Nahin hai zakhm koi bakhiye ke dar-khur mire tan men

Nahin hai zakhm koi bakhiye ke dar-khur mire tan men – Mirza Ghalib Poetry

Nahin hai zakhm koi bakhiye ke dar-khur mire tan men

نہیں ہے زخم کوئی بخیے کے در خور مرے تن میں

 

nahin hai zakhm koi bakhiye ke dar-khur mire tan men
huā hai tār-e-ashk-e-yās rishta chashm-e-sozan meñ

نہیں ہے زخم کوئی بخیے کے در خور مرے تن میں
ہوا ہے تار اشک یاس رشتہ چشم سوزن میں

 

huī hai māne-e-zauq-e-tamāshā ḳhāna-vīrānī
kaf-e-sailāb baaqī hai ba-rañg-e-pumba rauzan meñ

ہوئی ہے مانع ذوق تماشا خانہ ویرانی
کف سیلاب باقی ہے بہ رنگ پنبہ روزن میں

 

vadī.at-ḳhāna-e-bedād-e-kāvish-hā-e-mizhgāñ huuñ
nagīn-e-nām-e-shāhid hai mire har qatra-e-ḳhūñ tan meñ

ودیعت خانۂ بیداد کاوش‌ ہاۓ مژگاں ہوں
نگین نام شاہد ہے مرے ہر قطرۂ خوں تن میں

 

bayāñ kis se ho zulmat-gustarī mere shabistāñ kī
shab-e-mah ho jo rakh duuñ pamba dīvāroñ ke rauzan meñ

بیاں کس سے ہو ظلمت گستری میرے شبستاں کی
شب مہ ہو جو رکھ دوں پنبہ دیواروں کے روزن میں

 

nikohish māna-e-be-rabti-e-shor-e-junūñ aa.ī
huā hai ḳhanda-e-ahbāb baḳhiya jeb-o-dāman meñ

نکوہش مانع بے ربطی شور جنوں آئی
ہوا ہے خندۂ احباب بخیہ جیب و دامن میں

 

hue us mehr-vash ke jalva-e-timsāl ke aage
par-afshāñ jauhar ā.īne meñ misl-e-zarra rauzan meñ

ہوئے اس مہروش کے جلوۂ تمثال کے آگے
پرافشاں جوہر آئینے میں مثل ذرہ روزن میں

 

na jānūñ nek huuñ yā bad huuñ par sohbat-muḳhālif hai
jo gul huuñ to huuñ gulḳhan meñ jo ḳhas huuñ to huuñ gulshan meñ

نہ جانوں نیک ہوں یا بد ہوں پر صحبت مخالف ہے
جو گل ہوں تو ہوں گلخن میں جو خس ہوں تو ہوں گلشن میں

 

hazāroñ dil diye josh-e-junūn-e-ishq ne mujh ko
siyah ho kar suvaidā ho gayā har qatra-e-ḳhūñ tan meñ

ہزاروں دل دیے جوش جنون عشق نے مجھ کو
سیہ ہو کر سویدا ہو گیا ہر قطرۂ خوں تن میں

 

‘asad’ zindāni-e-tāsīr-e-ulfat-hā-e-ḳhūbāñ huuñ
ḳham-e-dast-e-navāzish ho gayā hai tauq gardan meñ

اسدؔ زندانی تاثیر الفت ‌ہاۓ خوباں ہوں
خم دست نوازش ہو گیا ہے طوق گردن میں

 

fuzūñ kī dostoñ ne hirs-e-qātil zauq-e-kushtan meñ
ho.e haiñ baḳhiya-hā-e-zaḳhm jauhar teġh-e-dushman meñ

فزوں کی دوستوں نے حرص قاتل ذوق کشتن میں
ہوئے ہیں بخیہ ہائے زخم جوہر تیغ دشمن میں

 

tamāshā kardanī hai lutf-e-zaḳhm-e-intizār ai dil
suvaidā dāġh-e-marham mardumuk hai chashm-e-sozan meñ

تماشا کردنی ہے لطف زخم انتظار اے دل
سویدا داغ مرہم مردمک ہے چشم سوزن میں

 

dil-o-dīn-o-ḳhirad tārāj-e-nāz-e-jalva-pairā.ī
huā hai jauhar-e-ā.īna ḳhel-e-mor ḳhirman meñ

دل و دین و خرد تاراج ناز جلوہ پیرائی
ہوا ہے جوہر آئینہ خیل مور خرمن میں

 

nikohish māne-e-dīvāngī-hā-e-junūñ aa.ī
lagāyā ḳhanda-e-nāseh ne baḳhiya jeb-o-dāman meñ

نکوہش مانع دیوانگی ہائے جنوں آئی
لگایا خندۂ ناصح نے بخیہ جیب و دامن میں

 

 

Pa-ba-daman ho raha huun bas-ki main sahra-navard – Mirza Ghalib Poetry

Mat mardumak-e-dida men samjho ye nigahen – Mirza Ghalib Poetry

One thought on “Nahin hai zakhm koi bakhiye ke dar-khur mire tan men – Mirza Ghalib Poetry

  1. Pingback: site.com

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *