Nala-e-Firaq- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | نالہ فراق

Nala-e-Firaq- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | نالہ فراق

نالہ فراق

Nala-e-Firaq


جا بسا مغرب ميں آخر اے مکاں تيرا مکيں

آہ! مشرق کی پسند آئی نہ اس کو سر زميں

Ja Basa Maghrib Mein Akhir Ae Makan Tera Makeen
Ah! Mashriq Ki Pasand Ayi Na Iss Ko Sarzameen

 

آ گيا آج اس صداقت کا مرے دل کو يقيں
ظلمت شب سے ضيائے روز فرقت کم نہيں

Aa Gya Aaj Iss Sadaqat Ka Mere Dil Ko Yaqeen
Zulmat-e-Shab Se Zaya-e-Rouz-e-Furqat Kam Nahin

 

تا ز آغوش وداعش داغ حيرت چيدہ است
ہمچو شمع کشتہ در چشم نگہ خوابيدہ است

Taaz Aghosh-e-Wadaash Dagh-e-Hairat Cheeda Ast
Humcho Shama-e-Kusta Dar Chasmam Nigah Khawabida Ast

 

کشتہ عُزلت ہوں، آبادی ميں گھبراتا ہوں ميں
شہر سے سودا کی شدت ميں نکل جاتا ہوں ميں

Kushta-e-Uzlat Hun, Abadi Mein Ghabrata Hun Main
Shehar Se Souda Ki Shiddat Mein Nikal Jata Hun Main

 

ياد ايام سلف سے دل کو تڑپاتا ہوں ميں
بہر تسکيں تيری جانب دوڑتا آتا ہوں ميں

Yaad-e-Ayyam-e-Salaf Se Dil Ko Tarapta Hun Main
Behr-e-Taskeen Teri Janib Dorta Ata Hun Main

 

آنکھ گو مانوس ہے تيرے در و ديوار سے
اجنبيت ہے مگر پيدا مری رفتار سے

Ankh Go Manoos Hai Tere Dar-o-Diwar Se
Ajnabiat Hai Magar Paida Meri Raftar Se

 

ذرہ ميرے دل کا خورشيد آشنا ہونے کو تھا
آئنہ ٹوٹا ہوا عالم نما ہونے کو تھا

Zarra Mere Dil Ka Khursheed Ashna Hone Ko Tha
Aaeena Toota Huwa Alamnuma Hone Ko Tha

 

نخل ميری آرزوئوں کا ہرا ہونے کو تھا
آہ! کيا جانے کوئی ميں کيا سے کيا ہونے کو تھا

Nakhal Meri Arzuon Ka Hara Hone Ko Tha
Ah! Kya Jane Koi Main Kya Se Kya Hone Ko Tha

 

ابر رحمت دامن از گلزار من برچيد و رفت
اند کے بر غنچہ ہائے آرزو باريد و رفت

Abar-e-Rehmat Daman Az Gulzar-e-Mann Barcheeda-o-Raft
And Ke Bar Ghuncha Haye Arzu Bareed-o-Raft

 

تو کہاں ہے اے کليم ذروئہ سينائے علم
تھی تری موج نفس باد نشاط افزائے علم

Tu Kahan Hai Ae Kaleem-e-Zarwa-e-Seenaye Ilm
Thi Teri Mouj-e-Nafas Baad-e-Nishat Afzaye Ilm

 

اب کہاں وہ شوق رہ پيمائی صحرائے علم
تيرے دم سے تھا ہمارے سر ميں بھی سودائے علم

Ab Kahan Woh Shauq-e-Reh Pemayi-e-Sehraye Ilm
Tere Dam Se Tha Humare Sar Mein Bhi Soudaye Ilm

 

شور ليلی کو کہ باز آرايش سودا کند
خاک مجنوں را غبار خاطر صحرا کند

Shour-e-Laila Ko Ke Baaz Araeesh-e-Souda Kunand
Khak-e-Majnu Rah Ghubar-e-Khatir-e-Sehra Kunand

 

کھول دے گا دشت وحشت عقدئہ تقدير کو
توڑ کر پہنچوں گا ميں پنجاب کی زنجير کو

Khol De Ga Dast-e-Wehshat Uqda-e-Taqdeer Ko
Tor Kar Pohenchun Ga Main Punjab Ki Zanjeer Ko

 

ديکھتا ہے ديدئہ حيراں تری تصوير کو
کيا تسلی ہو مگر گرويدۂ تقرير کو

Dekhta Hai Dida-e-Heeran Teri Tasveer Ko
Kya Tasalli Ho Magar Garvidah-e-Taqreer Ko

 

تاب گويائی نہيں رکھتا دہن تصوير کا
خامشی کہتے ہيں جس کو، ہے سخن تصوير کا

Taab-e-Goyai Nahin Rakhta Dehan Tasveer Ka
Khamoshi Kehte Hai Jis Ko, Hai Sukhan Tasveer Ka

 

Tasveer-e-Dard- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | تصوير درد

Tifl e Sheer Khawar- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | طفل شير خوار

Rukhsat Ae Bazm-e-Jahan- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | رخصت اے بزم جہاں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *