Khudi Ho Ilm Se Mohkam To Ghairat-e-Jibreel - Allama Iqbal

Khudi Ho Ilm Se Mohkam To Ghairat-e-Jibreel – Allama Iqbal

Khudi Ho Ilm Se Mohkam To Ghairat-e-Jibreel

Allama Iqbal Poetry


خودی ہو علم سے محکم تو غيرت جبريل

اگر ہو عشق سے محکم تو صور اسرافيل

Khudi Ho Ilm Se Muhkam To Ghairat-e-Jibreel
Agar Ho Ishq Se Muhkam To Soor-e-Israfeel

عذاب دانش حاضر سے باخبر ہوں ميں
کہ ميں اس آگ ميں ڈالا گيا ہوں مثل خليل

Azab-e-Danish-e-Hazir Se Ba-Khabar Hun Mein
Ke Main Iss Aag Mein Dala Gya Hun Misl-e-Khalil (A.S.)

فريب خوردہ منزل ہے کارواں ورنہ
زيادہ راحت منزل سے ہے نشاط رحيل

Faraib Khurdah-e-Manzil Hai Karwan Warna
Zaida Rahat-e-Manzil  Se Hai Nishat-e-Raheel

نظر نہيں تو مرے حلقہ سخن ميں نہ بيٹھ
کہ نکتہ ہائے خودی ہيں مثال تيغ اصيل

Nazar Nahin To Mere Halqa-e-Sukhan Mein Na Baith
Ke Nukta Haye Khudi Hain Misaal-e-Taeg-e-Aseel

مجھے وہ درس فرنگ آج ياد آتے ہيں
!کہاں حضور کی لذت ، کہاں حجاب دليل

Mujhe Woh Dars-e-Farang Aaj Yad Ate Hain
Kahan Huzoor Ki Lazzat, Kahan Hijab-e-Daleel !

اندھيری شب ہے ، جدا اپنے قافلے سے ہے تو
ترے ليے ہے مرا شعلہ نوا ، قندي

Andheri Shab Hai, Juda Apne Qafle Se Hai Tu
Tere Liye Hai Mera Shaola-e-Nawa, Qandeel

غريب و سادہ و رنگيں ہے داستان حرم
نہايت اس کی حسين ، ابتدا ہے اسمعيل

Ghareeb-o-Sada-o-Rangeen Hai Dastan-e-Haram
Nahayat Iss Ki Hussain (R.A.), Ibtada Hai Ismaeel (A.S.)

 

Dhoond Raha Hai Farang Aysh-e-Jahan Ka Dawam – Iqbal Poetry

Sitaron Se Agay Jahan Aur Bhi Hain – Allama Iqbal Poetry

Jab Ishq Sikhata Hai Adab-e-Khud Agahi – Allama Iqbal Poetry

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *