Gaye Ek Roz Huwi Unth Se Yun Garam-e-Sukhan – Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | گائےاک روز ہوئی اونٹ سے يوں گرم سخن

گائےاک روز ہوئی اونٹ سے يوں گرم سخن

Gaye Ek Roz Huwi Unth Se Yun Garam-e-Sukhan

 

 

گائے اک روز ہوئي اونٹ سے يوں گرم سخن
نہيں اک حال پہ دنيا ميں کسي شے کو قرار

Gaye Ek Roz Huwi Unth Se Yun Garm-e-Sukhan
Nahin Ek Haal Pe Dunya Mein Kisi Shay Ko Qarar

 

ميں تو بد نام ہوئي توڑ کے رسي اپنی
سنتي ہوں آپ نے بھي توڑکے رکھ دی ہے مہار

Main To Badnaam Huwi Tor Ke Rassi Apni
Sunti Hun App Ne Bhi Tor Ke Rakh Di Hai Muhar

 

ہند ميں آپ تو از روئے سياست ہيں اہم
ريل چلنے سے مگر دشت عرب ميں بيکار

Hind Mein App To Azooye Siasat Hain Aham
Rail Chalne Se Magar Dasht-e-Arab Mein Baikar

 

کل تلک آپ کو تھا گائے کي محفل سے حذر
تھي لٹکتے ہوئے ہونٹوں پہ صدائے زنہار

Kal Talak App Ko Tha Gaye Ki Mehfil Se Hazar
Thi Latakte Huwe Honton Pe Sadaye Zanhaar

 

آج يہ کيا ہے کہ ہم پر ہے عنايت اتنی
نہ رہا آئنہء دل ميں وہ ديرينہ غبار

Aaj Ye Kya Hai Ke Hum Par Hai Inayat Itni
Na Taha Aaeena-e-Dil Mein Woh Deerina Ghubaar

 

جب يہ تقرير سني اونٹ نے، شرما کے کہا
ہے ترے چاہنے والوں ميں ہمارا بھي شمار

Jab Ye Taqreer Suni Unth Ne, Sharma Ke Kaha
Hai Tere Chahne Walon Mein Hamara Bhi Shumaar

 

رشک صد غمزئہ اشتر ہے تري ايک کليل
ہم تو ہيں ايسي کليلوں کے پرانے بيمار

Rashak-e-Sad Ghamzada-e-Ushtar Hai Teri Aik Kulail
Hum To Hain Aesi Kulailon Ke Purane Bimaar

 

ترے ہنگاموں کي تاثير يہ پھيلی بن ميں
بے زبانوں ميں بھي پيدا ہے مذاق گفتار

Tere Hangamon Ki Taseer Ye Phaili Ban Mein
Be-Zubanon Mein Bhi Paida Hai Mazaq-e-Guftar

 

ايک ہي بن ميں ہے مدت سے بسيرا اپنا
گرچہ کچھ پاس نہيں، چارا بھی کھاتے ہيں ادھار

Aik Hi Ban Mein Hai Muddat Se Basera Apna
Gharche Kuch Paas Nahin, Chara Bhi Khate Hain Udhar

 

گوسفند و شتر و گاو و پلنگ و خر لنگ
ايک ہي رنگ ميں رنگيں ہوں تو ہے اپنا وقار

Go Safand-o-Shutar-o-Gao-o-Palang-o-Khar-e-Lang
Aik Hi Rang Mein Rangeen Hon To Hai Apna Waqar

 

باغباں ہو سبق آموز جو يکرنگی کا
ہمزباں ہو کے رہيں کيوں نہ طيور گلزار

Baghban Ho Sabaq Amoz Jo Yak Rangi Ka
Hum-Zuban Ho Ke Rahain Kyun Na Tayoor-e-Gulzar

 

دے وہي جام ہميں بھي کہ مناسب ہے يہی
تو بھي سرشار ہو، تيرے رفقا بھٓی سرشار

De Wohi Jam Humain Bhi Ke Manasib Hai Yehi
Tu Bhi Sarshaar Ho, Tere Rufaqa Bhi Sarshaar

 

دلق حافظ بچہ ارزد بہ ميش رنگيں کن
وانگہش مست و خراب از رہ بازار بيار

Dalaq-e-Hafiz Bacha Arzad Ba Maish Rangeen Kun
Wanghash  Mast-o-Kharab Azrah-e-Bazar Byar

 

 

 

 

Dekhiye Chalti Hai Mashriq Ki Tijarat Kab Talak – Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | ديکھیے چلتی ہے مشرق کی تجارت کب تک

Farma Rahe Thay Sheikh Tareek-e-Amal Pe Wa’az – Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | فرما رہے تھے شيخ طريق عمل پہ وعظ

Daleel-e-Meher-o-Wafa Iss Se Barh Ke Kya Ho Gi – Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | دليل مہر و وفا اس سے بڑھ کے کيا ہوگی

One thought on “Gaye Ek Roz Huwi Unth Se Yun Garam-e-Sukhan – Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | گائےاک روز ہوئی اونٹ سے يوں گرم سخن

  1. Pingback: jarisakti

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *