Phool Ka Tohfa Atta Hone Par- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | پھول کا تحفہ عطا ہونے پر

Phool Ka Tohfa Atta Hone Par- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | پھول کا تحفہ عطا ہونے پر

پھول کا تحفہ عطا ہونے پر

Phool Ka Tohfa Atta Hone Par

 

 

وہ مست ناز جو گلشن ميں جا نکلتی ہے
کلی کلی کی زباں سے دعا نکلتی ہے

Woh Mast-e-Naaz Jo Gulshan Mein Ja Niklti Hai
Kali Kali Ki Zuban Se Dua Niklti Hai

 

الہی! پھولوں ميں وہ انتخاب مجھ کو کرے
کلی سے رشک گل آفتاب مجھ کو کرے

Elahi! Phoolon Mein Woh Intikhab Mujh Ko Kare
Kali Se Rashak-e-Gul-e-Aftab Mujh Ko Kare

 

تجھے وہ شاخ سے توڑيں! زہے نصيب ترے
تڑپتے رہ گئے گلزار ميں رقيب ترے

Tujhe Woh Shakh Se Torain! Zahe Naseeb Tere
Tarapte Reh Gye Gulzar Mein Raqeeb Tere

 

اٹھا کے صدمہ فرقت وصال تک پہنچا
تری حيات کا جوہر کمال تک پہنچا

Utha Ke Sadma-e-Furqat Wisal Tak Pohncha
Teri Hayat Ka Jouhar Kamal Tak Pohncha

 

مرا کنول کہ تصدق ہيں جس پہ اہل نظر
مرے شباب کے گلشن کو ناز ہے جس پر

Mera Kanwal Le Tasadduq Hain Jis Pe Ahl-e-Nazar
Mere Shabab Ke Gulshan Ko Naaz Hai Jis Par

 

کبھی يہ پھول ہم آغوش مدعا نہ ہوا
کسی کے دامن رنگيں سے آشنا نہ ہوا

Kabhi Ye Phool Hum Aghosh-e-Mudda Na Huwa
Kisi Ke Daman-e-Rageen Se Ashna Na Huwa

 

شگفتہ کر نہ سکے گی کبھی بہار اسے
فسردہ رکھتا ہے گلچيں کا انتظار اسے

Shugufta Kar Na Sake Gi Kabhi Bahar Isse
Fusurda Rakhta Hai Gulcheen Ka Intizar Isse

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *