Bilad-e-Islamia- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | بلاد اسلاميہ

Bilad-e-Islamia- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | بلاد اسلاميہ

بلاد اسلاميہ

Bilad-e-Islamia

 


سرزميں دلی کی مسجود دل غم ديدہ ہے

ذرے ذرے ميں لہو اسلاف کا خوابيدہ ہے

Sarzameen Dilli Ki Masjood-E-Dil-E-Gham Didah Hai
Zarre Zarre Mein Lahoo Aslaaf Ka Khawabidah Hai

 

پاک اس اجڑے گلستاں کی نہ ہو کيونکر زميں
خانقاہ عظمت اسلام ہے يہ سرزميں

Paak Iss Ujhre Gulistan Ki Na Ho Kyunkar Zameen
Khanqah-E-Azmat-E-Islam Hai Ye Sarzameen

 

سوتے ہيں اس خاک ميں خير الامم کے تاجدار
نظم عالم کا رہا جن کی حکومت پر مدار

Sote Hain Iss Khaak Mein Khair-Ul-Ummam Ke Tajdar
Nazam-E-Alam Ka Raha Jin Ki Hukumat Par Madar

 

دل کو تڑپاتی ہے اب تک گرمی محفل کی ياد
جل چکا حاصل مگر محفوظ ہے حاصل کی ياد

Dil Ko Tarpati Hai Ab Taak Garmi-E-Mehfil Ki Yaad
Jal Chuka Hasil Magar Mehfooz Hai Hasil Ki Yaad

 

ہے زيارت گاہ مسلم گو جہان آباد بھی
اس کرامت کا مگر حق دار ہے بغداد بھی

Hai Ziaratgah-E-Muslim Go Jahan Abad Bhi
Iss Karamat Ka Magar Haqdar Hai Baghdad Bhi

 

يہ چمن وہ ہے کہ تھا جس کے ليے سامان ناز
لالہ صحرا جسے کہتے ہيں تہذيب حجاز

Ye Chaman Woh Hai Ke Tha Jis Ke Liye Saman-E-Naz
Lala’ay Sehra Jise Kehte Hain Tehzeeb-E-Hijaz

 

خاک اس بستی کی ہو کيونکر نہ ہمدوش ارم
جس نے ديکھے جانشينان پيمبر کے قدم

Khak Iss Basti Ki Ho Kyunkar Na Humdosh-E-Iram
Jis Ne Dekhe Janasheenan-E-Peyambar Ke Qadam

 

جس کے غنچے تھے چمن ساماں ، وہ گلشن ہے يہی
کاپنتا تھا جن سے روما ، ان کا مدفن ہے يہی

Jis Ke Gunche The Chaman Saman, Woh Gulshan Hai Yehi
Kanpta Tha Jin Se Roma, Un Ka Madfan Hai Yehi

 

ہے زمين قرطبہ بھی ديدۂ مسلم کا نور
ظلمت مغرب ميں جو روشن تھی مثل شمع طور

Hai Zameen-E-Qurtuba Bhi Didah-E-Muslim Ka Noor
Zulmat-E-Maghrib Mein Jo Roshan Thi Misl-E-Shama-E-Toor

 

بجھ کے بزم ملت بيضا پريشاں کر گئی
اور ديا تہذيب حاضر کا فروزاں کر گئی

Bujh Ke Bazm-E-Millat-E-Baiza Preshan Kar Gyi
Aur Diya Tehzeeb-E-Hazir Ka Farozaan Kar Gyi

 

قبر اس تہذيب کی يہ سر زمين پاک ہے
جس سے تاک گلشن يورپ کی رگ نم ناک ہے

Qabar Uss Tehzeeb Ki Ye Sarzameen-E-Paak Hai
Jis Se Taak-E-Gulshan-E-Yourap Ki Rag Namnaak Hai

 

خطہ قسطنطنيہ يعنی قيصر کا ديار
مہدی امت کی سطوت کا نشان پائدار

Khitta-E-Qustuntuniya Yani Qaisar Ka Diyar
Mehdi-E-Ummat Ki Satwat Ka Nishan-E-Paidar

 

صورت خاک حرم يہ سر زميں بھی پاک ہے
آستان مسند آرائے شہ لولاک ہے

Soorat-E-Khaak-E-Haram Ye Sarzameen Bhi Paak Hai
Astaan-E-Masnad Araye Shah-E-Loulaak Hai

 

نکہت گل کی طرح پاکيزہ ہے اس کی ہوا
تربت ايوب انصاری سے آتی ہے صدا

Nikhat-E-Gul Ki Tarah Pakeezah Hai Iss Ki Hawa
Turbat-E-Ayub Ansari Se Ati Hai Sada

 

اے مسلماں! ملت اسلام کا دل ہے يہ شہر
سينکڑوں صديوں کی کشت و خوں کا حاصل ہے يہ شہر

Ae Musalman! Millat-E-Islam Ka Dil Hai Ye Shehar
Saikron Sadiyon Ki Kusht-O-Khoon Ka Hasil Hai Ye Shehar

 

وہ زميں ہے تو مگر اے خواب گاہ مصطفی
ديد ہے کعبے کو تيری حج اکبر سے سوا

Woh Zameen Hai Tu Magar Ae Khawab Gah-E-Mustafa 
Deed Hai Kaabe Ko Teri Hajj-E-Akbar Se Sawa

 

خاتم ہستی ميں تو تاباں ہے مانند نگيں
اپنی عظمت کی ولادت گاہ تھی تيری زميں

Khatam-E-Hasti Mein Tu Taban Hai Manind-E-Nageen
Apni Azmat Ki Waladat Gah Thi Teri Zameen

 

تجھ ميں راحت اس شہنشاہ معظم کو ملی
جس کے دامن ميں اماں اقوام عالم کو ملی

Tujh Mein Rahat Uss Shehanshah-E-Moazam Ko Mili
Jis Ke Daman Mein Aman Aqwam-E-Alam Ko Mili

 

نام ليوا جس کے شاہنشاہ عالم کے ہوئے
جانشيں قيصر کے ، وارث مسند جم کے ہوئے

Naam Lewa Jis Ke Shahanshah Alam Ke Huway
Janasheen Qaisar Ke, Waris Masnad-E-Jim Ke Huway

 

ہے اگر قوميت اسلام پابند مقام
ہند ہی بنياد ہے اس کی ، نہ فارس ہے ، نہ شام

Hai Agar Qoumiat-E-Islam Paband-E-Maqam
Hind Hi Bunyaad Hai Iss Ki, Na Faris Hai, Na Shaam

 

آہ يثرب! ديس ہے مسلم کا تو ، ماوا ہے تو
نقطہ جاذب تاثر کی شعاعوں کا ہے تو

Ah Yasrib! Dais Hai Muslim Ka Tu, Mawa Hai Tu
Nukta’ay Jazib Tassar Ki Shuaon Ka Hai Tu

 

جب تلک باقی ہے تو دنيا ميں ، باقی ہم بھی ہيں
صبح ہے تو اس چمن ميں گوہر شبنم بھی ہيں

Ab Talak Baqi Hai Tu Dunya Mein, Baqi Hum Bhi Hain
Subah Hai Tou Iss Chaman Mein Gohar-E-Shabnam Bhi Hain

 

 

Pooch Iss Se K Maqbool Hai Fitrat Ki Gawahi – Allama Iqbal Poetry

Mir-e-Sipah Na Saza, Lashkariyan Shakista Saf – Allama Iqbal

Mir-e-Sipah Na Saza, Lashkariyan Shakista Saf – Allama Iqbal

One thought on “Bilad-e-Islamia- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | بلاد اسلاميہ

  1. Pingback: read more

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *