قرآن و سنت کی روشنی میں قربانی کے احکام و مسائل

قرآن و سنت کی روشنی میں قربانی کے احکام و مسائل

سوال : قربانی کس تاریخی واقعہ کی یادگار ہے؟

قربانی اس عظیم الشان واقعہ کی یادگار ہے، جب حضرت ابراہیم علیہ السلام نے اپنے بیٹے حضرت اسماعیل علیہ السلام کو جو انہیں بڑھاپے میں عطا ہوئے، اللہ تعالیٰ کے حکم اور اس کی رضا کے حصول کی خاطر قربان کرنے کے لئے تیار ہو گئے اور دوسری طرف فرمانبردار صابر و شاکر بیٹا اپنے والد گرامی کی زبان سے یہ اشارہ سن کر کہ اس کے رب نے اس کی جان کی قربانی طلب کی ہے، اسی لمحہ اللہ تعالیٰ کی راہ میں قربان ہونے کے لئے تیار ہو گیا۔ اللہ رب العزت کو حضرت ابراہیم علیہ السلام اور ان کے بیٹے کی یہ ادا بہت پسند آئی۔ قربانی قبول ہوئی مگر بیٹے کی جان بخش دی گئی اور اس کی جگہ ایک مینڈھا قربان کر دیا گیا، چنانچہ آج تک آپ علیہ السلام کا ذکر اور قربانی کی صورت میں آپ علیہ السلام کی یادگار موجود ہے اور قیامت تک موجود رہے گی۔ قدرت نے اس یادگار کو فرضیت و لزوم کا درجہ دے کر ایسا مستحکم انتظام فرما دیا ہے کہ اسے کسی بھی سازش اور بے جا منفی تاویلوں سے ختم نہیں کیا جا سکتا۔

سوال  : عید الاضحی اور حج کے موقع پر کی جانے والی قربانی میں کیا فرق ہے؟

 عیدالاضحی اور حج کے موقع پر کی جانے والی قربانی میں فرق یہ ہے کہ حج افراد ادا کرنے والے کے علاوہ حج کی قربانی غنی، فقیر سب پر واجب ہے، جبکہ عید الاضحٰی کی قربانی فقط غنی پر واجب ہے فقیر پر نہیں۔

سوال:  کیا حج اِفراد، قِران، تَمَتُّعْ کرنے والوں میں سے ہر ایک پر قربانی واجب ہے؟

حج افراد کرنے والے پر قربانی دینا مستحب ہے، اگرچہ غنی ہو، جبکہ حج قرآن اور حج تمتع کرنے والوں پر قربانی دینا واجب ہے، اگرچہ فقیر ہی ہو۔

سوال :اگر کوئی شخص قربانی کرنے کی استطاعت نہ رکھتا ہو تو اس بارے میں کیا حکم ہے؟

 اگر کوئی شخص قربانی کرنے کی استطاعت نہ رکھتا ہو تو اس بارے میں حکم یہ ہے کہ وہ قربانی کے بدلہ میں دس روزے رکھے، تین حج کے مہینے میں احرام باندھ کر اور باقی سات روزے حج سے فارغ ہونے کے بعد جہاں چاہے رکھے، لیکن گھر پہنچ کر رکھنا بہتر ہے۔ ان روزوں کو مسلسل یا الگ الگ رکھنا دونوں طرح جائز ہے۔

سوال  : کیا قربانی کی قیمت کے عوض صدقہ و خیرات کرنا جائز ہے؟

 جس پر قربانی واجب ہے، خواہ شکرانے کی یا کسی جنایت و قصور کی، اس کے لئے اس کے عوض صدقہ و خیرات کرنا جائز نہیں۔

سوال  : کیا ہَدِی کے جانور کو سرزمین حرم کے علاوہ کسی اور جگہ ذبح کرنا جائز ہے؟

 جی نہیں! یَدی کے جانور کو سرزمین حرم کے علاوہ کسی اور جگہ ذبح کرنا جائز نہیں۔ اس کے وجوب کی صورت میں حاجی بغیر قربانی کئے عہدہ برآ نہیں ہو سکتا۔ اسی طرح وطن واپس آ کر ایک جانور کی جگہ ہزار جانور بھی قربان کرے تو واجب ادا نہیں ہوگا، کیونکہ اس کے لئے حرم کی سرزمین شرط ہے۔

سوال  : کیا قربانی سے پہلے حلق کروانا (سر منڈانا) جائز ہے؟

 جی نہیں! قربانی سے پہلے حلق کروانا (سر منڈانا) جائز نہیں۔

سوال : قربانی کرنے کا طریقہ کیا ہے؟

 قربانی دینے والے کا اپنے ہاتھ سے قربانی کرنا افضل ہے۔ اگر خود جانور ذبح نہ کر سکتا ہو تو کوئی دوسرا مسلمان اس کی جگہ جانور ذبح کر سکتا ہے، مگر اجازت ضروری ہے، اور سنت یہ ہے کہ اپنے سامنے قربانی کروائے۔ بھوکا، پیاسا جانور ذبح نہ کیا جائے اور نہ ہی اس کے سامنے چھری تیز کی جائے۔ جب تک ٹھنڈا نہ ہو جائے کھال نہ اتاریں، جانور کو قبلہ رُو پہلو پر لٹائیں اور داہنا پاؤں اس کے شانے پر رکھیں۔

حضرت جابر بن عبد اللہ رضی اللہ عنہما سے مروی ہے کہ عید کے دن حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے دو مینڈھے ذبح فرمائے اور انہیں قبلہ رخ کر کے عرض کیا :

إِنِّيْ وَجَّهْتُ وَجْهِيَ لِلَّذِيْ فَطَرَ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضَ حَنِيْفًا وَمَا أَنَا مِنَ الْمُشْرِکِيْن، اِنَّ صَلَاتِی وَنُسُکِيْ وَمَحْيَايَ وَمَمَاتِی ﷲِ رَبِّ الْعٰلَمِيْن، لَا شَرِيْکَ لَهُ وَبِذَالِکَ اُمِرْتُ وَأَنَا مِنَ الْمُسْلِمِيْنَ.

(ابن ماجه، السنن، کتاب الأضاحی، باب أضاحی رسول اللہ صلی الله عليه وآله وسلم ، 3 : 530، رقم : ٣١٢١ 

ے شک میں نے اپنا رُخ (ہر سمت سے ہٹا کر) یکسوئی سے اس (ذات) کی طرف پھیر لیا ہے، جس نے آسمانوں اور زمین کو بے مثال پیدا فرمایا ہے اور (جان لو کہ) میں مشرکوں میں سے نہیں ہوں۔ بے شک میری نماز اور میرا حج اور قربانی (سمیت سب بندگی) اور میری زندگی اور میری موت اللہ کے لیے ہے جو تمام جہانوں کا رب ہے۔ اس کا کوئی شریک نہیں اور اسی کا مجھے حکم دیا گیا ہے اور میں (جمیع مخلوقات میں) سب سے پہلا مسلمان ہوں۔

پھر

اَللّٰهُمَّ مِنْکَ بِسْمِ الله اَللهُ اَکْبَر

پڑھ کر تیز چھری سے جلد ذبح کرے۔ اگر اپنی قربانی کا جانور ذبح کرے تو ذبح کرنے کے بعد پڑھے :

اَللّٰهُمَّ تَقَبَّلْ مِنِّيْ کَمَا تَقَبَّلْتَ مِنْ خَلِيْلِکَ اِبْرَاهِيْم وَحَبِيْبِکَ مُحَمَّد صلی الله عليه وآله وسلم.

اگر دوسرے کی قربانی کا جانور ذبح کرے تو مِنّی کی جگہ مِنْ پڑھ کر اس کا نام لے۔

سوال  : کتنی عمر کا اونٹ، گائے، بکری اور بھیڑ قربانی کے لئے جائز ہے؟

 اونٹ کے لئے پانچ سال، گائے کے لئے دو سال اور بکرے کے لئے ایک سال کا ہونا ضروری ہے، اگر عمر اس سے ایک دن بھی کم ہوئی تو قربانی جائز نہیں ہو گی، اگرچہ بھیڑ اور دنبہ کے لئے بھی ایک سال کا ہونا ضروری ہے، مگر اس میں یہ رعایت دی گئی ہے کہ اگر چھ ماہ یا اس سے زیادہ عمر ہے، مگر اتنے فربہ اور صحت مند ہیں کہ دیکھنے میں ایک سال کے محسوس ہوتے ہیں توان کی قربانی جائز ہے۔

سوال : کن جانوروں کی قربانی کرنا جائز نہیں؟

 حدیث مبارکہ کی روشنی میں درج ذیل چار قسم کے جانوروں کی قربانی جائز نہیں :

اندھا، جس کا اندھا پن ظاہر ہے۔

بیمار، جس کی بیماری ظاہر ہو رہی ہو۔

لنگڑا، جس کا لنگڑا پن ظاہر ہو۔

لاغر، جس کی ہڈیوں میں مغز نہ ہو۔

(ابن ماجه، السنن، کتاب الأضاحی، باب مايکره ان يضحی به، 3 : 542، رقم : 3144)

سوال : گائے اور اونٹ کی قربانی میں کتنے لوگ شریک ہو سکتے ہیں؟

 گائے اور اونٹ کی قربانی میں سات لوگ شریک ہو سکتے ہیں۔ حضرت جابر بن عبد اللہ رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ حدیبیہ (کے مقام) میں ہم لوگوں نے اونٹ اور گائے دونوں کو سات سات آدمیوں کی طرف سے قربانی کیا تھا۔

(ابن ماجه، السنن، کتاب الأضاحی، باب عن کم تجزی البدنة والبقرة، 3 : 536، رقم : 3132)

چاہے سب قربانی کرنے والے ہوں اور چاہے بعض قربانی کرنے والے اور بعض عقیقہ کرنے والے لیکن کسی ایسے شخص کا حصہ نہیں ڈال سکتے جو محض گوشت کے حصول کے لئے شریک ہو رہا ہو کیونکہ اس طرح کسی کی بھی قربانی نہیں ہوگی۔

سوال  : قربانی کے گوشت کی تقسیم کا مسنون طریقہ کیا ہے؟

قربانی کے گوشت کے تین حصے کرنا افضل ہے۔ اس کی تقسیم کا مسنون طریقہ یہ ہے کہ ان میں سے ایک حصہ فقراء و مساکین کے لئے، دوسرا دوست و احباب اور اعزاء و اقارب کے لئے جبکہ تیسرا گھر والوں کے لئے مختص کیا جائے۔

سوال  : کیا قربانی کے جانور کی کھال اور گوشت قصاب کو بطور اجرت دینا جائز ہے؟

 قربانی کے جانور کی کھال اور گوشت وغیرہ قصاب کو بطور اجرت دینا جائز نہیں۔ اجرت علیحدہ دینی چاہیے۔

سوال  : قربانی کی کھال کے مصارف کیا ہیں؟

 قربانی کی کھال اگر کوئی شخص اپنے ذاتی مصرف میں لانا چاہے تو لا سکتا ہے، مثلاً جائے نماز بنا لے۔ تمام فقہاء کرام کے نزدیک ایسا جائز ہے۔ لیکن اگر فروخت کریں تو اس کی قیمت مناسب مصرف میں استعمال کی جائے اور ہرگز اپنے پاس نہ رکھی جائے۔

یہ کھالیں کسی بھی فلاحی و دینی کام میں استعمال کی جا سکتی ہیں۔ غربا و مساکین کی فلاح و بہبود کے لیے کام کرنے والے بااعتماد فلاحی ادارے کو دی جا سکتی ہیں۔ غریب و مستحق طلبا کی تعلیم پر خرچ کی جا سکتی ہیں۔ بیمار لوگوں کو طبی سہولیات فراہم کرنے کے لیے خرچ کی جا سکتی ہیں۔

سوال  : ذبیحہ (قربانی کے جانور) کے کن اعضاء کو کھانے سے منع کیا گیا ہے؟

 ذبیحہ یعنی ذبح شدہ جانور کے سات اعضاء کو کھانے سے منع کیا گیا ہے جو درج ذیل ہیں :

مرارہ (پِتہ)

مثانہ

محیاۃ (شرم گاہ)

آلہ تناسل

خصیے

غدود

دم مسفوح (بہتا ہوا خون)

حضرت عبد اللہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے :

کَانَ رَسُوْلُ اللهِ صلی الله عليه وآله وسلم يَکْرَهُ مِنَ الشَّاةِ سَبْعًا : اَلْمَرَارَة، والْمَثَانَةَ، والْمَحْيَاة، والذَّکَرَ، وَالْاُنْثَيَيْنِ، وَالْغُدَّةَ، والدَّمَ، وَکَانَ أَحَبَّ الشَّاةِ إِلَی رَسُوْلِ اللهِ صلی الله عليه وآله وسلم مُقَّدَّمُهَا.

(طبرانی، المعجم الاوسط، باب الياءِ من اسمهُ يعقوب، 10 : 217، رقم : 9476)

حضورنبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ذبیحہ کے سات اعضاء کو مکروہ شمار کرتے تھے، جو یہ ہیں : مرارہ (پِتہ)، مثانہ، محیاۃ (شرم گاہ)، آلہ تناسل، دو خصیے، غدود اور خون۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو بکری کا مقدم حصہ زیادہ پسند تھا۔

32 thoughts on “قرآن و سنت کی روشنی میں قربانی کے احکام و مسائل

  1. I like this post, enjoyed this one regards for putting up. “It is well to give when asked but it is better to give unasked, through understanding.” by Kahlil Gibran.

  2. Hi this is kinda of off topic but I was wondering if blogs use WYSIWYG editors or if you have to manually code with HTML. I’m starting a blog soon but have no coding experience so I wanted to get advice from someone with experience. Any help would be enormously appreciated!

  3. Wow, incredible blog layout! How long have you been blogging for? you made blogging look easy. The overall look of your web site is wonderful, let alone the content!

  4. whoah this blog is excellent i love reading your articles. Keep up the good work! You know, a lot of people are hunting around for this info, you could help them greatly.

  5. Magnificent goods from you, man. I’ve have in mind your stuff prior to and you are simply extremely excellent. I actually like what you’ve acquired right here, certainly like what you are stating and the way through which you say it. You are making it entertaining and you continue to take care of to stay it sensible. I cant wait to read much more from you. This is actually a tremendous site.

  6. I’m still learning from you, as I’m making my way to the top as well. I absolutely enjoy reading all that is written on your blog.Keep the posts coming. I loved it!

  7. Thanks , I’ve just been searching for information about this topic for a while and yours is the best I have discovered till now. However, what about the bottom line? Are you positive concerning the source?

  8. Those are yours alright! . We at least need to get these people stealing images to start blogging! They probably just did a image search and grabbed them. They look good though!

  9. What’s Going down i am new to this, I stumbled upon this I’ve found It positively helpful and it has aided me out loads. I’m hoping to contribute & assist other users like its aided me. Good job.

  10. This is the fitting weblog for anybody who wants to search out out about this topic. You realize so much its almost laborious to argue with you (not that I really would need…HaHa). You undoubtedly put a new spin on a topic thats been written about for years. Great stuff, simply nice!

  11. You can certainly see your enthusiasm in the work you write. The world hopes for more passionate writers like you who are not afraid to say how they believe. Always follow your heart.

  12. What Is Wealth Signal? Wealth Signal isn’t just a financial tool; it’s a new way of thinking about and achieving wealth. Unlike traditional methods that focus on external strategies, Wealth Signal emphasizes changing your internal mindset.

  13. What is CogniCare Pro? CogniCare Pro is 100 natural and safe to take a cognitive support supplement that helps boost your memory power. This supplement works greatly for anyone of any age and without side effects

  14. Simply wish to say your article is as astonishing. The clearness in your post is just nice and i could assume you are an expert on this subject. Well with your permission let me to grab your RSS feed to keep updated with forthcoming post. Thanks a million and please keep up the rewarding work.

  15. Can I just say what a relief to find somebody who actually knows what theyre speaking about on the internet. You undoubtedly know the way to convey an issue to mild and make it important. More folks must read this and perceive this facet of the story. I cant imagine youre not more in style since you definitely have the gift.

  16. I’ve been exploring for a little for any high-quality articles or weblog posts on this kind of area . Exploring in Yahoo I finally stumbled upon this site. Studying this info So i’m satisfied to express that I’ve a very excellent uncanny feeling I found out just what I needed. I so much unquestionably will make certain to do not disregard this web site and give it a glance on a continuing basis.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *