Pewasta Re Shajar Se, Umeed-e-Bahar Rakh- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | پيوستہ رہ شجر سے ، اميد بہار رکھ

پيوستہ رہ شجر سے ، اميد بہار رکھ

Pewasta Re Shajar Se, Umeed-e-Bahar Rakh

 

 

ڈالی،   گئی جو فصلِ خَزاں ميں شجر سے ٹوٹ
مُمکن نہيں ہری ہو سَحابِ بہار سے

Dali Gyi Jo Fasal-e-Khazan Mein Shajar Se Toot
Mumkin Nahin Hari Ho Sahab-e-Bahar Se

 

ہے لازوال عہدِ خَزاں اس کے واسطے
کچھ واسطہ نہيں ہے اسے برگ و بار سے

Hai La-Zawal Ehd-e-Khazan Uss Ke Waste
Kuch Wasta Naahin Hai Usse Barg-o-Baar Se

 

ہے تيرے گلستاں ميں بھی فصلِ خَزاں کا دور
خالی  ہے  جيبِ گُل  زرِ  کامل  عيار  سے

Hai Tere Gulistan Mein Bhi Fasal-e-Khazan Ka Dour
Khali Hai Jaib-e-Gul Zr-e-Kamil Ayaar Se

 

جو نغمہ زن تھے خَلوَتِ  اوراق  ميں  طيور
رُخصت ہوئے ترے شجرِ  سايہ دار سے

Jo Naghma Zan Thay Khalwat-e-Auraq Mein Tayoor
Rukhsat Huway Tere Shajar-e-Sayadar Se

 

شاخ  بُريدہ  سے سبق  اندوز  ہو  کہ  تو
نا آشنا  ہے  قاعدئہ  روزگار  سے

Shakh-e-Bureeda Se Sabaq Andoz Ho Ke Tu
Na Ashna Hai Qaida’ay Rozgar Se

 

مِلّت  کے  ساتھ  رابطۂ  ا ُستوار  رکھ
!پيوستہ  رہ  شجر  سے ،  اُميدِ  بہار  رکھ

Millat Ke Sath Rabta Ustawar Rakh
Pewasta Reh Shajar Se, Umeed-e-Bahar Rakh!

 

 

 

 

Mazhab- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | مذہب

Jang-e-Yarmook Ka Aik Waqia- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | جنگ يرموک کاايک واقعہ

Mazhab- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | مذہب

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *