Subah Ka Sitara - Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | صبح کا ستارہ

Subah Ka Sitara – Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | صبح کا ستارہ

صبح کا ستارہ

Subah Ka Sitara


لطف ہمسايگی شمس و قمر کو چھوڑوں

اور اس خدمت پيغام سحر کو چھوڑوں

Lutf-e-Humsayegi-e-Shams-o-Qamar Ko Chorun
Aur Iss Khidmat-e-Paigham-e-Sehar Ko Chorun

 

ميرے حق ميں تو نہيں تاروں کی بستی اچھی
اس بلندی سے زميں والوں کی پستی اچھی

Mere Haq Mein To Nahin Taron Ki Basti Achi
Iss Bulandi Se Zameen Walon Ki Pasti Achi

 

آسماں کيا ، عدم آباد وطن ہے ميرا
صبح کا دامن صد چاک کفن ہے ميرا

Aasman Kya, Adam Abad Watan Hai Mera
Subah Ka Daman-e-Sad Chaak Kafan Hai Mera

 

ميری قسمت ميں ہے ہر روز کا مرنا جينا
ساقی موت کے ہاتھوں سے صبوحی پينا

Meri Qismat Mein Hai Har Roz Ka Merna Jeena
Saqi-e-Mout Ke Hathon Se Saboohi Peena

 

نہ يہ خدمت، نہ يہ عزت، نہ يہ رفعت اچھی
اس گھڑی بھر کے چمکنے سے تو ظلمت اچھی

Na Ye Khidmat, Na Ye Izzat, Na Ye Riffat Achi
Iss Ghari Bhar Ke Chamakne Se To Zulmat Achi

 

ميری قدرت ميں جو ہوتا، تو نہ اختر بنتا
قعر دريا ميں چمکتا ہوا گوہر بنتا

Meri Qudrat Mein Jo Hota To Na Akhtar Banta
Qa’ar-e-Darya Mein Chamakta Huwa Gohar Banta

 

واں بھی موجوں کی کشاکش سے جو دل گھبراتا
چھوڑ کر بحر کہيں زيب گلو ہو جاتا

Waan Bhi Moujon Ki Kashakash Se Jo Dil Ghabrata
Chor Kar Behr Kahin Zaib-e-Guloo Ho Jata

 

ہے چمکنے ميں مزا حسن کا زيور بن کر
زينت تاج سر بانوئے قيصر بن کر

Hai Chamakne Mein Maza Husn Ka Zaiwar Ban Kar
Zeenat-e-Taj-e-Sar-e-Bano-e-Qaisar Ban Kar

 

ايک پتھر کے جو ٹکڑے کا نصيبا جاگا
خاتم دست سليماں کا نگيں بن کے رہا

Aik Pathar Ke Jo Tukre Ka Nasiba Jaaga
Khatam-e-Dast-e-Suleman Ka Nageen Ban Ke Raha

 

ايسی چنروں کا مگر دہر ميں ہے کام شکست
ہے گہر ہائے گراں مايہ کا انجام شکست

Aesi Cheezon Ka Magar Dehr Mein Hai Kaam Shikast
Hai Guhr  Haye Giran Maya Ka Anjaam Shikast

 

زندگی وہ ہے کہ جو ہو نہ شناسائے اجل
کيا وہ جينا ہے کہ ہو جس ميں تقاضائے اجل

Zindagi Woh Hai Ke Jo Ho Na Shanasaye Ajal
Kya Woh Jeena Hai Ke Ho Jis Mein Taqazaye Ajal

 

ہے يہ انجام اگر زينت عالم ہو کر
کيوں نہ گر جائو ں کسی پھول پہ شبنم ہو کر

Hai Ye Anjaam Agar Zeenat-e-Alam Ho Kar
Kyun Na Gir Jaun Kisi Phool Pe Shabnam Ho Kar!

 

کسی پيشانی کے افشاں کے ستاروں ميں رہوں
کس مظلوم کی آہوں کے شراروں ميں رہوں

Kisi Paishani Ke Afshan Ke Sitaron Mein Rahun
Kisi Mazloom Ki Aahon Ke Shiraron Mein Rahun

 

اشک بن کر سرمژگاں سے اٹک جائوں ميں
کيوں نہ اس بيوی کی آنکھوں سے ٹپک جائوں ميں

Ashak Ban Kar Sir-e-Mazgan Se Atak Jaun Main
Kyun Na Uss Biwi Ki Ankhon Se Tapak Jaun Main

 

جس کا شوہر ہو رواں، ہو کے زرہ ميں مستور
سوئے ميدان وغا ، حب وطن سے مجبور

Jis Ka Shohar Ho Rawan Ho Ke Zrah Mein Mastoor
Sooye Maidan-e-Dagha, Hub-e-Watan Se Majboor

 

ياس و اميد کا نظارہ جو دکھلاتی ہو
جس کی خاموشی سے تقرير بھی شرماتی ہو

Yaas-o-Umeed Ka Nazara Jo Dikhati Ho
Jis Ki Khamoshi Se Taqreer Bhi Sharmati Ho

 

جس کو شوہر کی رضا تاب شکيبائی دے
اور نگاہوں کو حيا طاقت گويائی دے

Jis Ko Shohar Ki Raza Taab-e-Shakeebai De
Aur Nigahon Ko Haya Taqat-e-Goyai De

 

زرد ، رخصت کی گھڑی ، عارض گلگوں ہو جائے
کشش حسن غم ہجر سے افزوں ہو جائے

Zard., Rukhsat Ki Ghari, Aariz Gulgoon Ho Jaye
Kashish-e-Husn Gham-e-Hijar Se Afzoon Ho Jaye

 

لاکھ وہ ضبط کرے پر ميں ٹپک ہی جائوں
ساغر ديدئہ پرنم سے چھلک ہی جائوں

Lakh Woh Zabt Kare Par Main Tapak Ho Jaun
Saghir-e-Didah-e-Purnam Se Chhalak Ho Jaun

 

خاک ميں مل کے حيات ابدی پا جائوں
عشق کا سوز زمانے کو دکھاتا جائوں

Khak Mein Mil Ke Hayat-e-Abdi Pa Jaun
Ishq Ka Souz Zamane Ko Dikhata Jaun

 

 

Jugnoo – Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | جگنو

Sargazisht-e-Adam – Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | سر گزشتِ آدم

Bilal – Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | بلال

2 thoughts on “Subah Ka Sitara – Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | صبح کا ستارہ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *