Namood-e-Subah- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | نمود صبح

Namood-e-Subah- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | نمود صبح

نمود صبح

Namood-e-Subah

 

ہو رہی ہے زير دامان افق سے آشکار
صبح يعنی دختر دوشيزہ ليل و نہار

Ho Rahi Hai Zair-e-Daman-e-Ufaq Se Aashkar
Subah Yani Dukhtar-e-Doshiza-e-Lail-o-Nahar

 

پا چکا فرصت درود فصل انجم سے سپہر
کشت خاور ميں ہوا ہے آفتاب آئينہ کار

Pa Chuka Fursat Durood-e-Fasl-e-Anjum Se Sipihr
Kisht-e-Khawar Mein Huwa Hai Aftab Aaeena Kaar

 

آسماں نے آمد خورشيد کی پا کر خبر
محمل پرواز شب باندھا سر دوش غبار

Aasman Ne Amad-e-Khursheed Ki Pa Kar Khabar
Mehmil-e-Parwaz-e-Shab Bandha Sar-e-Dosh-e-Ghubar

 

شعلۂ خورشيد گويا حاصل اس کھيتی کا ہے
بوئے تھے دہقان گردوں نے جو تاروں کے شرار

Shaola Khursheed Goya Hasil Iss Khaiti Ka Hai
Boye The Dehqan-e-Gardoon Ne Jo Taron Ke Sharaar

 

ہے رواں نجم سحر ، جيسے عبادت خانے سے
سب سے پيچھے جائے کوئی عابد شب زندہ دار

Hai Rawan Najam-e-Sehar, Jaise Ibadat Khane Se
Sub Se Peche Jaye Koi Abid-e-Shab Zinda Dar

 

کيا سماں ہے جس طرح آہستہ آہستہ کوئی
کھينچتا ہو ميان کی ظلمت سے تيغ آب دار

Kya Saman Hai Jis Tarah Ahista Ahista Koi
Khainchta Hi Miyan Ki Zulmat Se Taigh-e-Aabdar

 

مطلع خورشيد ميں مضمر ہے يوں مضمون صبح
جيسے خلوت گاہ مينا ميں شراب خوش گوار

Matla-e-Khursheed Mein Muzmar Hai Yun Mazmoon-e-Subah
Jaise Khalwat-Gah-e-Meena Mein Sharab-e-Khushgawar

 

ہے تہ دامان باد اختلاط انگيز صبح
شورش ناقوس ، آواز اذاں سے ہمکنار

Hai Teh-e-Damaan-e-Baad-e-Ikhtilaat Angaiz-e-Subah
Shaurish-e-Naqoos, Awaz-e-Azan Se Humkinar

 

جاگے کوئل کی اذاں سے طائران نغمہ سنج
ہے ترنم ريز قانون سحر کا تار تار

Jaage Koeel Ki Azan Se Taeeran-e-Naghma Sanj
Hai Tarannum Raiz Qanoon-e-Sehr Ka Taar Taar

 

Goristan-e-Shahi- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | گورستان شاہی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *