Tifl e Sheer Khawar- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | طفل شير خوار

Tifl e Sheer Khawar- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | طفل شير خوار

طفل شير خوار

Tifl e Sheer Khawar

ميں نے چاقو تجھ سے چھينا ہے تو چلاتا ہے تو
مہرباں ہوں ميں ، مجھے نا مہرباں سمجھا ہے تو

Main Ne Chaqu Tujh Se Cheena Hai To Chillata Hai Tu
Mehrban Hun Main, Mujhe Na-Mehrban Samjha Hai Tu

 

پھر پڑا روئے گا اے نووارد اقليم غم
چبھ نہ جائے ديکھنا! ، باريک ہے نوک قلم
Phir Para Roye Ga Ae Nauwarad-e-Aqleem-e-Ghum
Chubh Na Jaye Dekhna! Bareek Hai Nauk-e-Qalam

 

آہ! کيوں دکھ دينے والی شے سے تجھ کو پيار ہے
کھيل اس کاغذ کے ٹکڑے سے ، يہ بے آزار ہے
Ah! Kyun Dukh Dene Wali Shay Se Tujh Ko Pyar Hai
Khail Iss Kaghaz Ke Tukre Se, Ye Be-Azaar Hai

 

گيند ہے تيری کہاں ، چينی کی بلی ہے کد ھر
وہ ذرا سا جانور ٹوٹا ہوا ہے جس کا سر

Gaind Hai Teri Kahan, Cheeni Ki Billi Hai Kidhar
Woh Zara Sa Janwar Toota Huwa Hai Jis Ka Sar

 

تيرا آئينہ تھا آزاد غبار آرزو
آنکھ کھلتے ہی چمک اٹھا شرار آرزو

Tera Aaeena Tha Azad-e-Ghubar-e-Arzu
Ankh Khulte Hi Chamak Utha Sharar-e-Arzu

 

ہاتھ کی جنبش ميں ، طرز ديد ميں پوشيدہ ہے
تيری صورت آرزو بھی تيری نوزائيدہ ہے
Hath Ki Junbish Mein, Tarz-e-Deed Mein Poshida Hai
Teri Soorat Arzu Bhi Teri Nauzaeeda Hai

 

زندگانی ہے تری آزاد قيد امتياز
تيری آنکھوں پر ہويدا ہے مگر قدرت کا راز
Zindagaani Hai Teri Azad-e-Qaid-e-Imtiaz
Teri Ankhon Par Haweda Hai Magar Qudrat Ka Raaz

 

جب کسی شے پر بگڑ کر مجھ سے ، چلاتا ہے تو
کيا تماشا ہے ردی کاغذ سے من جاتا ہے تو

Jab Kisi Shay Par Bigar Kar Mujh Se, Chillata Hai Tu
Kya Tamasha Hai Raddi Kaghaz Se Mann Jata Hai Tu

 

آہ! اس عادت ميں ہم آہنگ ہوں ميں بھی ترا
تو تلون آشنا ، ميں بھی تلون آشنا

Aah! Iss Adat Mein Hum Ahang Hun Main Bhi Tera
Tu Talawwan Ashna, Main Bhi Talawwan Ashna

 

عارضی لذت کا شيدائی ہوں ، چلاتا ہوں ميں
جلد آ جاتا ہے غصہ ، جلد من جاتا ہوں ميں

Arzi Lazzat Ka Shaidai Hun, Chillata Hun Main
Jald Aa Jata Hai Gussa, Jald Mann Jata Hun Main

 

ميری آنکھوں کو لبھا ليتا ہے حسن ظاہری
کم نہيں کچھ تيری نادانی سے نادانی مری
Meri Ankhon Ki Lubha Leta Hai Husn-e-Zahiri
Kam Nahin Kuch Teri Nadani Se Nadani Meri

 

تيری صورت گاہ گرياں گاہ خنداں ميں بھی ہوں
ديکھنے کو نوجواں ہوں ، طفل ناداں ميں بھی ہوں

Teri Soorat-Gah Giryan-Gah Khandan Main Bhi Hun
Dekhne Ko Naujawan Hun, Tifl-e-Nadan Main Bhi Hun

 

 

Rukhsat Ae Bazm-e-Jahan- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | رخصت اے بزم جہاں

Mouj-e-Darya- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | موج دريا

Dil- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | دل

2 thoughts on “Tifl e Sheer Khawar- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | طفل شير خوار

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *