Dil Hi To Hai Na Sang-O-Khist Dard Se Bhar Na Aaye Kyun - Mirza Ghalib Poetry

Dil Hi To Hai Na Sang-O-Khist Dard Se Bhar Na Aaye Kyun – Mirza Ghalib Poetry

Dil Hi To Hai Na Sang-O-Khist Dard Se Bhar Na Aaye Kyun

دل ہی تو ہے نہ سنگ و خشت، درد سے بھر نہ آئے کیوں

 

Dil Hi To Hai Na Sang-O-Khist Dard Se Bhar Na Aaye Kyun
Royenge Hum Hazaar Baar Koyee Hamein Sataye Kyun

دل ہی تو ہے نہ سنگ و خشت، درد سے بھر نہ آئے کیوں
روئیں گے ہم ہزار بار، کوئی ہمیں ستائے کیوں

 

Dair Nahin, Haram Nahin, Dar Nahin, Aastan Nahin
Baithe Hain Reh-Guzar Pe Hum Gair Hamein Uthaye Kyun

دیر نہیں، حرم نہیں، در نہیں، آستاں نہیں
بیٹھے ہیں رہ گزُر پہ ہم، غیر ہمیں اُٹھائے کیوں

 

Jab Wo Jamaal-E-Dilfaroze Soorte-Mehre Neem-Roze
Aap Hi Ho Nazaar-Soze Parde Mein Munh Chuppaye Kyun

جب وہ جمالِ دل فروز، صورتِ مہرِ نیم روز
آپ ہی ہو نظارہ سوز، پردے میں منہ چھپائے کیوں

 

Dashne-E-Gamaza Jaan-Sitan Naavke-Naaz Bepanah
Tera Hi Akse-Rukh Sahi, Saame Tere Aaye Kyun

دشنۂ غمزہ جاں سِتاں، ناوکِ ناز بے پناہ
تیرا ہی عکسِ رُخ سہی، سامنے تیرے آئے کیوں

 

Kaide-Hayat-O-Band-E-Gam, Asl Mein Dono Ek Hain
Maut Se Pehlre Aadmi Gum Se Nijaat Paye Kyun

قیدِ حیات و بندِ غم، اصل میں دونوں ایک ہیں
موت سے پہلے آدمی، غم سے نجات پائے کیوں

 

Husn Aur Us Pe Husn-E-Zun Reh Gayee Bulhavas Ki Sharm
Apne Pe Etmad Hai, Gair Ko Aazmaye Kyun

حُسن اور اُس پہ حُسنِ ظن، رہ گئی بوالہوس کی شرم
اپنے پہ اعتماد ہے، غیر کو آزمائے کیوں

 

Van Veh Garure-Izz-O-Naaz Yan Yeh Hijabe-Paase-Vazan
Raah Mein Hum Milen Kahan Bazm Mein Veh Bulaye Kyun

واں وہ غرورِ عزّ و ناز، یاں یہ حجابِ پاس وضع
راہ میں ہم ملیں کہاں، بزم میں وہ بلائے کیوں

 

Han Voh Nahin Khuda Parasat Jaao Veh Bewafa Sahi
Jisko Ho Dino-Dil Aziz Uski Gali Mein Jaye Kyun

ہاں وہ نہیں خُدا پرست، جاؤ وہ بے وفا سہی
جس کو ہوں دین و دل عزیز، اُس کی گلی میں جائے کیوں

 

Ghalib-E-Khast Ke Bagair Kaunse Kaam Band Hain
Roye Zar-Zar Kaya Keejiye Haye-Haye Kyun

غالبِ خستہ کے بغیر کون سے کام بند ہیں
روئیے زار زار کیا، کیجئے ہائے ہائے کیوں

 

 

 

Na Tha Kuch Tou Khuda Tha Kuch Na Hota To Khuda Hota – Mirza Ghalib Poetry

Bas Ke Dushwar Hai Har Kam Ka Asan Hona – Mirza Ghalib Poetry

3 thoughts on “Dil Hi To Hai Na Sang-O-Khist Dard Se Bhar Na Aaye Kyun – Mirza Ghalib Poetry

  1. Pingback: mim66

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *