Shukr E Khuda Keh Aaj Ghadi Us Safar Ki – Lyrics

Shukr E Khuda Keh Aaj Ghadi Us Safar Ki – Lyrics

Shukr E Khuda Keh Aaj Ghadi Us Safar Ki Hai – Lyrics

Shukr E Khuda Keh Aaj Ghadi Us Safar Ki Hai
Jis Par Nisaar Jaan Falaaho Zafar Ki Hai

شکر خدا کی آج گھڑی اس سفر کی ہے
جس پر نثار جان فلاح و ظفر کی ہے

Garmi Hai Tap Hai Dard Hai Kulfat Safar Ki Hai
Na Shukr Ye To Dekh Azeemat Kidhar Ki Hai

گرمی ہے تپ ہے درد ہے کلفت سفر کی ہے
نا شکر یہ تو دیکھ عزیمت کدھر کی ہے

Kis Khaaqe Paak Ki Tu Banee Khaaqe Pa Shifa
Tujhko Kasam Janab E Maseeha Ke Sarr Ki Hai

کس خاکِ پاک کی تو بنی خاک پاء شفائی
تجھ کو قسم جنابِ مسیحا کے سر کی ہے

Aabe Hayaat E Ruh Hai ‘Zarqa’ Ki Boond Boond
Akseer A’azame Mase Dil Khaaq Darr Ki Hai

آب حیات روح ہے زرقا کی بوند بوند
اکسیر اعظم مس دل خاک در کی ہے

Humko To Apne Saaye Me Aaram Hi Se Laaye
Heele Bahane Waalo Ko Ye Rah Darr Ki Hai

ہم کو اپنے سائے میں آرام ہی سے لائے
حیلے بہانے والوں کو یہ راہ ڈر کی ہے

Lut-Te Hai Maare Jaate Hai Yu Hi Suna Kiye
Har Baar Di Wo Aman Ki Ghairat Hajar Ki Hai

لٹتے ہیں مارے جاتے ہیں یوں ہی سنا کیے
ہر بار دی وہ امن کہ غیرت حضر کی ہے

Wo Dekho Jagmagati Hai Shab Aur Qamar Abhi
Pahro Nahi Ki Bisto Chahrum Safar Ki Hai

وہ دیکھو جگماتی ہے شب اور قمر ابھی
پہروں نہیں کہ بست و چہارم صفر کی ہے

Maahe Madina Apni Tajalli Ataa Kare
Ye Dhalti Chandni To Pahar Do Pahar Ki Hai

ماہ مدینہ اپنی تجلی عطا کرے
یہ ڈھلتی چاندنی تو پہر دو پہر کی ہے

Mann Zaar-Turbati Wa-J-Bat Lah Shafa’ati
Un Par Durood Jinse Naved In Bashar Ki Hai

مَنْ زَارَ تُرْبَتِیْ وَجَبَتْ لَہ’ شَفَاعَتِیْ
ان پر درود جن سے نوید ان بشر کی ہے

Unke Tufail Haj Bhi Khuda Ne Kara Diye
Asl E Muraad Haazri Uss Paak Darr Ki Hai

ان کے طفیل حج بھی خدا نے کرا دئیے
اصل مراد حاضری اس پاک در کی ہے

Ka’abe Ka Naam Tak Na Liya Taibah Hi Kaha
Poocha Tha Humse Jisne Ki Nuhzat Kidhar Ki Hai

کعبہ کا نام تک نہ لیا طیبہ ہی کہا
پوچھا تھا ہم سے جس نے کہ نہضت کدھر کی ہے

Ka’aba Bhi Hai Unhi Ki Tajalli Ka Ayk Zill
Roushan Unhi Se Aks Se Putli Hajar Ki Hai

کعبہ کا نام تک نہ لیا طیبہ ہی کہا
پوچھا تھا ہم سے جس نے کہ نہضت کدھر کی ہے

Hote Kaha Khaleelo Bina Ka’aba Wo Mina
Lau Laak Wale Sahibe Sab Tere Ghar Ki Hai

ہوتے کہاں خلیل و بنا کعبہ و منیٰ
لولاک والے صاحبی سب تیرے در کی ہے

Maula Ali Ne Vaari Teri Neend Par Namaz
Aur Wo Bhi Asr Sabse Jo A’ala Khatar Ki Hai

مولیٰ علی نے واری تیری نیند پر نماز
اور وہ بھی عصر سب سے جو اعلیٰ خطر کی ہے

Siddique Balki Ghaar Me Jaan Uss Pe De Chuke
Aur Hifze Jaan To Jaan Furuze Gurar Ki Hai

صدیق بلکہ غار میں جاں اس پہ دے چکے
اور حفظ جاں تو جان فروض غرر کی ہے

Haan Tu Ne Unko Jaan, Unhe Fer Di Namaz
Par Wah To Kar Chuke The Jo Karni Bashar Ki Hai

ہاں تو نے ان کو جان انہیں پھیر دی نماز
پر وہ تو کر چکے تھے جو کرنی بشر کی ہے

Sabit Hua Ki Jumla Faraiz Furu’a Hai
Aslul Usool Bandagi Us Taajvar Ki Hai

ثابت ہوا کہ جملہ فرائض فروع ہیں
اصل الاصول بندگی اس تاجور کی ہے

Shar Khair, Shor Sur, Sharar Dur, Naar Nur
Bushra Ki Baargah Ye Khairul Bashar Ki Hai

شر خیر شور سور شرر دور نار نور
بشریٰ کہ بارگاہ یہ خیر البشر کی ہے

Mujrim Bulaye Aaye Hai ‘Jau-K’ Hai Gawah
Phir Radd Ho Kab Ye Shaan Kareemo Ke Darr Ki Hai

مجرم بلائے آئے ہیں جَآءُ وْکَ ہے گواہ
پھر رد ہو کب یہ شان کریموں کے در کی ہے

Badd Hai Magar Unhi Ke Hai Baaghi Nahi Hai Hum
Najdi Na Aaye Usko Ye Manzil Khatar Ki Hai

بد ہیں مگر انہیں کے ہیں باغی نہیں ہیں ہم
نجدی نہ آئے اس کو یہ منزل خطر کی ہے

Tuf Najdiyat Na Kufr Na Islam Sab Pe Harf
Kafir Idhar Ki Hai Na Udhar Ki Adhar Ki Hai

تف نجدیت نہ کفر نہ اسلام سب پہ حرف
کافر اِدھر کی ہے نہ اُدھر کی اَدھر کی ہے

Haakim Hakeem Daado Dawa De Ye Khuch Na De
Mardood Ye Muraad Kis Aayat Khabar Ki Hai

حاکم حکیم داد و دوا دیں یہ کچھ نہ دیں
مردود یہ مراد کس آیت خبر کی ہے

Shakle Bashar Me Noore Ilahi Agar Na Ho
Kya Kadr Us Khameera E Maao Madar Ki Hai

شکل بشر میں نور الٰہی اگر نہ ہو
کیا قدر اس خمیرہئ ماؤ مدر کی ہے

Noore Ilahi Kya Hai Muhabbat Habeeb Ki
Jis Dil Me Ye Na Ho Wo Jagah Khufo Khar Ki Hai

نور الٰہ کیا ہے محبت حبیب کی
جس دل میں یہ نہ ہو وہ جگہ خوک و خر کی ہے

Zikre Khuda Jo Unse Juda Chaho Najdiyo
WALLAH Zikre Haq Nahi Kunji Sakar Ki Hai

ذکر خدا جو ان سے جدا چاہو نجدیو 
واﷲ ذکر حق نہیں کنجی سقر کی ہے

Be Unke Waaste Ke Khuda Kuch Ataa Kare
Haasha Galat Galat Ye Hawas Be-Basar Ki Hai

بے ان کے واسطے کے خدا کچھ عطاء کرے
حاشا غلط غلط یہ ہوس بے بصر کی ہے

Maqsood Ye Hai Aadamo Nuuho Khaleel Se
Tukhme Karam Me Saari Karamat Samar Ki Hai

مقصود یہ ہیں آدم و خلیل و نوح سے
تخم کرم میں ساری کرامت ثمر کی ہے

Unki Nubuvvat Unki Ubuvvat Hai Sabko Aam
Ummul Bashar Aroos Unhi Ke Pesar Ki Hai

ان کی نبوت ان کی ابوت ہے سب کو عام
ام البشر عروس انہیں کے پسر کی ہے

Zaahir Me Mere Phool Haqeeqat Me Mere Nakhl
Uss Ghul Ki Yaad Me Ye Sadaa Bul Bashar Ki Hai

ظاہر میں میرے پھول حقیقت میں میرے نخل
اس گل کی یاد میں یہ صدا ابو البشر کی ہے

Pehle Ho Unki Yaad Ki Paaye Jila Namaz
Yeh Kehte Hai Azaan Jo Pichle Pahar Ki Hai

پہلے ہو ان کی یاد کہ پائے جلا نماز
یہ کہتی ہے اذان جو پچھلے پہر کی ہے

Duniya Mazaar Hashr Jahaan Hai Ghafoor Hai
Har Manzil Apne Chaand Ki Manzil Gafar Ki Hai

دنیا ، مزار ، حشر جہاں ہیں غفور ہیں
ہر منزل اپنے چاند کی منزل غفر کی ہے

Un Par Durood Jinko Hajar Tak Kare Salaam
Un Par Salaam Jinko Tahiyyat Shajar Ki Hai

ان پر درود جن کو حجر تک کریں سلام
ان پر سلام جن کو تحیت شجر کی ہے

Un Par Durood Jinko Kase Be-Kasa Kahe
Un Par Salaam Jinko Khabar Be-Khabar Ki Hai

ان پر درود جن کو کس بیکساں کہیں
ان پر سلام جن کو خبر بے خبر کی ہے

Jinno Bashar Salaam Ko Haazir Hai Assalam
Yeh Bargah Maalik E Jinno Bashar Ki Hai

جن و بشر سلام کو حاضر ہیں السلام
یہ بارگاہ مالک جن و بشر کی ہے

Shamso Qamar Salaam Ko Haazir Hai Assalam
Khubi Unhi Ki Jyot Se Shamso Qamar Ki Hai

شمس و قمر سلام کو حاضر ہی السلام
خوبی انہی کی جوت سے شمس و قمر کی ہے

Sab Bahro Bar Salaam Ko Hazir Hai Assalam
Tamlik Unhi Ke Naam To Har Bahro Bar Ki Hai

سب بحر و بر سلام کو حاضر ہیں السلام
تملیک انہی کے نام تو بحر و بر کی ہے

Sango Shajar Salaam Ko Haazir Hai Assalam
Kalme Se Tar Zabaan Darakhto Hajar Ki Hai

سنگ و شجر سلام کو حاضر ہیں السلام
کلمے سے تر زبان درخت و حجر کی ہے

Arzo Asar Salaam Ko Hazir Hai Assalam
Malja Ye Baargah Dua O Asar Ki Hai

عرض و اثر سلام کو حاضر ہیں السلام
ملجا یہ بارگاہ دعا و اثر کی ہے

Shorida Sarr Salaam Ko Hazir Hai Assalam
Raahat Unhi Ke Qadmo Me Shorida Sarr Ki Hai

شوریدہ سر سلام کو حاضر ہیں السلام
راحت انہی کے قدموں میں شویدہ سر کی ہے

Khasta Jigar Salaam Ko Hazir Hai Assalam
Marham Yahi Ki Khaak To Khasta Jigar Ki Hai

خستی جگر سلام کو حاضر ہیں السلام
مرہم یہیں کی خاک تو خستہ جگر کی ہے

Sab Khushko Tar Salaam Ko Hazir Hai Assalam
Ye Jalwa Gaah Maalike Har Khushko Tar Ki Hai

سب خشک و تر سلام کو حاضر ہیں السلام
یہ جلو گاہ مالک ہر خشک و تر کی ہے

Sab Karro Far Salaam Ko Hazir Hai Assalam
Topi Yahi To Khaaq Pe Har Karro Far Ki Hai

سب کروفر سلام کو حاضر ہیں السلام
ٹوپی یہیں تو خاک پہ ہر کروفر کی ہے

Ahle Nazar Salaam Ko Hazir Hai Assalam
Ye Gard Hi Surma Sab Ahle Nazar Ki Hai

اہل نظر سلام کو حاضر ہیں السلام
یہ گرد ہی تو سرمہئ سب اہل نظر کی ہے

Aansu Baha Ki Beh Gaye Kaale Gunah Ke Dher
Haathi Dubav Jheel Yaha Chashme Tar Ki Hai

آنسو بہا کے بہہ گئے کالے گناہ کے ڈھیر
ہاتھی ڈوباؤ جھیل یہاں چشم و تر کی ہے

Teri Kaza Khaleefa E Ahkaame Zil Jalaal
Teri Raza Haleef Kazawo Kadar Ki Hai

تیری قضاء خلیفہ احکام ذی الجلال
تیری رضا حلیف قضاؤ قدر کی ہے

Yeh Pyari Pyari Kyari Tere Khaana Baagh Ki
Sard Isko Aabo Taab Se Aatash Safar Ki Hai

یہ پیاری پیاری کیاری تیرے خانہ باغ کی
سرد اس کی آب و تاب سے آتش سقر کی ہے

Jannat Me Aa Ke Naar Me Jaata Nahi Koi
Shukre Khuda Naweed Najaato Zafar Ki Hai

جنت میں آکے نار میں جاتا نہیں کوئی
شکرِ خدا نوید نجات و ظفر کی ہے

Mo’min Hu Mo’mino Pe Rauf Ur Raheem Ho
Sa-Il Hu Sa-Ilo Ko Khushi La-Nahar Ki Hai

مومن ہوں مومنوں پہ رؤف و رحیم ہو
سائل ہوں سائلوں کو خوشی لا نہر کی ہے

Daaman Ka Waasta Mujhe Is Dhup Se Bacha
Mujhko To Shaak Jaado Me Us Duphar Ki Hai

دامن کا واسطہ مجھے اس دھوپ سے بچا
مجھ کو تو شاق جاڑوں میں اس دوپہر کی ہے

Maa Dono Bhai Bete Bhateeje Azeez Dost
Sab Tujhko Soupe Milk Hi Sab Tere Ghar Ki Hai

ماں ، دونوں بھائی ، بیٹے ، بھتیجے ، عزیز ، دوست
سب تجھ کو سونپے مِلک ہی سب تیرے گھر کی ہے

Jin Jin Muraado Ke Liye Ahbaab Ne Kaha
Peshe Khabeer Kya Mujhe Haajat Khabar Ki Hai

جن جن مرادوں کے لئے احباب نے کہا
پیش خبیر کیا مجھے حاجت خبر کی ہے

Fazle Khuda Se Ghaib E Shahadat Hua Unhe
Iss Par Shahadat Aayato Wahiyo Asar Ki Hai

فضل خدا سے غیب شہادت ہوا انہیں
اس پر شہادت آیت و وحی و اثر کی ہے

Kahna Na Kahne Wale The Jab Se Tu Ittela’a
Maula Ko Qoulo Qailo Har Khusko Tar Ki Hai

کہنا نہ کہنے والے تھے جب سے تو اطلاع
مولیٰ کو قول و قائل و ہر خشک و تر کی ہے

Unn Par Kitaab Utri Bayaanul Li-Kulli Shay
Tafseel Jisme Abaro Ma Gabar Ki Hai

ان پر کتاب اتری بیاناً لِکُلِ ّ شَیْئٍ
تفصیل جس میں مَا عَبَرُوْ مَا غَبَر کی ہے

Aage Rahi Ataa Wo Baqadre Talab To Kya
Aadat Yaha Ummeed Se Bhi Beshtar Ki Hai

آگے رہی عطاء وہ بقدر طلب تو کیا
عادت یہاں امید سے بھی بیشتر کی ہے

Be Maange Dene Wale Ki Ne’amat Me Gark Hai
Maange Se Jo Mile Kise Faham Is Kadar Ki Hai

بے مانگے دینے والے کی نعمت میں غرق ہیں
مانگے سے جو ملے کسے فہم اس قدر کی ہے

Ahbaab Iss Se Badh Ke To Shayad Na Paaye Arz
Na Karda Arz Arz Ye Tarze Digar Ki Hai

احباب اس سے بڑھ کے تو شاید نہ پائیں عرض
نا کردہ عرض عرض یہ طرزِ دگر کی ہے

Dandaan Ki Naat Khwa Hu Na Payab Hogi Aab
Naddi Gale-Gale Mere Aabe Guhar Ki Hai

دنداں کا نعت خواں ہوں نہ پایاب ہو گی آب
ندی گلے گلے میرے آب گہر کی ہے

Dashte Haram Me Rehne De Sayyad Agar Tujhe
Mitti Azeez Bulbule Be-Baalo Par Ki Hai

دشت حرم میں رہنے دے صیاد اگر تجھے
مٹی عزیز بلبل بے بال و پر کی ہے

Ya Rabb Raza Na Ahmade Parina Hoke Jaay
Ye Bargah Tere Habeebe Abarar Ki Hai

یا رب رضاؔ نہ احمد پارینہ ہو کے جائے
یہ بارگاہ تیرے حبیب ابر کی ہے

Taufeeq De Ki Aage Na Paida Ho Khu-E Badd
Tabdeel Kar Jo Khaslate Badd Peshtar Ki Hai

توفیق دے کہ آگے نہ پیدا ہو خوئے بد
تبدیل کر جو خصلت بد بیشتر کی ہے

Aa Kuch Suna De Ishq Ke Bolon Me Ay Raza
Mushtaq Tab-A Lazzate Soze Jigar Ki Hai

آ کچھ سُنا دے عشق کے بولوں میں اے رضاؔ
مشتاق طبع لذت سوز جگر کی ہے

Shukr E Khuda Keh Aaj Ghadi Us Safar Ki Hai
Jis Par Nisaar Jaan Falaaho Zafar Ki Hai

شکر خدا کی آج گھڑی اس سفر کی ہے
جس پر نثار جان فلاح و ظفر کی ہے

امام احمد رضاؔ خان علیہ الرحمۃ 

 

 

 

One thought on “Shukr E Khuda Keh Aaj Ghadi Us Safar Ki – Lyrics

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *