے کہيں سے آشيانے کے ليے

Laon Woh Tinke Kahin Se Ashiyane Ke Liye- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | لاؤں وہ تنکے کہيں سے آشيانے کے ليے

لاؤں وہ تنکے کہيں سے آشيانے کے ليے

Laon Woh Tinke Kahin Se Ashiyane Ke Liye

 

لاؤں وہ تنکے کہيں سے آشيانے کے ليے
بجلياں بے تاب ہوں جن کو جلانے کے ليے
Laon Woh Tinke Kahin Se Ashiyane Ke Liye
Bijlian Betaab Hun Jin Ko Jalane Ke Liye
وائے ناکامی ، فلک نے تاک کر توڑا اسے
ميں نے جس ڈالی کو تاڑا آشيانے کے ليے
Waye Nakami, Falak Ne Taak Kar Tora Usse
Mein Ne Jis Dali Ko Tara Ashiyane Ke Liye
آنکھ مل جاتی ہے ہفتاد و دو ملت سے تری
ايک پيمانہ ترا سارے زمانے کے ليے
Ankh Mil Jati Hai Haftad Wa Do Millat Se Teri
Aik Permana Tera Sare Zamane Ke Liye
دل ميں کوئی اس طرح کی آرزو پيدا کروں
لوٹ جائے آسماں ميرے مٹانے کے ليے
Dil Mein Koi Iss Tarah Ki Arzu Paida Karun
Lot Jaye Asman Mere Mitane Ke Liye
جمع کر خرمن تو پہلے دانہ دانہ چن کے تو
آ ہی نکلے گی کوئی بجلی جلانے کے ليے
Jama Kar Kharman Tu Pehle Dana Dana Chun Ke Tu
Aa Hi Nikle Gi Koi Bijle Jalane Ke Liye
پاس تھا ناکامی صياد کا اے ہم صفير
ورنہ ميں ، اور اڑ کے آتا ايک دانے کے ليے!
Pas Tha Nakami-e-Sayyad Ka Ae Hum-Safeer
Warna Main Aur Urh Ke Ata Aik Dane Ke Liye
اس چمن ميں مرغ دل گائے نہ آزادی کا گيت
آہ يہ گلشن نہيں ايسے ترانے کے ليے
Iss Chaman Mein Murgh-e-Dil Gaye Na Azadi Ka Geet
Aah! Ye Gulshan Nahin Aese Tarane Ke Liye

2 thoughts on “Laon Woh Tinke Kahin Se Ashiyane Ke Liye- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | لاؤں وہ تنکے کہيں سے آشيانے کے ليے

  1. Pingback: hotmart login

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *