Raat Aur Shayar- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | رات اور شاعر

Raat Aur Shayar- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | رات اور شاعر

رات اور شاعر

Raat Aur Shayar

 

رات

Raat

 

کيوں ميری چاندنی ميں پھرتا ہے تو پريشاں
خاموش صورتِ گل ، مانند بو پريشاں

Kyun Meri Chandni Mein Phirta Hai Tu Preshan
Khamosh Soorat-e-Gul, Manind-e-Bu Preshan

 

تاروں کے موتيوں کا شايد ہے جوہری تو
مچھلی ہے کوئی ميرے دريائے نور کی تو

Taron Ke Moutiyon Ka Shaid Hai Jouhari Tu
Machli Hai Koi Mere Darya-e-Noor Ki Tu

 

يا تو مری جبيں کا تارا گرا ہوا ہے
رفعت کو چھوڑ کر جو بستی ميں جا بسا ہے

Ya Tu Meri Jabeen Ka Tara Gira Huwa Hai
Riffat Ko Chor Kar Jo Pasti Mein Ja Basa Hai

 

خاموش ہو گيا ہے تار رباب ہستی
ہے ميرے آئنے ميں تصوير خواب ہستی

Khamosh Ho Gya Hai Tar-e-Rabab–E-Hasti
Hai Mere Aaeene Mein Tasveer-e-Khawab-e-Hasti

 

دريا کی تہ ميں چشم گرادب سو گئی ہے
ساحل سے لگ کے موج بے تاب سو گئی ہے

Darya Ki Teh Mein Chashm-e-Gard Ab So Gyi Hai
Sahil Se Lag Ke Mouj-e-Betaab So Gyi Hai

 

بستی زميں کی کيسی ہنگامہ آفريں ہے
يوں سو گئی ہے جيسے آباد ہی نہيں ہے

Basti Zameen Ki Kaisi Hangama Afreen Hai
Yun So Gyi Hai Jaise Abad Hi Nahin Hai

 

شاعر کا دل ہے ليکن ناآشنا سکوں سے
آزاد رہ گيا تو کيونکر مرے فسوں سے؟

Shayar Ka Dil Hai Lekin Na-Ashna Sukoon Se
Azad Reh Gya Tu Kyunkar Mere Fusoon Se ?

 

 

 

شاعر

Shayar

 

ميں ترے چاند کی کھيتی ميں گہر بوتا ہوں
چھپ کے انسانوں سے مانند سحر روتا ہوں

Main Tere Chand Ki Khaiti Mein Guhar Bota Hun
Chup Ke Insanon Se Manind-e-Sehar  Rota Hun

 

دن کی شورش ميں نکلتے ہوئے گھبراتے ہيں
عزلت شب ميں مرے اشک ٹپک جاتے ہيں

Din Ki Sourish Mein Niklte Huwe Ghabrate Hain
Uzlat-e-Shab Mein Mere Ashk Tapak Jate Hain

 

مجھ ميں فرياد جو پنہاں ہے ، سناؤں کس کو
تپش شوق کا نظارہ دکھاؤں کس کو

Mujh Mein Faryad Jo Pinhan Hai, Sunaon Kis Ko
Tapish-e-Shauq Ka Nazzara Dikhaon Kis Ko

 

برق ايمن مرے سينے پہ پڑی روتی ہے
ديکھنے والی ہے جو آنکھ ، کہاں سوتی ہے

Barq-e-Aeman  Mere Seene Pe Pari Roti Hai
Dekhne Wali Hai Jo Ankh, Kahan Soti Hai!

 

صفت شمع لحد مردہ ہے محفل ميری
آہ، اے رات! بڑی دور ہے منزل ميری

Sift-e-Shama-e-Lehd Murda Hai Mehfil Meri
Ah, Ae Raat! Bari Door Hai Manzil Meri

 

عہد حاضر کی ہوا راس نہيں ہے اس کو
اپنے نقصان کا احساس نہيں ہے اس کا

Ehd-e-Hazir Ki Hawa Raas Nahin Hai Iss Ko
Apne Nuksan Ka Ehsas Nahin Hai Iss Ko

 

ضبط پيغام محبت سے جو گھبراتا ہوں
تيرے تابندہ ستاروں کو سنا جاتا ہوں

Zabt-e-Pegham-e-Mohabbat Se Ghabrata Hun
Tere Tabindah Sitaron Ko Suna Jata Hun

One thought on “Raat Aur Shayar- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | رات اور شاعر

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *