Aflak Se Ata Hai Nalon Ka Jawab Akhir

Aflak Se Ata Hai Nalon Ka Jawab Akhir – Allama Iqbal Poetry

Aflak Se Ata Hai Nalon Ka Jawab Akhir

Allama Iqbal Poetry (Bal-E-Jibril)

Aflak Se Ata Hai Nalon Ka Jawab Akhir
Karte Hain Khitab Akhir, Uthte Hain Hijab Akhir

افلاک سے آتا ہے نالوں کا جواب آخر
کرتے ہيں خطاب آخر ، اٹھتے ہيں حجاب آخر

Ahwal-E-Mohabbat Mein Kuch Farq Nahin Aesa
Souz-O-Tab-O-Taab Awwal, Souz-O-Tab-O-Taab Akhi

احوال محبت ميں کچھ فرق نہيں ايسا
سوز و تب و تاب اول ، سوزو تب و تاب آخر

Main Tujh Ko Batata Hun, Taqdeer-E-Umam Kya Hai
Shamsheer-O-Sanaa Awwal, Taoos-O-Rabab Akhir

ميں تجھ کو بتاتا ہوں ، تقدير امم کيا ہے
شمشير و سناں اول ، طاؤس و رباب آخر

Maikhane-E-Yourap Ke Dastoor Nirale Hain
Late Hain Suroor Awwal, Dete Hain Sharab Akhir

ميخانہ يورپ کے دستور نرالے ہيں
لاتے ہيں سرور اول ، ديتے ہيں شراب آخر

Kya Dabdaba-E-Nadir, Kya Shaukat-E-Taimoori
Hi Jate Hain Sub Daftar Gharq Mai-E-Naab Akhir

کيا دبدبہ نادر ، کيا شوکت تيموری
ہو جاتے ہيں سب دفتر غرق مئے ناب آخر

Khalwat Ki Ghari Guzri, Jalwat Ki Ghari Ayi
Chutne Ko Hai Bijle Se Agosh-E-Sahaab Akhir

خلوت کی گھڑی گزری ، جلوت کی گھڑی آئی
چھٹنے کو ہے بجلی سے آغوش سحاب آخر

Tha Zabt Bohat Mushkil Iss Seel-E-Maani Ka
Keh Dale Qalandar Ne Asrar-E-Kitab Akhir

تھا ضبط بہت مشکل اس سيل معانی کا
کہہ ڈالے قلندر نے اسرار کتاب آخر

 

One thought on “Aflak Se Ata Hai Nalon Ka Jawab Akhir – Allama Iqbal Poetry

  1. Pingback: dee88

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *