Bohat Dekhe Hain Main Ne Mashriq-o-Maghrib Ke (Iqbal)

Bohat Dekhe Hain Main Ne Mashriq-o-Maghrib Ke (Iqbal)

Bohat Dekhe Hain Main Ne Mashriq-o-Maghrib Ke May Khane

Allama Iqbal Poetry (Bal-e-Jibril)

Bohat Dekhe Hain Main Ne Mashriq-o-Maghrib Ke May Khane
Yahan Saqi Nahin Payda, Wahan Be-Zauq Hai Sehba

بہت دیکھے ہیں میں نے مشرق و مغرب کے میخانے
یہاں ساقی نہیں پیدا، وہاں بے ذوق ہے صہبا

Na Iran Main Rahe Baqi, Na Tooran Mein Rahe Baqi
Woh Banday Faqr Tha Jin Ka Halaak-e-Qaisar-o-Kasra

نہ ایراں میں رہے باقی، نہ توراں میں رہے باقی
وہ بندے فقر تھا جن کا ہلاک قیصر و کسری

Yehi Sheikh-e-Haram Hai Jo Chura Kar Baich Khata Hai
Galeem-e-Bu Zar (R.A.)-o-Dalaq-e-Awais (R.A)-o-Chadar-e-Zahra (R.A.)

یہی شیخ حرم ہے جو چرا کر بیچ کھاتا ہے
گلیم بوذر و دلق اویس و چادر زہرا!

Huzoor-e-Haq Mein Israfeel Ne Meri Shikayat Ki
Ye Banda Waqt Se Pehle Qayamat Kar Na De Barpa

حضور حق میں اسرافیل نے میری شکایت کی
یہ بندہ وقت سے پہلے قیامت کر نہ دے برپا

Nida Ayi Ke Ashob-e-Qayamat Se Ye Kya Kam Hai
‘Garaftah Cheeniyan Ahram-o-Makki Khufta Dar Batha’

ندا آئی کہ آشوب قیامت سے یہ کیا کم ہے
گرفتہ چینیاں احرام و مکی خفتہ در بطحا’

Labalab Shisha’ay Tehzeeb-e-Hazir Hai Ma’ay ‘LA’ Se
Magar Saqi Ke Hathon Mein Nahin Paymana’ay ‘ILLAH’

لبالب شیشہ تہذیب حاضر ہے مے ‘لا’ سے
مگر ساقی کے ہاتھوں میں نہیں پیمانہ ‘الا’

Daba Rakha Hai Uss Ko Zakhmawer Ki Taiz Dasti Ne
Bohat Neeche Suron Mein Hai Abhi Yourap Ka Wavela

دبا رکھا ہے اس کو زخمہ ور کی تیز دستی نے
بہت نیچے سروں میں ہے ابھی یورپ کا واویلا

Issi Darya Se Uthti Hai Woh Mouj-e-Tund Joulan Bhi
Nehnangon Ke Nasheman Jis Se Hote Hain Teh-o-Bala

اسی دریا سے اٹھتی ہے وہ موج تند جولاں بھی
نہنگوں کے نشیمن جس سے ہوتے ہیں تہ و بالا

2 thoughts on “Bohat Dekhe Hain Main Ne Mashriq-o-Maghrib Ke (Iqbal)

  1. Pingback: sex 2024

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *