Ye Na Thi Hamari Qismat Ke Visaal-E-Yaar Hota - Mirza Ghalib Poetry

Ye Na Thi Hamari Qismat Ke Visaal-E-Yaar Hota – Mirza Ghalib Poetry

Ye Na Thi Hamari Qismat Ke Visaal-E-Yaar Hota

یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصالِ یار ہوتا ​

 

Ye Na Thi Hamari Qismat Ke Visaal-E-Yaar Hota
Agar Aur Jete Rehte Yehi Intezaar Hota

یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصالِ یار ہوتا ​
اگر اور جیتے رہتے، یہی انتظار ہوتا

Tere Waade Per Jiye Ham Tu Jaan Jhot Jana
Keh Khushi Se Mar Na Jate Agar Aitbar Hota

تِرے وعدے پر جِئے ہم، تو یہ جان، جُھوٹ جانا​
کہ خوشی سے مرنہ جاتے، اگراعتبار ہوتا

Teri Nazuki Se Jana Ke Bandha Tha Ehad Boda
Kabhi Tu Na Tor Sakta Agar Ustwar Hota

تِری نازُکی سے جانا کہ بندھا تھا عہدِ بُودا​
کبھی تو نہ توڑ سکتا، اگراستوار ہوتا

Koi Mere Dil Se Poche Tere Teer Neem Kash Ko
Ye Khalash Kahan Se Hoti Jo Jigar Ke Paar Hota

کوئی میرے دل سے پوچھے ترے تیرِ نِیمکش کو​
یہ خلِش کہاں سے ہوتی، جو جگر کے پار ہوتا

Ye Kahan Ki Dosti Hai Ke Banay Hai Dost Naseh
Koi Chara Saaz Hota Koi Gham Gusar Hota

یہ کہاں کی دوستی ہےکہ، بنے ہیں دوست ناصح​
کوئی چارہ ساز ہوتا، کوئی غم گسار ہوتا

Rag Sang Se Tapakta Wo Lahu Ke Phir Na Thamta
Jisay Gham Samajh Rahy Ho Ye Agar Sharar Hota

رگِ سنگ سے ٹپکتا وہ لہوکہ، پھر نہ تھمتا​
جسے غم سمجھ رہے ہو، یہ اگر شرار ہوتا

Gham Agarche Jaan Gusal Hai, Pah Kahan Bachin Ka Dil Hai
Gham E Ishq Gar Na Hota, Game Rozgar Hota,

غم اگرچہ جاں گُسل ہے، پہ کہاں بچیں کہ دل ہے​
غمِ عشق گر نہ ہوتا، غمِ روزگار ہوتا

Kahon Kis Se Mein Keh Kia Hai Shab Gham Buri Bala Hai
Mujhe Kya Bura Tha Marna Agar Aik Bar Hota

کہوں کس سے میں کہ کیا ہے، شبِ غم بُری بلا ہے​
مجھے کیا بُرا تھا مرنا، اگر ایک بار ہوتا

Hoye Mar Ke Ham Jo Ruswa Hoye Kun Na Gharaq Darya
Na Kabhi Janaza Uthta Na Kahin Mazaar Hota

ہوئے مرکے ہم جو رُسوا، ہوئے کیوں نہ غرق دریا ​
نہ کبھی جنازہ اٹھتا، نہ کہیں مزار ہوتا

Usay Kon Dekh Sakta Ke Yagana Hai Wo Yakta
Jo Doi Ko Boo Bhi Hoti Tu Kahin Do Chaar Hota

اسے کون دیکھ سکتا کہ یگانہ ہے وہ یکتا​
جو دوئی کی بُو بھی ہوتی توکہیں دوچار ہوتا

Ye Masael Taswuf Ye Tera Biyan Ghalib
Tujhe Ham Wali Samjhte Jo Na Bada Khwar Hota

یہ مسائلِ تصّوف، یہ ترا بیان، غالبؔ​
تجھے ہم ولی سمجھتے، جو نہ بادہ خوار ہوتا

 

 

Har Ek Baat Pe Kehte Ho Tum Keh Tu Kya Hai – Mirza Ghalib Poetry

Dil Hi To Hai Na Sang-O-Khist Dard Se Bhar Na Aaye Kyun – Mirza Ghalib Poetry

4 thoughts on “Ye Na Thi Hamari Qismat Ke Visaal-E-Yaar Hota – Mirza Ghalib Poetry

  1. Pingback: evaporator
  2. Pingback: b52 club

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *