Teri Nigah Firomaya, Hath Hai Kotah - Allama Iqbal Poetry

Teri Nigah Firomaya, Hath Hai Kotah – Allama Iqbal Poetry

Teri Nigah Firomaya, Hath Hai Kotah

Allama Iqbal Poetry (Bal-e-Jibril)

Teri Nigah Firomaya, Hath Hai Kotah
Tera Gunah Ke Nakheel-e-Buland Ka Hai Gunah

تری نگاہ فرومايہ ، ہاتھ ہے کوتاہ
ترا گنہ کہ نخيل بلند کا ہے گناہ

Gala To Ghoont Diya Ahl-e-Madrasa Ne Tera
Kahan Se Aye Sada ‘LA ILAHA ILLALLAH’

گلا تو گھونٹ ديا اہل مدرسہ نے ترا
کہاں سے آئے صدا ‘لا الہ الا اللہ’

Khudi Mein Gum Hai Khudai, Talash Kar Ghafil!
Yehi Hai Tere Liye Ab Salah-e-Kaar Ki Rah

خودی ميں گم ہے خدائی ، تلاش کر غافل
يہی ہے تيرے ليے اب صلاح کار کی راہ

Hadees-e-Dil Kisi Darvaish-e-Be-Gileem Se Puch
Khuda Kare Tujhe Tere Maqam Se Aagah

حديث دل کسی درويش بے گليم سے پوچھ
خدا کرے تجھے تيرے مقام سے آگاہ

Barahna Sar Hai Tu Azam-e-Buland Paida Kar
Yahan Faqt Sar-e-Shaheen Ke Waste Hai Kulah

برہنہ سر ہے تو عزم بلند پيدا کر
يہاں فقط سر شاہيں کے واسطے ہے کلاہ

Na Rahe Sitare Ki Gardish Na Bazi-e-Aflak
Khudi Ki Mout Hai Tera Zawal-e-Naimat-o-Jah

نہ ہے ستارے کی گردش ، نہ بازی افلاک
خودی کی موت ہے تيرا زوال نعمت و جاہ

Utha Main Madrasa-o-Khanqah Se Ghamnaak
Na Zindagi, Na Mohabbat, Na Maarifat, Na Nigah!

اٹھا ميں مدرسہ و خانقاہ سے غم ناک
نہ زندگی ، نہ محبت ، نہ معرفت ، نہ نگاہ

 

2 thoughts on “Teri Nigah Firomaya, Hath Hai Kotah – Allama Iqbal Poetry

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *