Aik Haji Madine Ke Raste Mein- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | ايک حاجی مدينے کے راستے ميں

Aik Haji Madine Ke Raste Mein- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | ايک حاجی مدينے کے راستے ميں

ايک حاجی مدينے کے راستے ميں

Aik Haji Madine Ke Raste Mein

 

قافلہ لوٹا گيا صحرا ميں اور منزل ہے دور
اس بياباں يعنی بحر خشک کا ساحل ہے دور

Qafla Loota Gya Sehra Mein Aur Manzil Hai Door
Iss Byaban Yani Behr-e-Khushk Ka Sahil Hai Door

 

ہم سفر ميرے شکار دشنۂ رہزن ہوئے
بچ گئے جو ، ہو کے بے دل سوئے بيت اللہ پھرے

Hum Safar Mere Shikar-e-Dashna-e-Rehzan Huwe
Bach Gye Jo, Ho Ke Be-Dil Sooye Bait Ullah Phire

 

اس بخاری نوجواں نے کس خوشی سے جان دی
موت کے زہراب ميں پائی ہے اس نے زندگی

Uss Bukhari Naujawan Ne Kis Khushi Se Jaan Di!
Mout Ke Zehr Ab Mein Payi Hai Uss Ne Zindagi

 

خنجر رہزن اسے گويا ہلال عيد تھا
ہائے يثرب دل ميں ، لب پر نعرہ توحيد تھا

Khanjar-e-Rahzan Usse Goya Hilal-e-Eid Tha
Haye Yasrab Dil Mein Lab Par Naara-e-Touheed Tha

 

خوف کہتا ہے کہ يثرب کی طرف تنہا نہ چل
شوق کہتا ہے کہ تو مسلم ہے ، بے باکانہ چل

Khauf Kehta Hai Ke Yasrab Ki Taraf Tanha Na Chal
Shauq Kehta Hai Tu Muslim Hai, Bebakana Chal

 

بے زيارت سوئے بيت اللہ پھر جاؤں گا کيا
عاشقوں کو روز محشر منہ نہ دکھلاؤں گا کيا

Be-Ziarat Sooye Bait Ullah Phir Jaun Ga Kya
Ashiqon Ko Rouz-e-Mehshar Munh Na Dikhlaun Ga Kya

 

خوف جاں رکھتا نہيں کچھ دشت پيمائے حجاز
ہجرت مدفون يثرب ميں يہی مخفی ہے راز

Khauf-e-Jaan Rakhta Nahin Kuch Dast Pemaye Hijaz
Hijrat-e-Madfoon-e-Yasrab Mein Yehi Makhfi Hai Raaz

 

گو سلامت محمل شامی کی ہمراہی ميں ہے
عشق کی لذت مگر خطروں کے جاں کاہی ميں ہے

Go Salamat Mehmil-e-Shami Ki Humrahi Mein Hai
Ishq Ki Lazzat Magar Khatron Ki Jaankahi Mein Hai

 

آہ! يہ عقل زياں انديش کيا چالاک ہے
اور تاثر آدمی کا کس قدر بے باک ہے

Aah! Ye Aqal-e-Zayan Andaish Kya Chalak Hai
Aur Tassur Admi Ka Kis Qadr Bebaak Hai

 

 

 

Wataniat- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | وطنيت

Tarana-e-Milli- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | ترانۂ ملی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *