Us Bazm Mein Mujhe Nahin Banti Haya Kiye - Mirza Ghalib Poetry

Us Bazm Mein Mujhe Nahin Banti Haya Kiye – Mirza Ghalib Poetry

Us Bazm Mein Mujhe Nahin Banti Haya Kiye

اس بزم میں مجھے نہیں بنتی حیا کیے

 

Us Bazm Mein Mujhe Nahin Banti Haya Kiye
Baitha Raha Agarche Ishaare Hua Kiye

اس بزم میں مجھے نہیں بنتی حیا کیے
بیٹھا رہا اگرچہ اشارے ہوا کیے
Dil Hi To Hai Siyasat-E-Darban Se Dar Gaya
Main Aur Jaun Dar Se Tere Bin Sada Kiye
دل ہی تو ہے سیاستِ درباں سے ڈر گیا
میں اور جاؤں در سے ترے بِن صدا کیے

Rakhta Phirun Hun KHirqa O Sajjada Rahn-E-Mai
Muddat Hui Hai Dawat Aab-O-Hawa Kiye

رکھتا پھروں ہوں خرقہ و سجّادہ رہنِ مے
مدّت ہوئی ہے دعوتِ آب و ہوا کیے

Be-Sarfa Hi Guzarti Hai Ho Garche Umr-E-KHizr
Hazrat Bhi Kal Kahenge Ki Hum Kya Kiya Kiye

بے صرفہ ہی گزرتی ہے، ہو گرچہ عمرِ خضر
حضرت بھی کل کہیں گے کہ ہم کیا کیا کیے

Maqdur Ho To Khak Se Puchhun Ki Ai Laim
Tu Ne Wo Gunjha-E-Giran-Maya Kya Kiye

مقدور ہو تو خاک سے پوچھوں کہ اے لئیم
تو نے وہ گنج‌ ہائے گراں مایہ کیا کیے

Kis Roz Tohmaten Na Tarasha Kiye Adu
Kis Din Hamare Sar Pe Na Aare Chala Kiye

کس روز تہمتیں نہ تراشا کیے عدو 
کس دن ہمارے سر پہ نہ آرے چلا کیے 

Sohbat Mein Ghair Ki Na PaDi Ho Kahin Ye KHu
Dene Laga Hai Bosa Baghair Iltija Kiye

صحبت میں غیر کی نہ پڑی ہو کہیں یہ خو
دینے لگا ہے بوسہ بغیر التجا کیے

Zid Ki Hai Aur Baat Magar KHu Buri Nahin
Bhule Se Us Ne SaikDon Wade Wafa Kiye

ضد کی ہے اور بات مگر خو بری نہیں
بھولے سے اس نے سینکڑوں وعدے وفا کیے

‘Ghaalib’ Tumhin Kaho Ki Milega Jawab Kya
Mana Ki Tum Kaha Kiye Aur Wo Suna Kiye

غالبؔ تمہیں کہو کہ ملے گا جواب کیا
مانا کہ تم کہا کیے اور وہ سنا کیے

4 thoughts on “Us Bazm Mein Mujhe Nahin Banti Haya Kiye – Mirza Ghalib Poetry

  1. Pingback: unieke reizen

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *