Khizar-e-Rah – Part 1- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry |  خضرراہ – حصہ اول

 خضرراہ – حصہ اول

Khizar-e-Rah – Part 1

 

شاعر
Shayar

 

ساحل دريا پہ ميں اک رات تھا محو نظر
گوشہ دل ميں چھپائے اک جہان اضطراب

Sahil-E-Darya Pe Main Ek Raat Tha Mehv-E-Nazar
Gosha-E-Dil Mein Chupaye Ek Jahan-E-Iztaraab

 

شب سکوت افزا، ہوا آسودہ، دريا نرم سير
تھی نظر حيراں کہ يہ دريا ہے يا تصوير آب

Shab Sakoot Afza, Hawa Asoodah, Darya Naram Sair
Thi Nazar Heeran Ke Ye Darya Hai Ya Tasveer-E-Aab

 

جيسے گہوارے ميں سو جاتا ہے طفل شير خوار
موج مضطر تھی کہيں گہرائيوں ميں مست خواب

Jaise Gehware Mein So Jata Hai Tifle-E-Sheer Khawaar
Mouj-E-Muztar Thi Kahin Gehraiyon Mein Mast-E-Khawab

 

رات کے افسوں سے طائر آشيانوں ميں اسير
انجم کم ضو گرفتار طلسم ماہتاب

Raat Ke Ufsoon Se Tair Ashiyanon Mein Aseer
Anjum-E-Kam Zou Giraftar-E-Tilism-E-Mahtab

 

ديکھتا کيا ہوں کہ وہ پيک جہاں پيما خضر
جس کی پيری ميں ہے مانند سحر رنگ شباب

Dekhta Kya Hun Ke Woh Paik-E-Jahan Peyma Khizar
Jis Ki Peeri Mein Hai Manind-E-Sahar Rang-E-Shabab

 

کہہ رہا ہے مجھ سے، اے جويائے اسرار ازل
چشم دل وا ہو تو ہے تقدير عالم بے حجاب

Keh Raha Mujh Se, Ae Joya’ay Asrar-E-Azal !
Chashm-E-Dil Wa Ho To Hai Taqdeer-E-Alam Behijab

 

دل ميں يہ سن کر بپا ہنگامہ محشر ہوا
ميں شہيد جستجو تھا، يوں سخن گستر ہوا

Dil Mein Ye Sun Kar Bapa Hangama’ay Mehshar Huwa
Main Shaheed-E-Justujoo Tha, Yun Sukhan-E-Gastar Huwa

 

اے تری چشم جہاں بيں پر وہ طوفاں آشکار
جن کے ہنگامے ابھی دريا ميں سوتے ہيں خموش

Ae Teri Chashme-E-Jahan Been Par Woh Toofan Ashkar
Jin Ke Hangame Abhi Darya Mein Sote Hain Khamosh

 

کشتی مسکين، و جان پاک و ديوار يتيم،
علم موسی بھی ہے تيرے سامنے حيرت فروش

Kashti-E-Miskeen’-O-‘Jaan-E-Paak’-O-‘Diwar-E-Yateem’
Ilm-E-Musa (A.S.) Bhi Hai Tere Samne Hairat Farosh

 

چھوڑ کر آبادياں رہتا ہے تو صحرا نورد
زندگی تيری ہے بے روز و شب و فردا دوش

Chorh Kar Abadiyan Rehta Hai Tu Sehra Naward
Zindagi Teri Hai Be Roz-O-Shab-O-Farda-O-Dosh

 

زندگی کا راز کيا ہے، سلطنت کيا چيز ہے
اور يہ سرمايہ و محنت ميں ہے کيسا خروش

Zindagi Ka Raaz Kya Hai, Saltanat Kya Cheez Hai
Aur Ye Sarmaya-O-Mehnat Mein Hai Kaisa Kharosh

 

ہو رہا ہے ايشيا کا خرقہ ديرينہ چاک
نوجواں اقوام نو دولت کے ہيں پيرايہ پوش

Ho Rahah Hai Asia Ka Kharqa-E-Dairina Chaak
Naujawan Aqwam-E-Nau Doulat Ke Hain Peraya Posh

 

گرچہ اسکندر رہا محروم آب زندگی
فطرت اسکندری اب تک ہے گرم نائونوش

Garcha Iskandar Raha Mehroom-E-Aab-E-Zindagi
Fitrat-E-Iskandari Ab Tak Hai Garam-E-Nao’ay Nosh

 

بيچتا ہے ہاشمی ناموس دين مصطفی
خاک و خوں ميں مل رہا ہے ترکمان سخت کوش

Baichta Hai Hashmi Namoos-E-Deen-E-Mustafa (S.A.W.)
Khak-O-Khoon Mein Mil Raha Hai Turkaman-E-Sakht Kosh

 

آگ ہے، اولاد ابراہيم ہے، نمرود ہے
کيا کسی کو پھر کسی کا امتحاں مقصود ہے

Aag Hai, Aulad-E-Ibraheem (A.S.) Hai, Namrood Hai
Kya Kisi Ko Phir Kisi Ka Imtihaan Maqsood Hai 

 

 

 

 

Humayun- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | ہمايوں

Daryooza-e-Khilafat- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | دريوزہ خلافت

Aseeri- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | اسيری

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *