Wataniat- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | وطنيت

Wataniat- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | وطنيت

وطنيت

(يعنی وطن بحيثيت ايک سياسی تصور کے)

Wataniat
(Yani Watan Bahesiat Aik Siasi Tasawwur Ke)

 

 

اس دور ميں مے اور ہے ، جام اور ہے جم اور
ساقی نے بنا کی روش لطف و ستم اور

Iss Dour Mein Mai Aur Hai, Jaam Aur Hai Jam Aur
Saqi Ne Bina Ki Rawish-e-Lutf-o-Sitam Aur

 

مسلم نے بھی تعمير کيا اپنا حرم اور
تہذيب کے آزر نے ترشوائے صنم اور

Muslim Ne Bhi Tameer Kiya Apna Haram Aur
Tehzeeb Ke Azar Ne Tarshawaye Sanam Aur

 

ان تازہ خداؤں ميں بڑا سب سے وطن ہے
جو پيرہن اس کا ہے ، وہ مذہب کا کفن ہے

In Taza Khudaon Mein Bara Sub Se Watan Hai
Jo Pairhan Iss Ka Hai, Woh Mazhab Ka Kafan Hai

 

يہ بت کہ تراشيدۂ تہذيب نوی ہے
غارت گر کاشانۂ دين نبوی ہے

Ye But Ke Tarashida-e-Tehzeeb-e-Nawi Hai
Gharatgar-e-Kashana-e-Deen-e-Nabwi Hai

 

بازو ترا توحيد کی قوت سے قوی ہے
اسلام ترا ديس ہے ، تو مصطفوی ہے

Bazu Tera Touheed Ki Quwwat Se Qawi Hai
Islam Tera Dais Hai, Tu Mustafavi Hai

 

نظارہ ديرينہ زمانے کو دکھا دے
اے مصطفوی خاک ميں اس بت کو ملا دے

Nazzara-e-Dairina Zamane Ko Dikha De
Ae Mustafavi Khak Mein Iss Butt Ko Mila De

 

ہو قيد مقامی تو نتيجہ ہے تباہی
رہ بحر ميں آزاد وطن صورت ماہی

Ho Qaid-e-Maqami To Nateeja Hai Tabahi
Reh Behar Mein Azad-e-Watan Soorat-e-Mahi

 

ہے ترک وطن سنت محبوب الہی
دے تو بھی نبوت کی صداقت پہ گواہی

 

Hai Tark-e-Watan Sunnat-e-Mehboob-e-Elahi
De Tu Bhi Nabuwwat Ki Sadaqat Pe Gawahi

 

گفتار سياست ميں وطن اور ہي کچھ ہے
ارشاد نبوت ميں وطن اور ہی کچھ ہے

Guftar-e-Siasat Mein Watan Aur Hi Kuch Hai
Irshad-e-Nabuwwat Mein Watan Aur Hi Kuch Hai

 

اقوام جہاں ميں ہے رقابت تو اسی سے
تسخير ہے مقصود تجارت تو اسی سے

Aqwam-e-Jahan Mein Hai Raqabat To Issi Se
Taskheer Hai Maqsood-e-Tajarat To Issi Se

 

خالی ہے صداقت سے سياست تو اسی سے
کمزور کا گھر ہوتا ہے غارت تو اسی سے

Khali Hai Sadaqat Se Siasat To Issi Se
Kamzor Ka Ghar Hota Hai Gharat To Issi Se

 

اقوام ميں مخلوق خدا بٹتی ہے اس سے
قوميت اسلام کے جڑ کٹتی ہے اس سے

Aqwam Mein Makhlooq-e-Khuda Batti Hai Iss Se
Qoumiat-e-Islam Ki Jar Katti Hai Iss Se

 

 

Tarana-e-Milli- Bang-e-Dara | Allama Iqbal Poetry | ترانۂ ملی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *