Khatab Ba Jawanan-e-Islam- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | خطاب بہ جوانان اسلام

Khatab Ba Jawanan-e-Islam- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | خطاب بہ جوانان اسلام

خطاب بہ جوانان اسلام

Khatab Ba Jawanan-e-Islam

 

 

کبھی اے نوجواں مسلم! تدبر بھی کيا تو نے
وہ کيا گردوں تھا تو جس کا ہے اک ٹوٹا ہوا تارا

Kabhi Ae Naujawan Muslim, Tadabbur  Bhi Kiya Tu Ne
Woh Kya Gardoon Tha Tu Jis Ka Hai Ek Toota Huwa Tara

 

تجھے اس قوم نے پالا ہے آغوش محبت ميں
کچل ڈالا تھا جس نے پائوں ميں تاج سر دارا

Tujhe Iss Qoum Ne Pala Hai Aghosh-e-Muhabbat Mein
Kuchal Dala Tha Jis Ne Paon Mein Taj-e-Sar-e-Dara

 

تمدن آفريں خلاق آئين جہاں داری
وہ صحرائے عرب يعنی شتربانوں کا گہوارا

Tamaddun Afreen, Khallaq-e-Aaeen-e-Jahandari
Woh Sehra-e-Arab Yani Shutar-Banon Ka Gehwara

 

سماں الفقر فخری کا رہا شان امارت ميں
بآب و رنگ و خال و خط چہ حاجت روے زيبا را

Sama Al-Faqru Fakhri’ Ka Raha Shan-e-Amarat Mein
Baab-o-Rang-o-Khal-o-Khat Che Hajat Rooye Zaibara

 

گدائی ميں بھی وہ اللہ والے تھے غيور اتنے
کہ مُنعم کو گدا کے ڈر سے بخشش کا نہ تھا يارا

Gadai Mein Bhi Woh Allah Wale The Ghayoor Itne
Ke Mun’em Ko Gada Ke Dar Se Bakhshish Ka Na Tha Yara

 

غرض ميں کيا کہوں تجھ سے کہ وہ صحرا نشيں کيا تھے
جہاں گير و جہاں دار و جہاں بان و جہاں آرا

Gharz Main Kya Kahun Tujh Se Ke Woh Sehra Nasheen Kya The
Jahangeer-o-Jahan Dar-o-Jahan Baan-o-Jahan Aara

 

اگر چاہوں تو نقشہ کھينچ کر الفاظ ميں رکھ دوں
مگر تيرے تخيل سے فزوں تر ہے وہ نظارا

Agar Chahon To Naqsha Khainch Kar Alfaz Mein Rakh Dun
Magar Tere Takhiyyul Se Se Fazoon Tar Hai Woh Nazara

 

تجھے آبا سے اپنے کوئی نسبت ہو نہيں سکتی
کہ تو گفتار وہ کردار ، تو ثابت وہ سےارا

Tujhe Aaba Se Apne Koi Nisbat Ho Nahin Sakti
Ke Tu Guftar Woh Kirdar, Tu Sabit Woh Sayyara

 

گنوا دی ہم نے جو اسلاف سے ميراث پائی تھی
ثريا سے زميں پر آسماں نے ہم کو دے مارا

Ganwa Di Hum Ne Jo Aslaf Se Meeras Payi Thi
Surreya Se Zameen Par Asman Ne Hum Ko De Mara

 

حکومت کا تو کيا رونا کہ وہ اک عارضی شے تھی
نہيں دنيا کے آئين مسلم سے کوئی چارا

Hukumat Ka To Kya Rona Ke Woh Ek Aarzi Shay Thi
Nahin Dunya Ke Aaeen-e-Musallam Se Koi Chara

 

مگر وہ علم کے موتی ، کتابيں اپنے آبا کی
جو ديکھيں ان کو يورپ ميں تو دل ہوتا ہے سيپارا

Magar Woh Ilm Ke Moti, Kitabain Apne Aaba Ki
Jo Dekhain In Ko Yourap Mein Tou Dil Hota Hai Seepara

 

غنی! روز سياہ پير کنعاں را تماشا کن
کہ نور ديدہ اش روشن کند چشم زليخا را

Ghani Rouz-e-Siyah-e-Peer-e-Kanaan Ra Tamasha Kun
Ke Noor-e-Didah Ash Roshan Kunan Chashm-e-Zulekhara

 

 

 

Insan- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | انسان

Motor- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | موٹر

Raam- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | رام

One thought on “Khatab Ba Jawanan-e-Islam- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | خطاب بہ جوانان اسلام

  1. Pingback: mancave

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *