Zahir Ki Ankh Se Na Tamasha Kare Koi- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | ظاہرکی آنکھ سے نہ تماشا کرے کوئی

Zahir Ki Ankh Se Na Tamasha Kare Koi- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | ظاہرکی آنکھ سے نہ تماشا کرے کوئی

ظاہرکی آنکھ سے نہ تماشا کرے کوئی

Zahir Ki Ankh Se Na Tamasha Kare Koi

 

ظاہرکی آنکھ سے نہ تماشا کرے کوئی
ہوديکھنا تو ديدۂ دل وا کرے کوئی
Zahir Ki Ankh Se Na Tamasha Kare Koi
Ho Dekhna To Didah-e-Dil Wa Kare Koi
منصورکو ہوا لب گويا پيام موت
ابکيا کسی کے عشق کا دعوی کرے کوئی
Mansoor Ko Huwa Lab-e-Goya  Payam-e-Mout
Ab Kya Kisi Ke Ishq Ka Dawa Kare Koi
ہوديد کا جو شوق تو آنکھوں کو بند کر
ہےديکھنا يہی کہ نہ ديکھا کرے کوئی
Ho Deed Ka Jo Shauq To Ankhon Ko Band Kar
Hai Dekhna Yehi Ke Na Dekha Kare Koi
ميںانتہائے عشق ہوں ، تو انتہائے حسن
ديکھےمجھے کہ تجھ کو تماشا کرے کوئی
Main Intihaye Ishq Hun, Tu Intihaye Husn
Dekhe Mujhe Ke Tujh Ko Tamasha Kare Koi
عذرآفرين جرم محبت ہے حسن دوست
محشرميں عذر تازہ نہ پيدا کرے کوئی
Uzr Afreen-e-Jurm- Hai Husn-e-Dost
Mehshar Mein Uzr Taza Na Paida Kare Koi
چھپتی نہيں ہے يہ نگہ شوق ہم نشيں
پھراور کس طرح انھيں ديکھا کر ے کوئی
Chupti Nahin Hai Ye Nigah-e-Shauq Hum-Nasheen
Phir Aur Kis Tarah Unhain Dekha Kare Koi
اڑبيٹھے کيا سمجھ کے بھلا طور پر کليم
طاقتہو ديد کی تو تقاضا کرے کوئی
Arh Baithe Kya Samajh Ke Bhala Toor Par Kaleem
Taqqat Ho Deed Ki To Taqaza Kare Koi
نظارےکو يہ جنبش مژگاں بھی بار ہے
نرگسکی آنکھ سے تجھے ديکھا کرے کوئی
Nazare Ko Ye Junbish-e-Mazgan Bhi Bar Hai
Nargis Ki Ankh Se Tujhe Dekha Kare Koi
کھلجائيں ، کيا مزے ہيں تمنائے شوق ميں
دوچار دن جو ميری تمنا کرے کوئی
Khul Jaen, Kya Maze Hain Tamanaye Shauq Mein
Do Char Din Jo Meri Tamanna Kare Koi

2 thoughts on “Zahir Ki Ankh Se Na Tamasha Kare Koi- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | ظاہرکی آنکھ سے نہ تماشا کرے کوئی

  1. Pingback: กงล้อ888
  2. Pingback: basics

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *