Tazmeen Bar-Shair-e-Saeeb- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | تضمين برشعر صائب

تضمين برشعر صائب

Tazmeen Bar-Shair-e-Saeeb

 

کہاں اقبال تو نے آ بنايا آشياں اپنا
نوا اس باغ ميں بلبل کو ہے سامان رسوائی

Kahan Iqbal Tu Ne Aa Banaya Ashiyan Apna
Nawa Iss Bagh Mein Bulbul Ko Hai Saman-e-Ruswai

 

شرارے وادی ايمن کے تو بوتا تو ہے ليکن
نہيں ممکن کہ پھوٹے اس زميں سے تخم سينائی

Sharare Wadi-e-Ayman Ke Tu Bota To Hai Lekin
Nahin Mumkin Ke Phoote Iss Zameen Se Tukhme-e-Seenai

 

کلی زور نفس سے بھی وہاں گل ہو نہيں سکتی
جہاں ہر شے ہو محروم تقاضائے خود افزائی

Kali Roz-e-Nafas Se Bhi Wahan Gul Ho Nahin Sakti
Jahan Har Shay Ho Mehroom-e-Taqazaye Khud Afzai

 

قيامت ہے کہ فطرت سو گئی اہل گلستاں کی
نہ ہے بيدار دل پيری، نہ ہمت خواہ برنائی

Qayamat Hai Ke Fitrat Sou Gyi Ahl-e-Gulistan Ki
Na Hai Baidar Dil Peeri, Na Himmat Khawah Barnai

 

دل آگاہ جب خوابيدہ ہو جاتے ہيں سينوں ميں
نو اگر کے ليے زہراب ہوتی ہے شکر خائی

Dil Agah Jab Khawabida Ho Jate Hain Seenon Mein
Nawa Gar Ke Liye Zaherab Hoti Hai Shakar Khai

 

نہيں ضبط نوا ممکن تو اڑ جا اس گلستاں سے
کہ اس محفل سے خوشتر ہے کسی صحرا کی تنہائی

Nahin Zabt-e-Nawa Mumkin To Urh Ja Iss Gulistan Se
Ke Iss Mehfil Se Khoshtar Hai Kisi Sehra Ki Tanhai

 

ہماں بہتر کہ ليلی در بياباں جلوہ گر باشد
ندارد تنگناے شہر تاب حسن صحرائی

Haman Behtar Ke Laila Dar Bayan Jalwa Gar Bashad
Nadarad Tangnaye Sheher  Taab-e-Husn Sehrai

 

 

 

 

Phoolon Ki Shehzadi- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | پھولوں کی شہزادی

Musalman Aur Taleem-e-Jadeed- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | مسلمان اورتعليم جديد

Bilal (R.A.)- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | بلال رضی اللہ عنہ

3 thoughts on “Tazmeen Bar-Shair-e-Saeeb- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | تضمين برشعر صائب

  1. Pingback: rich89bet

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *