Siqaliya- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | صقليہ

Siqaliya- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | صقليہ

صقليہ

Siqaliya

 

رو لے اب دل کھول کر اے ديدۂ خوننابہ بار
وہ نظر آتا ہے تہذيب حجازی کا مزار

Ro Le Ab Dil Khol Kar Ae Didah-e-Khunanaba Bar
Woh Nazar Ata Hai Tehzeeb-e-Hijazi Ka Mazar


تھا يہاں ہنگامہ ان صحرا نشينوں کا کبھی
بحر بازی گاہ تھا جن کے سفينوں کا کبھی

Tha Yahab Hangama In Sehra Nasheenon Ka Kabhi
Beher Bazi-Gah Tha Jin Ke Safeenon Ka Kabhi


زلزلے جن سے شہنشاہوں کے درباروں ميں تھے
بجليوں کے آشيانے جن کی تلواروں ميں تھے

Zalzale Jin Se Shehanshahon Ke Darbaron Mein The
Bijliyon Ke Aashiyane Jin Ki Talwaron Mein The


اک جہان تازہ کا پيغام تھا جن کا ظہور
کھا گئی عصر کہن کو جن کی تيغ ناصبور

Ek Jahan-e-Taza Ka Pegham Tha Jin Ka Zahoor
Kha Gyi Asr-e-Kuhan Ko Jin Ki Taegh-e-Na-Saboor


مردہ عالم زندہ جن کی شورش قم سے ہوا
آدمی آزاد زنجير توہم سے ہوا

Murda Alam Zinda Jin Ki Sourish-e-Qum Se Huwa
Admi Azad Zanjeer-e-Toham Se Huwa


غلغلوں سے جس کے لذت گير اب تک گوش ہے
کيا وہ تکبير اب ہميشہ کے ليے خاموش ہے

Ghulghulon Se Jis Ke Lazzat-Geer Ab Tak Gosh Hai
Kya Woh Takbeer Ab Hamasha Ke Liye Khamosh Hai


آہ اے سسلی! سمندرکی ہے تجھ سے آبرو
رہنما کی طرح اس پانی کے صحرا ميں ہے تو

Aah Ae Sisli! Samunder Ki Hai Tujh Se Abru
Rehnama Ki Tarah Iss Pani Ke Sehra Mein Hai Tu


زيب تيرے خال سے رخسار دريا کو رہے
تيری شمعوں سے تسلی بحر پيما کو رہے

Zaib Tere Khal Se Rukhsar-e-Darya Ko Rahe
Teri Shamaon Se Tasalli Beher-Pema Ko Rahe


ہو سبک چشم مسافر پر ترا منظر مدام
موج رقصاں تيرے ساحل کی چٹانوں پر مدام

Ho Subak Chashme-e-Musafir Par Tera Manzar Madaam
Mouj Raqsaan Tere Sahil Ki Chatanon Par Madaam


تو کبھی اس قوم کی تہذيب کا گہوارہ تھا
حسن عالم سوز جس کا آتش نظارہ تھا

Tu Kabhi Uss Qoum Ki Tehzeeb Ka Gehwara Tha
Husn-e-Alam Souz Jis Ka Atish-e-Nazzara Tha


نالہ کش شيراز کا بلبل ہوا بغداد پر
داغ رويا خون کے آنسو جہاں آباد پر

Nala-Kash Sheeraz Ka Bulbul Huwa Baghdad Par
Dagh Roya Khoon Ke Ansu Jahan-Abad Par


آسماں نے دولت غرناطہ جب برباد کی
ابن بدروں کے دل ناشاد نے فرياد کی

Asman Ne Doulat-e-Gharnata Jab Barbad Ki
Ibn-e-Badroon Ke Dil-e-Na-Shaad Ne Faryad Ki


غم نصيب اقبال کو بخشا گيا ماتم ترا
چن ليا تقدير نے وہ دل کہ تھا محرم ترا

Gham Naseeb Iqbal Ko Bakhsa Gya Matam Tera
Chun Liya Taqdeer Ne Woh Dil Ke Tha Mehram Tera


ہے ترے آثار ميں پوشيدہ کس کی داستاں
تيرے ساحل کی خموشی ميں ہے انداز بياں

Hai Tere Asaar Mein Poshidah Kis Ki Dastan
Tere Sahil Ki Khamoshi Mein Hai Andaz-e-Byan


درد اپنا مجھ سے کہہ ، ميں بھی سراپا درد ہوں
جس کی تو منزل تھا ، ميں اس کارواں کی گرد ہوں

Dard Apna Mujh Se Keh, Main Bhi Sarapa Dard Hun
Jis Ki Tu Manzil Tha, Main Uss Karwan Ki Gard Hun


رنگ تصوير کہن ميں بھر کے دکھلا دے مجھے
قصہ ايام سلف کا کہہ کے تڑپا دے مجھے

Rang Tasveer-e-Kuhan Mein Bhar Ke Dikhla De Mujhe
Qissa Ayyam-e-Salaf Ka Keh Ke Tarpa De Mujhe


ميں ترا تحفہ سوئے ہندوستاں لے جاؤں گا
خود يہاں روتا ہوں ، اوروں کو وہاں رلوائوں گا

Main Tera Tohfa Sooye Hindustan Le Jaun Ga
Khud Yahan Rota Hun, Auron Ko Wahan Rulaon Ga

 

 

Abdul Qadir Ke Naam- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | عبد القادر کے نام

Firaq- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | فراق

Payam-e-Ishq- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | پيام عشق

3 thoughts on “Siqaliya- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | صقليہ

  1. Pingback: bk8
  2. Pingback: ปลูกผม
  3. Pingback: chobreview.com

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *