Jawab e Jahila | Sheikh Saadi Ki Hikayat

Jawab e Jahila | Sheikh Saadi Ki Hikayat | جواب جاہلاں

جواب جاہلاں

Jawab e Jahila

 

بیان کیا جاتا ہے، یونان کے مشہور حکیم جالینوس نے دیکھا کہ ایک ایساشخص جسے لوگ دانشمند خیال کرتے تھے، ایک جاہل کے ساتھ لڑ رہا ہے۔ اور برا بھلا کہہ کر اسے خاموش کرنے کی کوشش میں مصروف ہے، یہ حالت دیکھ کر جالینوس نے کہا کہ اگر یہ شخص دانا ہوتا تو اس نادان کے ساتھ ہر گزدست و گریبان نہ ہوتا۔

دو عقل مندوں میں ہوسکتا نہیں جنگ و جدال سامنے ہو جہل تو برداشت ہے عاقل کی ڈھال

 

کوئی جاہل بد زبانی پر اتر آئے اگر
اہل دانش اس حماقت پر کریں گے درگزر
بال کو بھی لوٹنے دیتے نہیں دو ہوشمند
 بے خبر زبخیر کا بھی توڑ دیں گے بند بند
جاہلوں نے گلیاں دیں ایک خوش اطوار کو
 ختم اس نے کر دیا یہ کہہ کر اس تکرار کو
دوستو! تم نے مرے بارے میں جو کچھ بھی کہا
منکشف ہے مجھ پہ یہ میں کہوں اس سے بھی برا

 

وضاحت

اس حکایت میں حضرت سعدیؒ نے علم و عقل کی فضلیت کو ظاہر کرنے اور رفع شر کے لیے نہایت موثر اور آزمودہ اصول بیان کیا ہے۔ جواب جاہلاں باشد خموشی، داناؤں کا ہمیشہ سے دستور رہا ہے۔ یہ بالکل سمجھ میں آنے والی بات ہے کہ کتا انسانوں کو اکثر کاٹتا ہے۔ لیکن جواب میں انسان کتے کو کبھی نہیں کاٹتا۔

 

 

 

Jaal Main Machli | Sheikh Saadi Ki Hikayat | جال میں مچھلی

Hasad Ki Aag | Sheikh Saadi Ki Hikayat | حسد کی آگ

One thought on “Jawab e Jahila | Sheikh Saadi Ki Hikayat | جواب جاہلاں

  1. Pingback: blote tieten

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *