Syed Ki Loh-e-Turbat- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | سیّد کی لوحِ تُربت

Syed Ki Loh-e-Turbat- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | سیّد کی لوحِ تُربت

سیّد کی لوحِ تُربت

Syed Ki Loh-e-Turbat

 

اے کہ تيرا مُرغ جاں تارِ نَفَس ميں ہے اسير
اے کہ تيری روح کا طائر قَفس ميں ہے اسير

Ae Ke Tera Murgh-e-Jaan Taar-e-Nafas Mein Hai Aseer
Ae Ke Teri Rooh Rooh Ka Taeer Qafas Mein Hai Aseer

 

اس چمن کے نغمہ پیراؤں کی آزادی تو ديکھ
شہر جو اجڑا ہوا تھا اس کی آبادی تو ديکھ

Iss Chaman Ke Naghma Pairaon Ki Azadi To Dekh
Sheher Jo Ujra Huwa Tha, Uss Ki Abadi To Dekh

 

فکر رہتی تھی مجھے جس کی وہ محفل ہے يہی
صبر و اِستقِلال کی کھيتی کا حاصل ہے يہی

Fikr Rehti Thi Mujhe Jis Ki Woh Mehfil Hai Yehi
Sabr-o-Istaqlaal Ki Khaiti Ka Hasil Hai Yehi

 

سنگ تُربت ہے مرا  گِرويدَہ ِ تقرير ديکھ
چشم باطن سے ذرا اس لوح کی تَحرير ديکھ

Sang-e-Turbat Hai Mera Gerwida-e-Taqreer Dekh
Chashm-e-Batin Se Zara Iss Loh Ki Tehreer Dekh

 

مُدعا تيرا اگر دنيا ميں ہے تعليمِ ديں
ترک دنيا قوم کو اپنی نہ سکھلانا کہيں

Mudda Tera Agar Dunya Mein Hai Taleem-e-Den
Turk-e-Dunya Qoum Ko Apni Na Sikhlana Kahin

 

وا نہ کرنا فرقہ بندی کے ليے اپنی زُباں
چھپ کے ہے بيٹھا ہوا ہنگامہ مَحشَر يہاں

Wa Na Karna Firqa Bandi Ke Liye Apni Zuban
Chup Ke Hai Baitha Huwa Hangama-e-Mehshar Yahan

 

وصل کے اسباب  پيدا ہوں تری تحرير سے
ديکھ کوئی دل نہ دکھ جائے تری تقرير سے

Wasl Ke Asbab Paida Hon Teri Tehreer Se 
Dekh! Koi Dil Na Dukh Jaye Teri Taqreer Se

 

محفل نَو ميں پُرانی داستانوں کو نہ چھيڑ
رنگ پر جو اب نہ آئيں اُن فسانوں کو نہ چھيڑ

Mehfil-e-Nau Mein Purani Dastanon Ko Na Chhair
Rang Par Jawab Na Ayen Un Afsanon Ko Na Chhair

 

تو اگر کوئی  مُدبّر ہے تو  سُن ميری صدا
ہے دليری دستِ اربابِ سياست کا  عصا

Tu Agar Koi Mudabbar Hai To Sun Meri Sada
Hai Dalairi Dast-e-Arbab-e-Siasat Ka Asa

 

عرضِ مطلب سے جھجک جانا نہيں زيبا تجھے
نيک ہے  نيت اگر تيری  تو   کيا پروا  تجھے

Arz-e-Matlab Se Jhijhak Jana Nahin Zaiba Tujhe
Naik Hai Niyyat Agar Teri To Kya Parwa Tujhe

 

بندہ مومن کا دل بيم و ريا سے پاک ہے
قوت فرماں روا کے سامنے بے باک ہے

Banda-e-Momin Ka Dil Beem-o-Riya Se Paak Hai
Quwwat-e-Farman-Rawa Ke Samne Bebaak Hai

 

ہو اگر ہاتھوں ميں تيرے خامۂ مُعجِز رقم
شيشہ دل ہو  اگر تيرا  مثالِ جام جم

Ho Agar Hathon Mein Tere Khana-e-Maujiz Raqam
Sheesha-e-Dil  Ho Agar Tera Misal-e-Jaam-o-Jam

 

پاک رکھ اپنی زُباں ، تلميذِ  رَحمانی ہے تو
ہو نہ جائے ديکھنا تيری صدا بے آبرو

Paak Rakh Apni Zuban, Talmeez-e-Rehmani Hai Tu
Ho Na Jaye Dekhna Teri Sada Be-Abru!

 

سونے والوں کو جگا دے شعر کے اعجاز سے
خِرمَنِ  باطل جلا دے شعلہ آواز سے

Sone Walon Ko Jaga De Shair Ke Ejaz Se
Khirman-e-Batil Jala De Shaola-e-Awaz Se

 

Gul-e-Pazmurda- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | گل پژمردہ

Dard-e-Ishq- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | درد عشق

Aftab-e-Subah- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | آفتاب صبح

One thought on “Syed Ki Loh-e-Turbat- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | سیّد کی لوحِ تُربت

  1. Pingback: Study in Africa

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *