Ishq Aur Mout- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | عشق اور موت

Ishq Aur Mout- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | عشق اور موت

عشق اور موت

Ishq Aur Mout

سہانی نمود جہاں کی گھڑی تھی
تبسم فشاں زندگی کی کلی تھی

Suhani Namood-e-Jahan Ki Ghari Thi
Tabassum Fishan Zindagi Ki Kali Thi

 

کہيں مہر کو تاج زر مل رہا تھا
عطا چاند کو چاندنی ہو رہی تھی

Kahin Mehr Ko Taj-e-Zar Mil Raha Tha
Atta Chand Ko Chandani Ho Rahi Thi

 

سيہ پيرہن شام کو دے رہے تھے
ستاروں کو تعليم تابندگی تھی

Siyah-e-Pairhan Sham Ko De Rahe The
Sitaron Ko Taleem-e-Tabindagi Thi

 

کہيں شاخ ہستی کو لگتے تھے پتے
کہيں زندگی کی کلی پھوٹتی تھی

Kahin Shakh-e-Hasti Ko Lagte The Patte
Kahin Zindagi Ki Kali Phootti Thi

 

فرشتے سکھاتے تھے شبنم کو رونا
ہنسی گل کو پہلے پہل آ رہی تھی

Farishte Sikhate The Shabnam Ko Rona
Hansi Gul Ko Pehle Pehal Aa Rahi Thi

 

عطا درد ہوتا تھا شاعر کے دل کو
خودی تشنہ کام مے بے خودی تھی

Atta Dard Hota Tha Shayar Ke Dil Ko
Khudi Tashna Kaam-e-Mai-e-Bekhudi Thi

 

اٹھی اول اول گھٹا کالی کالی
کوئی حور چوٹی کو کھولے کھڑی تھی
Uthi Awwal Awwal Ghata Kali Kali
Koi Hoor Choti Ko Khole Khari Thi

 

زميں کو تھا دعوی کہ ميں آسماں ہوں
مکاں کہہ رہا تھا کہ ميں لا مکاں ہوں
Zameen Ko Tha Dawa Ke Main Asman Hun 
Makan Keh Raha Tha Ke Main La-Makan Hun

 

غرض اس قدر يہ نظارہ تھا پيارا
کہ نظارگی ہو سراپا نظارا

Gharz Iss Qadar Ye Nazara Tha Pyara
Ke Nazaragi Ho Sarapa Nazara

 

ملک آزماتے تھے پرواز اپنی
جبينوں سے نور ازل آشکارا

Malak Azmate The Parwaz Apni
Jabeenon Se Noor-e-Azal Ashakara

 

فرشتہ تھا اک ، عشق تھا نام جس کا
کہ تھي رہبری اس کي سب کا سہارا

Farishta Tha Ek, Ishq Tha Naam Jis Ka
Ke Thi Rahbari Uss Ki Sub Ka Sahara

 

فرشتہ کہ پتلا تھا بے تابيوں کا
ملک کا ملک اور پارے کا پارا

Farishta Ke Putla Tha Be Tabiyon Ka
Malak Ka Malak Aur Pare Ka Para

 

پے سير فردوس کو جا رہا تھا
قضا سے ملا راہ ميں وہ قضا را

Pay-e-Sair Fardous Ko Ja Raha Tha
Qaza Se Mila Rah Mein Woh Qaza Ra

 

يہ پوچھا ترا نام کيا ، کام کيا ہے
نہيں آنکھ کو ديد تيری گوارا

Ye Pucha Tera Naam Kya, Kaam Kya Hai
Nahin Ankh Ko Deed Teri Gawara

 

ہوا سن کے گويا قضا کا فرشتہ
اجل ہوں ، مرا کام ہے آشکارا

Huwa Sun Ke Goya Qaza Ka Farishta
Ajal Hun, Mera Kaam Hai Ashkara

 

اڑاتی ہوں ميں رخت ہستی کے پرزے
بجھاتی ہوں ميں زندگی کا شرارا

Urati Hun, Main Rakht-e-Hasti Ke Purze
Bujhati Hun Main Zindagi Ka Shararr

 

مری آنکھ ميں جادوئے نيستی ہے
پيام فنا ہے اسی کا اشارا

Meri Ankh Mein Jadoo-e-Neesti Hai
Paya-e-Fana Hai Issi Ka Ishara

 

مگر ايک ہستی ہے دنيا ميں ايسی
وہ آتش ہے ميں سامنے اس کے پارا

Magar Aik Hasti Hai Dunya Mein Aesi
Woh Atish Hai Main Samne Uss Ke Para

 

شرر بن کے رہتی ہے انساں کے دل ميں
وہ ہے نور مطلق کی آنکھوں کا تارا

Sharar Ban Ke Rehti Hai Insan Ke Dil Mein
Woh Hai Noor-e-Mutliq Ki Ankhon Ka Tara

 

ٹپکتی ہے آنکھوں سے بن بن کے آنسو
وہ آنسو کہ ہو جن کی تلخی گوارا

Tapakti Hai Ankhon Se Ban Ban Ke Ansu
Woh Ansu Ke  Ho Jin Ki Talkhi Gawara

 

سنی عشق نے گفتگو جب قضا کی
ہنسی اس کے لب پر ہوئی آشکارا

Suni Ishq Ne Guftugoo Jab Qaza Ki
Hansi Uss Ke Lab Par Huwi Ashkara

 

گری اس تبسم کی بجلی اجل پر
اندھيرے کا ہو نور ميں کيا گزارا
Giri Uss Tabassum Ki Bijli Ajal Par
Andhere Ka Ho Noor Mein Kya Guzara

 

بقا کو جو ديکھا فنا ہو گئی وہ
قضا تھی شکار قضا ہو گئی وہ

Baqa Ko Jo Dekha Fana Ho Gyi Woh
Qaza Thi, Shakar-e-Qaza Ho Gyi Woh

 

Payam-e-Subah- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | پيام صبح

Insan Aur Bazm-e-Qudrat- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | انسان اور بزم قدرت

Mah-e-Nau- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | ماہ نو

22 thoughts on “Ishq Aur Mout- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | عشق اور موت

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *