Sitara- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | ستارہ

Sitara- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | ستارہ

ستارہ

Sitara

 

قمر کا خوف کہ ہے خطرۂ سحر تجھ کو
مآل حسن کی کيا مل گئی خبر تجھ کو؟

Qamar Ka Khof Ke Hai Khatra-e-Sehar Tujh Ko
Maal-e-Husn Ki Kya Mil Gyi Khabar Tujh Ko?

 

متاع نور کے لٹ جانے کا ہے ڈر تجھ کو
ہے کيا ہراس فنا صورت شرر تجھ کو؟

Mataa-e-Noor Ke Lut Jane Ka Hai Dar Tujh Ko
Hai Kya Haras-e-Fana Soorat-e-Sharar Tujh Ko?

 

زميں سے دور ديا آسماں نے گھر تجھ کو
مثال ماہ اڑھائی قبائے زر تجھ کو

Zameen Se Door Diya Aasman Ne Ghar Tujh Ko
Misal-e-Mah Urhayi Qabaye Zar Tujh Ko

 

غضب ہے پھر تری ننھی سی جان ڈرتی ہے
تمام رات تری کانپتے گزرتی ہے

Ghazab Hai Phir Teri Nanhi Si Jaan Derti Hai!
Tamam Raat Teri Kanpte Guzerti Hai

 

چمکنے والے مسافر! عجب يہ بستی ہے
جو اوج ايک کا ہے ، دوسرے کی پستی ہے

Chamakne Wale Musafir! Ajeeb Ye Basti Hai
Jo Auj Aik Ka Hai, Dosre Ki Pasti Hai

 

اجل ہے لاکھوں ستاروں کی اک ولادت مہر
فنا کی نيند مے زندگی کی مستی ہے

Ajal Hai Lakhon Sitaron Ki Ek Waladat-e-Mehr
Fana Ki Neend Mai-e-Zindagi Ki Masti Hai

 

وداع غنچہ ميں ہے راز آفرينش گل
عدم ، عدم ہے کہ آئينہ دار ہستی ہے

Widaa-e-Ghuncha Mein Hai Raaz-e-Afrainash-e-Gul
Adam, Adam Hai Ke Aaeena Daar-e-Hasti Hai

 

سکوں محال ہے قدرت کے کارخانے ميں
ثبات ايک تغير کو ہے زمانے ميں

Sukoon Muhal Hai Qudrat Ke Kaarkhane Mein
Sabat Aik Taghiyur Ko Hai Zamane Mein

 

Bilad-e-Islamia- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | بلاد اسلاميہ

Pooch Iss Se K Maqbool Hai Fitrat Ki Gawahi – Allama Iqbal Poetry

Mir-e-Sipah Na Saza, Lashkariyan Shakista Saf – Allama Iqbal

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *