Miri hasti faza-e-hairat abad-e-tamanna hai

Miri hasti faza-e-hairat abad-e-tamanna hai – Mirza Ghalib Poetry

Miri hasti faza-e-hairat abad-e-tamanna hai

مری ہستی فضاۓ حیرت آباد تمنا ہے

 

miri hasti faza-e-hairat abad-e-tamanna hai
jise kahte haiñ naala vo usī aalam kā anqā hai

مری ہستی فضاۓ حیرت آباد تمنا ہے
جسے کہتے ہیں نالہ وہ اسی عالم کا عنقا ہے

 

ḳhizāñ kyā fasl-e-gul kahte haiñ kis ko koī mausam ho
vahī ham haiñ qafas hai aur mātam bāl-o-par kā hai

خزاں کیا فصل گل کہتے ہیں کس کو کوئی موسم ہو
وہی ہم ہیں قفس ہے اور ماتم بال و پر کا ہے

vafā-e-dilbarāñ hai ittifāqī varna ai hamdam
asar fariyād-e-dil-hā-e-hazīñ kā kis ne dekhā hai

وفائے دلبراں ہے اتفاقی ورنہ اے ہمدم
اثر فریاد دل ‌ہاۓ حزیں کا کس نے دیکھا ہے

na laa.ī shoḳhi-e-andesha tāb-e-rañj-e-naumīdī
kaf-e-afsos milnā ahd-e-tajdīd-e-tamannā hai

نہ لائی شوخی اندیشہ تاب رنج نومیدی
کف افسوس ملنا عہد تجدید تمنا ہے

 

na sove ābloñ meñ gar sirishk-e-dīda-e-nam se
ba-jaulāñ-gāh-e-naumīdī nigāh-e-ājizāñ pā hai

نہ سووے آبلوں میں گر سرشک دیدۂ نم سے
بہ جولاں گاۂ نومیدی نگاۂ عاجزاں پا ہے

ba-saḳhtī-hā-e-qaid-e-zindagī mālūm āzādī
sharar bhī said-e-dām-e-rishta-e-rag-hā-e-ḳhārā hai

بہ سختی ہاۓ قید زندگی معلوم آزادی
شرر بھی صید دام رشتۂ رگ‌ ہاۓ خارا ہے

taġhāful-mashrabī se nā-tamāmī bas-ki paidā hai
nigāh-e-nāz chashm-e-yār meñ zunnār-e-mīnā hai

تغافل مشربی سے ناتمامی بسکہ پیدا ہے
نگاہ ناز چشم یار میں زنار مینا ہے

 

tasarruf vahshiyoñ meñ hai tasavvur-hā-e-majnūñ kā
savād-e-chashm-e-āhū aks-e-ḳhāl-e-rū-e-lailā hai

تصرف وحشیوں میں ہے تصور ہاۓ مجنوں کا
سواد چشم آہو عکس خال روئے لیلا ہے

mohabbat tarz-e-paivand-e-nihāl-e-dostī jaane
davīdan resha saañ muft-e-rag-e-ḳhvāb-e-zuleḳhā hai

محبت طرز پیوند نہال دوستی جانے
دویدن ریشہ ساں مفت رگ خواب زلیخا ہے

kiyā yak-sar gudāz-e-dil niyāz-e-joshish-e-hasrat
suvaidā nusḳha-e-tah-bandi-e-dāġh-e-tamannā hai

کیا یک سر گداز دل نیاز جوشش حسرت
سویدا نسخۂ تہ بندی داغ تمنا ہے

 

hujūm-e-rezish-e-ḳhūñ ke sabab rañg uḌ nahīñ saktā
hinā-e-panja-e-saiyyād murġh-e-rishta bar-pā hai

ہجوم ریزش خوں کے سبب رنگ اڑ نہیں سکتا
حناۓ پنجۂ صیاد مرغ رشتہ بر پا ہے

asar soz-e-mohabbat kā qayāmat be-muhābā hai
ki rag se sañg meñ tuḳhm-e-sharar kā resha paidā hai

اثر سوز محبت کا قیامت بے محابا ہے
کہ رگ سے سنگ میں تخم شرر کا ریشہ پیدا ہے

nihāñ hai gauhar-e-maqsūd jeb-e-ḳhud-shanāsī meñ
ki yaañ ġhavvās hai timsāl aur ā.īna dariyā hai

نہاں ہے گوہر مقصود جیب خود شناسی میں
کہ یاں غواص ہے تمثال اور آئینہ دریا ہے

azīzo zikr-e-vasl-e-ġhair se mujh ko na bahlāo
ki yaañ afsūn-e-ḳhvāb afsāna-e-ḳhvāb-e-zulaiḳhā hai

عزیزو ذکر وصل غیر سے مجھ کو نہ بہلاؤ
کہ یاں افسون خواب افسانۂ خواب زلیخا ہے

tasavvur bahr-e-taskīn-e-tapīdan-hā-e-tifl-e-dil
ba-bāġh-e-rañg-hā-e-rafta gul-chīn-e-tamāshā hai

تصور بہر تسکین تپیدن ہاۓ طفل دل
بہ باغ رنگ ‌ہاۓ رفتہ گل چین تماشا ہے

ba-sa.i-e-ġhair hai qat-e-libās-e-ḳhāna-vīrānī
ki nāz-e-jāda-e-rah rishta-e-dāmān-e-sahrā hai

بہ سعی غیر ہے قطع لباس خانہ ویرانی
کہ ناز جادۂ رہ رشتۂ دامان صحرا ہے

 

 

Nahin hai zakhm koi bakhiye ke dar-khur mire tan men – Mirza Ghalib Poetry

Pa-ba-daman ho raha huun bas-ki main sahra-navard – Mirza Ghalib Poetry

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *