Ghulam Qadir Ruhela- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | غلام قادررہيلہ

غلام قادررہيلہ

Ghulam Qadir Ruhela

 

 

رہيلہ کس قدر ظالم، جفا جو، کينہ پرور تھا
نکاليں شاہ تيموری کی آنکھيں نوک خنجر سے

Ruhela Kis Qadar Zalim, Jafa Joo, Keena Parwar Tha
Nikalain Shah-e-Taimoori Ki Ankhain Nauk-e-Khanjar Se

 

ديا اہل حرم کو رقص کا فرماں ستم گر نے
يہ انداز ستم کچھ کم نہ تھا آثار محشر سے

Diya Ahl-e-Haram Ko Raqs Ka Farman Sitamgar Ne
Ye Andaz-e-Sitam Kuch Kam Na Tha Asaar-e-Mehshar Se

 

بھلا تعميل اس فرمان غيرت کش کی ممکن تھی
شہنشاہی حرم کی نازنينان سمن بر سے

Bhala Tameel Iss Farman-e-Ghairat Kush Ki Mumkin Thi!
Shahenshahi Haram Ki Nainaan-e-Saman Bar Se

 

بنايا آہ! سامان طرب بيدرد نے ان کو
نہاں تھا حسن جن کا چشم مہر و ماہ و اختر سے

Banaya Ah! Saman-e-Tarab Bedard Ne Un Ko
Nihan Tha Husn Jin Ka Chasm-e-Mehr-o-Mah-o-Akhtar Se

 

لرزتے تھے دل نازک، قدم مجبور جنبش تھے
رواں دريائے خوں ، شہزاديوں کے ديدۂ تر سے

Larazte The Dil-e-Nazuk, Qadam Majboor-e-Junbish The
Rawan Darya-e-Khoon, Shehzadiyon Ke Dida-e-Tar Se

 

يونہی کچھ دير تک محو نظر آنکھيں رہيں اس کی
کيا گھبرا کے پھر آزاد سر کو بار مغفر سے

Yunhi Kuch Dair Tak Mehw-e-Nazar Ankhain Raheen Uss Ki
Kiya Ghabra Ke Phir Azad Sar Ko Baar-e-Mighfar Se

 

کمر سے ، اٹھ کے تيغ جاں ستاں ، آتش فشاں کھولی
سبق آموز تابانی ہوں انجم جس کے جوہر سے

Qamar Se, Uth Ke Taigh-e-Jaan Satan, Aatish Fashan Kholi
Sabaq Aamoz-e-Tabani Hun Anjum Jis Ke Jouhar Se

 

رکھا خنجر کو آگے اور پھر کچھ سوچ کر ليٹا
تقاضا کر رہی تھی نيند گويا چشم احمر سے

Rakha Khanjar Ko Agay Aur Phir Kuch Soch Kar Leta
Taqaza Kar Rahi Thi Neend Goya Chasm-e-Ahmar Se

 

بجھائے خواب کے پانی نے اخگر اس کی آنکھوں کے
نظر شرما گئی ظالم کی درد انگيز منظر سے

Bujhaye Khawab Ke Pani Ne Akhgar Uss Ki Ankhon Ke
Nazar Sharma Gi Zalim Ki Dard-Angaiz Manzar Se

 

پھر اٹھا اور تيموری حرم سے يوں لگا کہنے
شکايت چاہيے تم کو نہ کچھ اپنے مقدر سے

Phir Utha Aur Taimoori Haram Se Yun Laga Kehne
Shikayat Chahye Tum Ko Na Kuch Apne Muqaddar Se

 

مرا مسند پہ سو جانا بناوٹ تھی، تکلف تھا
کہ غفلت دور سے شان صف آرايان لشکر سے

Mera Masnad Pe Sou Jana Banawat Thi, Takaluf Tha
Ke Ghaflat Door Hai Shaan-e-Saf Aryaan-e-Lashkar Se

 

يہ مقصد تھا مرا اس سے ، کوئی تيمور کی بيٹی
مجھے غافل سمجھ کر مار ڈالے ميرے خنجر سے

Ye Maqsad Tha Mera Iss Se, Koi Taimoor Ki Beti
Mujhe Ghafil Samajh Kar Maar Dale Mere Khanjar Se

 

مگر يہ راز آخر کھل گيا سارے زمانے پر
حميت نام ہے جس کا، گئی تيمور کے گھر سے

Magar Ye Raaz Akhir Khul Gya Sare Zamane Par
Hamiyyat Naam Ha Jis Ka, Gyi Taimoor Ke Ghar Se

 

 

 

Mahasra-e-Adarna- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | محاصرۂ ادرنہ

Shabnam Aur Sitare- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | شبنم اورستارے

Fatima Bint Abdullah- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | فاطمہ بنت عبداللہ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *