Ishq Mujhko Nahi Wahshat Hi Sahi - Mirza Ghalib Poetry

Ishq Mujhko Nahi Wahshat Hi Sahi – Mirza Ghalib Poetry

Ishq Mujhko Nahi Wahshat Hi Sahi

عشق مجھ کو نہیں، وحشت ہی سہی

 

Ishq Mujhko Nahi Wahshat Hi Sahi
Meri Wahshat Teri Shohrat Hi Sahi

عشق مجھ کو نہیں، وحشت ہی سہی
میری وحشت، تِری شہرت ہی سہی

 

Qat’aa Kieje Na Taa’alluq Hum Se
Kuchh Nahi Hai To Adaawat Hi Sahi

قطع کیجے نہ، تعلّق ہم سے
کچھ نہیں ہے، توعداوت ہی سہی

 

Mere Hone Main Hai Kya Rusaai
Ye Woh Majlis Nahin Khalwat Hi Sahi

میرے ہونے میں، ہے کیا رُسوائی
اے، وہ مجلس نہیں، خلوت ہی سہی

 

Hum Bhi Dushman To Nahin Hain Apne
Ghair Ko Tujh Se Mohabbat Hi Sahi

ہم بھی دشمن تو نہیں ہیں اپنے
غیر کو تجھ سے محبت ہی سہی

 

Apni Hasti Hi Se Ho Jo Kuchh Ho
Aagahi Gar Nahi Ghaflat Hi Sahi

اپنی ہستی ہی سے ہو، جو کچھ ہو
آگہی گر نہیں، غفلت ہی سہی

 

Umar Harchand K Hai Barq-E-Kharaam
Dil Ko Khoon Karne Ki Fursat Hi Sahi

عمر ہر چند کہ ہے برق خرام
دل کے خوں کرنے کی فرصت ہی سہی

 

Hum Koi Tark-E-Wafaa Karte Hain
Naa Sahi Ishq, Museebat Hi Sahi

ہم کوئی ترک وفا کرتے ہیں
نہ سہی عشق، مصیبت ہی سہی

 

Kuch To De Ae Falak-E-Na-Insaaf
Aah-O-Fariyaad Ki Rukhsat Hi Sahi

کچھ تو دے، اے فلکِ نا انصاف
آہ وفریاد کی رُخصت ہی سہی

 

Hum Bhi Tasleem Ki Khoo Daleinge
Be Neyazi Teri Aadat Hi Sahi

ہم بھی تسلیم کی خو ڈالیں گے
بے نیازی تری عادت ہی سہی

 

Yaar Se Chair Chali Jaaye Asad
Gar Nahi Vasal Tou Hasrat Hi Sahi

یار سے چھیڑ چلی جاے، اسد
گر نہیں وصل تو حسرت ہی سہی

 

 

Muddat Hui Hai Yar Ko Mehman Kiye Huye – Mirza Ghalib Poetry

Dard Se Mere Hai Tujhko Beqarari Haaye Haaye – Mirza Ghalib Poetry

One thought on “Ishq Mujhko Nahi Wahshat Hi Sahi – Mirza Ghalib Poetry

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *