Sakhtiyan Karta Hun Dil Par, Ghair Se Ghafil Hun Main- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | سختياں کرتا ہوں دل پر ، غير سے غافل ہوں ميں

Sakhtiyan Karta Hun Dil Par, Ghair Se Ghafil Hun Main- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | سختياں کرتا ہوں دل پر ، غير سے غافل ہوں ميں

سختياں کرتا ہوں دل پر ، غير سے غافل ہوں ميں

Sakhtiyan Karta Hun Dil Par, Ghair Se Ghafil Hun Main

 

سختياں کرتا ہوں دل پر ، غير سے غافل ہوں ميں
ہائے کيا اچھی کہی ظالم ہوں ميں ، جاہل ہوں ميں
Sakhtiyan Karta Hun Dil Par, Ghair Se Ghafil Hun Main
Haye Kya Achi Kehi Zalim Hun Main, Jahil Hun Main
ميں جبھی تک تھا کہ تيری جلوہ پيرائی نہ تھی
جو نمود حق سے مٹ جاتا ہے وہ باطل ہوں ميں
Main Jabhi Tak Tha Ke Teri Jalwa Pairayi Na Thi
Jo Namood-e-Haq Se Mit Jata Hai Woh Batil Hun Main
علم کے دريا سے نکلے غوطہ زن گوہر بدست
وائے محرومی! خزف چين لب ساحل ہوں ميں
Ilm Ke Darya Se Nikle Ghota Zan Gohar Badast
Waye Mehroomi! Khazaf Chain-e-Lab Sahil Hun Main
ہے مری ذلت ہی کچھ ميری شرافت کی دليل
جس کی غفلت کو ملک روتے ہيں وہ غافل ہوں ميں
Hai Meri Dillat Hi Kuch Meri Sharafat Ki Daleel
Jis Ki Ghaflat Ko Malak Rote Hain Woh Ghafil Hun Mein
بزم ہستی! اپنی آرائش پہ تو نازاں نہ ہو
تو تو اک تصوير ہے محفل کی اور محفل ہوں ميں
Bazm-e-Hasti ! Apni Araaish Pe Tu Nazaan Na Ho
Tu To Ek Tasveer Hai Mehfil Ki Aur Mehfil Hun Main
ڈھونڈتا پھرتا ہوں اے اقبال اپنے آپ کو
آپ ہی گويا مسافر ، آپ ہی منزل ہوں ميں
Dhoonta Phirta Hun Ae Iqbal Apne App Ko
App Hi Goya Musafir, App Hi Manzil Hun Mein

26 thoughts on “Sakhtiyan Karta Hun Dil Par, Ghair Se Ghafil Hun Main- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | سختياں کرتا ہوں دل پر ، غير سے غافل ہوں ميں

  1. Pingback: Bilad Alrafidain

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *