Tehzeeb Ke Mareez Ko Goli Se Faida- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | تہذيب کے مريض کو گولی سے فائدہ

تہذيب کے مريض کو گولی سے فائدہ

Tehzeeb Ke Mareez Ko Goli Se Faida

 

 

تہذيب کے مريض کو گولي سے فائدہ
دفع مرض کے واسطے پل پيش کيجيے

Tehzeeb Ke Mareez Ko Goli Se Faida!
Dafa-e-Marz Ke Waaste Pill Paish Kijiye

 

تھے وہ بھي دن کہ خدمت استاد کے عوض
دل چاہتا تھا ہديہء دل پيش کيجيے

The Woh Bhi Din Ke Khidmat-e-Ustad Ke Ewz
Dil Chahta Tha Hadiya-e-Dil Paish Kijiye

 

بدلا زمانہ ايسا کہ لڑکا پس از سبق
کہتا ہے ماسٹر سے کہ بل پيش کيجيے

Badla Zamana Aesa Ke Larka Pas Az Sabaq
Kehta Hai Master Se Ke Bill Paish Kijiye

 

 

 

 

Kuch Gham Nahi Jo Hazrat-e-Waaiz Hain Tang Dast- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | کچھ غم نہيں جو حضرت واعظ ہيں تنگدست

5 thoughts on “Tehzeeb Ke Mareez Ko Goli Se Faida- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | تہذيب کے مريض کو گولی سے فائدہ

  1. Pingback: barber prahran
  2. Pingback: more
  3. Pingback: fortnite hacks

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *