tum apne shikve ki baten na khod khod ke puchho

Tum apne shikve ki baten na khod khod ke puchho – Mirza Ghalib Poetry

Tum apne shikve ki baten na khod khod ke puchho

تم اپنے شکوے کی باتیں نہ کھود کھود کے پوچھو

 

tum apne shikve ki baten na khod khod ke puchho
hazar karo mire dil se ki is meñ aag dabī hai

تم اپنے شکوے کی باتیں نہ کھود کھود کے پوچھو
حذر کرو مرے دل سے کہ اس میں آگ دبی ہے

 

dilā ye dard-o-alam bhī to muġhtanim hai ki āḳhir
na girya-e-saharī hai na āh-e-nīm-shabī hai

دلا یہ درد و الم بھی تو مغتنم ہے کہ آخر
نہ گریۂ سحری ہے نہ آہ نیم شبی ہے

 

nazar ba-naqs-e-gadāyāñ kamāl-e-be-adabī hai
ki ḳhār-e-ḳhushk ko bhī dāvā-e-chaman-nasabī hai

نظر بہ نقص گدایاں کمال بے ادبی ہے
کہ خار خشک کو بھی دعواۓ چمن نسبی ہے

 

huā visāl se shauq-e-dil-e-harīs ziyāda
lab-e-qadah pe kaf-e-bāda josh-e-tishna-labī hai

ہوا وصال سے شوق دل حریص زیادہ
لب قدح پہ کف بادہ جوش تشنہ لبی ہے

 

 

nashsha-ha shadab-e-rang o saz-ha mast-e-tarab – Mirza Ghalib Poetry

ohde se madh-e-naz ke bahar na aa saka – Mirza Ghalib Poetry

4 thoughts on “Tum apne shikve ki baten na khod khod ke puchho – Mirza Ghalib Poetry

  1. Pingback: Highbay

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *